Wednesday, 18 December 2013

شیخ سعدی کے تعاقب میں (فرمائشی تحریر)۔

7 آرا
سیر  و سیاحت کا  شوق تو  خیر   تقریباً  ہر  انسان میں پایا  جاتا  ہے ۔ اتنے  انسانوں  میں سے  مشہور سیاح  بھی  بہت گزرے  ہیں۔  کچھ  اٹھے اور زمین ناپ  آئے ، اور پھر  اپنا وقت  آنے  پر مر گئے۔اپنے  پیچھے  سفر  نامے  چھوڑ  گئے ۔   ایک  چاچا  مارکوپولو   تھا ۔  جدید تحقیق  کے  مطابق  اس نے  کبھی وینس  سے قدم باہر  نہ دھرا تھا اور دنیا اس کے  وسط ایشیا  اور چین  کے سفر ناموں  پر  لوٹ پوٹ ہوئی جاتی  ہے ۔ ہر  بات میں  مغرب کی مثالیں دینے والے   ایسےذہنی  یتیموں  کیلئے  ہدایت  کی دعا ہے ۔  ایک شیخ  سعدی ؒ بھی تھے ۔ شیراز  سے  بس اتنا  تعلق  ہے  کہ  اس شہر میں پیدا ہوئے  اور  پھر  عمر  کے  آخری  چند  سال  گزار  کر وہیں دفن ہوئے ۔اس  کا  درمیانی  طویل وقفہ  جو  کہ  کم و بیش  سو  سال پر  مشتمل ہے  سیاحت  اور حصولِ  علم میں گزرا۔ کبھی  سومناتھ  کا   سن کر  طبیعت بے چین ہو گئی تو کبھی دمشق  جاکے دم لیا ۔  کبھی صلیبی جنگوں  میں عیسائیوں کی بیگار بھگتاتے  رہے ،  کبھی سمر قند  و بخارا   کی  سیر  کو نکل گئے ۔ پھر  جو دیکھا  اسے  لکھ ڈالا  اور آج دنیا  کی  32  بڑی  زبانوں  میں دنیا کی ہر  بڑی   یونیورسٹی میں سعدی ؒ پڑھا جا رہا  ہے ۔
عادت سے مجبور  شیخ  صاحب ایک  بار حمام  کی  سیر  کو نکل  گئے ۔  وہاں  خوشبودار  مٹی  سے  ملاقات ہو گئی ۔  حیران ہو کر  مٹی سے  پوچھا:۔اے اپنی  دلآویز  خوشبو سے  مجھے مست  کر دینے  والی  تو  مشک ہے  یا  عبیر ہے ۔۔۔۔؟؟؟آخر  اس خوشبو  کا  راز کیا  ہے ۔۔۔؟؟    جب مٹی  کی ٹال  مٹول  سعدی  کے آگے نہ چلی  تو اس  نے  راز  اگل ہی  دیا ۔  بولی  میں تو  حقیر  سی  خاک  تھی ۔  مگر  مدت  تک پھولوں  کے ساتھ رہی ۔  جمالِ ہمنشیں نے  اثر دکھایا  اور  وہ  خوشبو مجھ میں بھی  رچ  بس گئی ۔  پس یہ  اس صحبت  کا اثر اور پھل  ہے  ورنہ  میں تو  صرف خاک ہوں۔

 ایسے  ہی  کئی  اور سیانوں کا  اتفاق  ہے  کہ    آدمی  اپنے دوستوں  سے   پہچانا  جاتا ہے ۔
کند  ہم  جنس باہم  جنس پرواز ۔۔۔۔ کبوتر  با کبوتر  ، باز  با باز

عنقریب  پیدا  ہونے  والے  نیم فلسفی  جوگی   کا  کہنا  ہے  کہ   دوستی    ایجاد نہیں کی جاتی  بلکہ  دوستی دریافت کی جاتی ہے ۔  جیسے نیوٹن نے کشش ِ ثقل  ایجاد نہیں  کی تھی  ۔ صرف دریافت کی تھی ۔ آواز کو دور دور تک  بغیر  کسی  تار  کے پہنچا دینا  مارکونی سے پہلے  بھی  ممکن  تھا ۔  مگر  یہ طریقہ  ڈھونڈنے  میں سب سے پہلے مارکونی کا میاب ہوا۔قدرت انسان  کے ساتھ  ٹریژر  ہنٹ والا کھیل  کھیل  رہی  ہے ۔ خزانے  چھپا  کے رکھ دئیے  اور انسان  کو ایک معین وقت دے دیا  کہ چل بھئی کاکا  اس معینہ وقت میں  جتنے خزانے ڈھونڈ سکتے ہو  ڈھونڈ لو ۔ وقت پورا ہوتے ہی  قدرت  لگامیں کھینچ  لیتی  ہے ۔اور  کاکا واپس  چلا  جاتا ہے ۔اب    جیسی کسی  کی تلاش ہے  وہ ویسا  ہی کچھ پا رہا  ہے ۔

ٹھیک  ہے  یہ  بات  سمجھ میں آتی ہے  ۔۔۔ لیکن ۔۔۔۔۔
یہ  تلاش و دریافت ۔۔۔؟؟

میں کچھ تکا  لگانے  کی کوشش کرتا ہوں ۔  مگر  میری  ناقص رائے  سے کسی ایڈیٹ  کا متفق ہونا ضروری بھی نہیں۔

ذرا  عالم ِ ارواح کا تصور  کیجیے ۔   نہ کوئی نام  نہاد  "بڑا"تھا  ، نہ  مجھ  جیسے  "چھوٹے"۔   نہ  مقام و مرتبے کا  فرق تھا   نہ ذات پات  کا جھنجھٹ ،  نہ  کوئی  مذہب ، فرقہ  آڑے تھا، نہ ہی  مرد و  عورت  کی  تفریق تھی  ۔دوستیاں کرنے  کیلئے آئیڈیل ماحول  تھا ۔ظاہر  ہے  دوست تو وہاں  بھی  ہونگے ۔لیکن ہم  میں سے شاید  کسی کو  بھی  یاد نہیں کہ روح  کی پیدائش  سے  لے کر  دنیا میں پیدا ہونے  کے  درمیانی  وقفے  میں  ہماری  دوستی  کس کس  روح سے تھی۔روح کی  تو جیب ہوتی ہے نہ پرس  کہ  وہاں  کے دوستوں  کی تصویر  ہی لے آتی اور یہاں  آ کے  ڈھونڈ  لیتی ۔اب روح کے پاس صرف ایک ہی صورت ہے کہ اُس  روح  کے سامنے آتے ہی وہ اسے پہچان لے گی ۔ لیکن  اس بات کی تصدیق کیسے ہو کہ جس پر روح کواپنا دوست ہونے کا شبہ ہے وہ واقعی وہی عالم ارواح والی دوست  ہے بھی ، یانہیں۔اس مقصد کیلئے روح اپنے کمیونیکیشن  سسٹم  کی  مدد سے سگنل نشر کرتی ہے ،  اور  سگنل  کیچ  کرنے  کی  کوشش  کرتی  ہے ۔اور جس روح سےیہ  فریکوئنسی میچ ہو جائے تو   روح اپنا بچھڑا دوست پا لیتی ہے ۔
زندگی  میں ہمیں بہت سے لوگ اچھے لگتے ہیں، اور ہم ان سے دوستی کرنا چاہتے ہیں مگر دوستی ہو نہیں پاتی ۔کبھی  دوستی  کی   تالی ایک ہاتھ سے نہیں بج پاتی  تو  کہیں دوستی کی بیل منڈھے چڑھنے سے پہلے ہی سوکھ جاتی ہے  ۔ وہ دراصل ہماری   روح  کا مغالطہ ہوتا ہے ، جو اسے محسوس ہوتا ہے  کہ شاید میر ی اس سے عالم ِ ارواح میں دوستی تھی ۔  لیکن فریکوئنسی میچ  نہ ہونے پر  روح پر واضح ہو جاتا ہے کہ یہ وہ نہیں ہے ۔ اور اسی طرح تلاش کا  یہ سلسلہ   جاری رہتا ہے ، حتیٰ کہ روح اپنا/اپنے حقیقی  دوست پا لیتی ہے ۔اکثر  ہم  کسی سے دوستی ہونے کے بعد محسوس کرتے ہیں کہ ہم اس سے پہلے بھی ایک دوسرے کو جانتے تھے ۔ یہ احساس کیا ہے؟؟؟ ایسا کیوں محسوس ہوتا ہے کہ جس سے ہمیں ملے جمعہ جمعہ آٹھ دن بھی نہیں ہوئے اسے ہم صدیوں سے جانتے تھے ۔ ؟؟؟

اب فریکوئنسی پر  آتے  ہیں۔ یہ کیسے میچ ہوتی ہے ۔؟ اور آخر  ہم کیوں مان لیں کہ فریکوئنسی کا  میچ ہونا  ہی  حقیقی دوست   ملنے   کا ثبوت ہے ۔؟ 
مثال کے  طور  پر  پنجاب  میں  آٹھ  ریڈیو اسٹیشن  میڈیم ویو  پر  نشریات  دے  رہے ہیں۔  پورے پاکستان میں پتا نہیں کتنے ریڈیو اسٹیشن  نشریات  دے رہے ہیں۔ پوری دنیا  میں کتنے ہی ریڈیو اسٹیشن  ایک ہی وقت میں اپنی نشریات فضا کے حوالے کر  رہے ہیں۔ شارٹ ویو  ، اور ایف ایم  ریڈیو  اسٹیشنز  کا تو شمار  ہی کیا ۔ بے  شک  ساری  دنیا  کے اناؤنسرز  ،  ڈی  جے  ، آر جے  بول  بول  کے اپنا گلا  خراب کر لیں،  لیکن  جس  کے پاس  ریڈیو  سیٹ ہی نہیں اس  کی جانے بلا  کہ  کون کیا  کہہ رہا  ہے ۔یعنی ریڈیو  ٹرانسمشن  سننے  کیلئے  ضروری  ہے  کہ  کسی  کے پاس  کوئی ریڈیو  سیٹ ہواور وہ آن بھی ہو۔اگر  ریڈیو  سیٹ ہے  اور وہ بج  بھی  رہا ہے  تو  وہ  صرف  اسی ریڈیو اسٹیشن کی نشریات  سنائے گا جن کی فریکوئنسی    اس  پہ  سیٹ کی گئی فریکوئنسی  سے  میچ ہوں  گی ۔
مثلاًاگر  کسی  ریڈیو  سننے  کے شوقین  نے  ریڈیو کی سوئی  میڈیم ویو  1641 کلو  ہرٹز  پر  سیٹ  کی ہوئی ہے تو اسے صرف ریڈیو پاکستان بہاولپور  کی  نشریات ہی سنائی  دیں  گی ۔لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ اس وقت دنیا میں صرف بہاولپور سے ہی ریڈیائی سگنل آ رہے ہیں۔  عین اسی وقت دنیا کے بے شمار ریڈیو اسٹیشنز  اپنی نشریات  میں مصروف ہیں، لیکن ریڈیو صرف وہی نشریات سنا رہا ہے جس کے سگنل  اس  پر  مقرر کی گئی فریکوئنسی سے میچ ہو رہے ہیں۔  اگر اسی وقت کوئی بی بی سی کی نشریات سننا چاہتا  ہے  تو اس  کیلئے لازمی ہے کہ وہ سوئی کو اس فریکوئنسی پر سیٹ کرے ۔
ٹھیک اسی  طرح روح کا  کمیونیکیشن  سسٹم  کام کرتا  ہے ۔ لیکن فرق یہ ہےکہ جب  ایک روح  اپنے سگنل نشر کرتی ہے تو ساتھ ہی ساتھ وہ سگنل وصول کرنے کی صلاحیت بھی رکھتی ہے  ۔  بالکل اسی طرح دوسری روح بھی اپنی سوئی اس فریکوئنسی  پر  سیٹ کر کے  اپنے سگنل  نشر کرتی ہے ۔ جونہی یہ فریکوئنسی  کہیں میچ ہوتی ہے تو روح کو روح کا  نشر کردہ پیغام سنائی دینے لگتا ہے  ۔ اور ہم انسانی زبان  میں اسے احسا س کا نام دیتے ہیں۔  روح کو احساس ہوتا ہے  کہ  یہی وہ عالم ِ ارواح  والی دوست روح ہے ۔اور یوں اس عالم  کی دوستی  اس  عالم  میں تجدید  پاتی ہے ۔اور اربوں  انسانوں  سے  بھری دنیا  میں ایک خاص شخصیت  سے مل کر  اچانک ہمیں لگتا ہے کہ ہم تو جیسے صدیوں  سے ایک دوسرے کو جانتے تھے۔

دنیا  کی 54فیصد  زنانہ  آبادی  میں سے  دو  خواتین کا ذکر ہے 
خدا کا کرنا ایسا  ہوا کہ  دونوں کی فریکوئنسی میچ ہو گئی ۔  اور وہ دیکھتے ہی دیکھتے سہیلیاں  بن گئیں۔لیکن  دونوں  ہی  حیران تھیں کہ اے جوگی  !  یہ ماجرا کیا  ہے ؟؟
جوگی بے چارا لال  بجھکڑ تھا ۔پہلے تو وہ  خود چکرا گیا کہ  ایک  رہتی ہے آئر لینڈ میں، ایک رہتی ہے  کراچی میں۔۔۔
سمجھ  سے باہر  ہے 
مگر  اللہ استاد محترم کے درجات مزید  بلند فرمائے ۔   ہیچمداں کو سمجھا  گئے  کہ یہ سارا چکر روحوں کا ہے ۔  جیسے  تم  وہاں عالمِ  ارواح  میں میری  خدمت  کے بہانے  میری  جان نہیں چھوڑتے تھے ۔ اور یہاں عالم ِ  اجسام  میں  آ کر  بھی  تم  نے بجائے  کسی ہم عصر  شاعر  یا زیادہ  سے  زیادہ  ماضی قریب  کے  کسی مرحوم  شاعر  کی  بجائے  ماضی  بعید  سے  مجھے  ڈھونڈ نکالا  اور  اب  خود  بھی  چھوٹے غالب  بنے پھرتے ہو۔  ویسے  ہی  یہ  نیک بخت حسینائیں اچانک  یہاں  دوست  نہیں بنیں۔ بلکہ یہ  تو   عالمِ  ارواح میں   بھی گہری  سہیلیاں تھیں اور  ککلی  کھیلا کرتی  تھیں۔
ابنِ  بطوطہ  کے تعاقب  میں تو  ابنِ  انشا گئےتھے ، جوگی  شیخ سعدی ؒ  کے  تعاقب  میں چل پڑا ۔  ایک آثارِ قدیمہ آئر لینڈ  میں  مل ہی   گئیں ۔لان  میں  بیٹھی مزے  سے   "میرا  لونگ  گواچا۔"گنگنا رہی تھیں۔  جوگی  نے  سوچا  دنیا  کی  قدیم  ترین  خاتون  کا  آٹو گراف  کے بہانے  انٹرویو  لیا  جائے ۔لیکن  سر منڈاتے  ہی اولے  پڑنے  لگے ۔ جونہی فدویانہ  انداز  میں ادب  سے سلام  کیا :۔  "سلام بڑی  بی ۔"خاتون  چراغ پا، سیخ پا     بلکہ بقول غالب "آتش زیرِ پا" ہو گئیں، اور  پنجے  جھاڑ  کے  لگیں کوسنے ۔۔۔ وے  تیرا  ستیاناس  ۔۔۔۔  وے تیرا انناس ۔۔۔تیرے  دیدوں میں خاک ۔۔۔۔  ذرا  سے  بال  کیا ڈائی کر لیے ،  کلموہے  نے  مجھے  دن دیہاڑے  بڑی بی  کہہ دیا ۔  ہائے ہائے  تیرا  کلیجہ بھی نہ کانپا مجھے  بڑی  بی کہتے ۔۔۔؟؟  ناس پیٹے تو کسی  ٹرالے  کے نیچے  کیوں نہ  آ گیا مجھے بڑی  بی کہنے  سے پہلے  ۔۔۔۔  بڑی  بی  کہتے  ہوئے تیری  زبان  کو  غوطہ  بھی  نہ آیا ۔  تو  گونگا  کیوں  نہ ہو  گیا ۔اور  بہت ساوغیرہ وغیرہ  ۔۔۔۔۔  
جوگی  نے سوچا خاتون  ، خاتون ہی ہوتی  ہے چاہے  آئر لینڈ کی ہو  یا  پاکستان  کی ۔  زبان  بے شک  کوئی  بھی  ہو ، مگر  کوسنے  کا انداز عالمگیر  ہے ۔ اس  قدر  کوس لینے   کے بعد  بھی خاتون کی تسلی  نہ ہوئی   تو  موبائل  نکالا  911 پر  کال  کرکے  پولیس  بلا  لی ۔ جوگی  بے چارا  تو  یہ  بھی   نہ کہہ  سکا :۔
جمع  کرتی  ہو کیوں  خبیثوں کو
اک تماشا  ہوا  ، گلہ  نہ ہوا
آئر  لینڈ  کی  پولیس  تھی  سو  موقع  پر  ہی  پہنچ  گئی ،جوگی  سے  بڑی بی کہنے کی وجہ  طلب  کی گئی ۔  جوگی  بے چارے نے ایک  پھسپھسی  دلیل  سے  کام  چلانے  کی کوشش  کی   :۔ " عمر  کا  حساب  حیاتی  سے  کیا جاتا ہے ۔  اور حیاتی  تو عالم  ِ ارواح سے شروع ہو چکی تھی ۔ اُس حساب سے اور  کچھ  احتراماً مجھ  شامت  کے مارے نے بڑی  بی کہہ  دیا ۔ مگر  میری تو کیا حضرت آدم علیہ  السلام تک میری تمام پشتوں کی بھی توبہ  جو آئندہ  کسی  خاتون  کو بڑی  بی کہوں  ۔حالیہ غلطی  کیلئے   معافی  نامہ  پیش ہے ۔"
خاتون  کچھ پسیج  گئیں ، اوردیدے نچا کے بولیں:۔"اٹس اوکے انکل، آپ  کو معافی  دی جاتی  ہے ، کیونکہ اس  حساب  سے  تو  آپ میرے ہم عمر  ہیں ۔"
 معافی  تلافی  کے بعد  جب  حالات  معمول پہ  آئے تو جوگی  نے موقع  دیکھ کر  پوچھ  لیا :۔"یہ آب و گِل کہاں سے آئے ہیں؟؟"
 خاتون سنی ان سنی  کر کے    پونیاں  ہلاہلا  کر  خود  کو بچی ثابت کرنے  کی  کوشش میں لگی رہیں،  جوگی نے سوال  دہرایا  تو معصومیت سے آنکھیں پٹپٹائیں اور  راز دارانہ  انداز میں بولیں:۔" کان ادھر  لاؤ ۔"  جوگی  نے  کان ان  کے منہ کے  قریب کیا  تو  زور  سے کن  کُررررررررررررر کردیا۔جوگی  نے زچ ہو کر  ہاتھ  جوڑ دئیے  اور کہا:۔"آپ  کے چلبلے  پن سے تو شیطان  ہمیشہ سے پناہ  مانگتا تھا آج  سے میں  بھی  پناہ  مانگتا ہوں ۔ پلیز سوال کا جواب تو دے   دیں۔"آخر  کارکافی مکھن  لگوانے  کے بعد  انہوں  نے  انکشاف  کیا   :۔" جمالِ ہمنشیں بر من   اثر کرد"۔
 رشک کے مارےجوگی  سے بیٹھا  نہ گیا ، فوراً  سے پیشتر گوگل  پر     "ہمنشیں " سرچ کیا ۔  گوگل ارتھ  نے  کراچی کا پتا دیااور جوگی  جا پہنچا ۔دودھ  کے جلے  جوگی  نے ادب آداب کی  چھاچھ  پھونکنے  کی بجائے     سوال کیاکہ:۔   "یہ آب و گِل کہاں سے آئے ہیں؟؟" جواب ملا :۔" جمالِ ہمنشیں   بر من اثر کرد"۔
دو  خواتین  ایک ہی نکتے پر  ایک دوسرے  سے متفق  ۔۔۔۔مجھے تو چکر  آرہے ہیں۔۔۔۔ 
   بہتری اب  اسی میں ہے کہ  کان لپیٹ  کے نکل  چلیں۔
جاتے جاتے  اس  خوبصورت اور بے مثال  دوستی کیلئے اللہ سے دعا ہے کہ اس  پر  خلوص دوستی  کو کسی بد نظرے  کی نظر نہ لگے ۔۔۔


فرہنگ برائے  خاتون آف  آئر لینڈ

فریکوئنسی کو سادہ  الفاظ میں ایک ریڈیائی  زبان  سمجھ لیں۔
یہ آب و  گل۔۔۔:۔  یہ غالب ؔ کا مصرعہ ہے ۔  یہاں اس کا مطلب ہوگا کہ آپ کی اتنی خوبیوں کا اور بیوٹی کا راز کیا ہے ۔؟
جمال ِ ہمنشیں ۔۔۔۔:۔یہ  شیخ سعدی ؒ کا مصرعہ ہے ۔ مطلب کہ:۔  دوست  کی دوستی کا اثر ہے یا  میری ہر  خوبی کا کریڈٹ میری دوست کو جاتا ہے۔ 

7 آرا:

  • 18 December 2013 at 17:41

    تسلسل برقرار نہیں رہا ،اوپر شیخ سعدی،نیچے کچھ تصوف کی باتیں اور آخر میں ایک بونگی

  • 18 December 2013 at 18:24

    ایک مرتبہ پھر پڑھیے
    شیخ سعدی کے کے تعاقب میں
    شاید کہ تیرے دل میں اتر جائے میری بات

    آپ تسلسل کے پیچھے پڑے رہے اور باقی تحریر کھڈے لائن لگا دی؟؟؟؟

    رحم ، رحم ، رحم

  • 19 December 2013 at 19:19
    مہہ جبین :

    فریکوئینسی پر بہت بہترین انداز میں روشنی ڈالی اور اس قدر تفصیل سے اس کے اسباب بیان کیئے ہیں کہ کیا ، کیوں کیسے ، کب ، کہاں ، کون؟؟؟ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کی ساری گتھیاں سلجھتی چلی گئیں ، یہ بھی اویس کی تحریر کی وہ خوبی ہے جس کی میں اول دن سے معترف ہوں یعنی بہت سے ایسے سوالات کا انتہائی شافی جواب مجھے اس کی تحریروں سے مل جاتا ہے جو کسی کتاب میں درج نہیں ہوتے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بہت خوب اندازِ بیاں۔

  • 19 December 2013 at 19:22
    مہہ جبین :

    جوگی نے سوچا دنیا کی قدیم ترین خاتون کا آٹو گراف کے بہانے انٹرویو لیا جائے ۔لیکن سر منڈاتے ہی اولے پڑنے لگے ۔ جونہی فدویانہ انداز میں ادب سے سلام کیا :۔ "سلام بڑی بی ۔"خاتون چراغ پا، سیخ پا بلکہ بقول غالب "آتش زیرِ پا" ہو گئیں، اور پنجے جھاڑ کے لگیں کوسنے ۔۔۔ وے تیرا ستیاناس ۔۔۔۔ وے تیرا انناس ۔۔۔تیرے دیدوں میں خاک ۔۔۔۔ ذرا سے بال کیا ڈائی کر لیے ، کلموہے نے مجھے دن دیہاڑے بڑی بی کہہ دیا ۔ ہائے ہائے تیرا کلیجہ بھی نہ کانپا مجھے بڑی بی کہتے ۔۔۔؟؟ ناس پیٹے تو کسی ٹرالے کے نیچے کیوں نہ آ گیا مجھے بڑی بی کہنے سے پہلے ۔۔۔۔ بڑی بی کہتے ہوئے تیری زبان کو غوطہ بھی نہ آیا ۔ تو گونگا کیوں نہ ہو گیا ۔اور بہت ساوغیرہ وغیرہ ۔۔۔۔۔ جوگی نے سوچا خاتون ، خاتون ہی ہوتی ہے چاہے آئر لینڈ کی ہو یا پاکستان کی ۔ زبان بے شک کوئی بھی ہو ، مگر کوسنے کا انداز عالمگیر ہے

    ہاہاہاہاہاہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بلا تبصرہ

  • 19 December 2013 at 19:26
    مہہ جبین :

    جوگی نے سوال دہرایا تو معصومیت سے آنکھیں پٹپٹائیں اور راز دارانہ انداز میں بولیں:۔" کان ادھر لاؤ ۔" جوگی نے کان ان کے منہ کے قریب کیا تو زور سے کن کُررررررررررررر کردیا۔جوگی نے زچ ہو کر ہاتھ جوڑ دئیے اور کہا:۔"آپ کے چلبلے پن سے تو شیطان ہمیشہ سے پناہ مانگتا تھا آج سے میں بھی پناہ مانگتا ہوں ۔ پلیز سوال کا جواب تو دے دیں۔"آخر کارکافی مکھن لگوانے کے بعد انہوں نے انکشاف کیا :۔" جمالِ ہمنشیں بر من اثر کرد"۔ رشک کے مارےجوگی سے بیٹھا نہ گیا ، فوراً سے پیشتر گوگل پر "ہمنشیں " سرچ کیا ۔ گوگل ارتھ نے کراچی کا پتا دیااور جوگی جا پہنچا ۔دودھ کے جلے جوگی نے ادب آداب کی چھاچھ پھونکنے کی بجائے سوال کیاکہ:۔ "یہ آب و گِل کہاں سے آئے ہیں؟؟" جواب ملا :۔" جمالِ ہمنشیں بر من اثر کرد"۔ دو خواتین ایک ہی نکتے پر ایک دوسرے سے متفق ۔۔۔۔مجھے تو چکر آرہے ہیں۔۔۔۔ بہتری اب اسی میں ہے کہ کان لپیٹ کے نکل چلیں۔ جاتے جاتے اس خوبصورت اور بے مثال دوستی کیلئے اللہ سے دعا ہے کہ اس پر خلوص دوستی کو کسی بد نظرے کی نظر نہ لگے ۔۔۔

    آمین ثم آمین
    واقعی میری یہ دوست بہترین دوست ، بہترین مشیر ، بہترین رازدار اور بہترین ہمنشینی کی اعلی مثال ہے ۔۔۔۔۔۔اللہ اس کو بد نظروں کی بد نظری سے بچائے آمین

  • 19 December 2013 at 19:32
    مہہ جبین :

    یہ آب و گل۔۔۔:۔ یہ غالب ؔ کا مصرعہ ہے ۔ یہاں اس کا مطلب ہوگا کہ آپ کی اتنی خوبیوں کا اور بیوٹی کا راز کیا ہے ۔؟ جمال ِ ہمنشیں ۔۔۔۔:۔یہ شیخ سعدی ؒ کا مصرعہ ہے ۔ مطلب کہ:۔ دوست کی دوستی کا اثر ہے یا میری ہر خوبی کا کریڈٹ میری دوست کو جاتا ہے

    حقیقت میں میں نے اس سے بہت کچھ مثبت انداز میں سیکھا ہے ، دل کی بہت سادہ و سچی ہے اور جو دل میں وہی زبان پر ہوتا ہے،۔ اس کے لئے ایک شعر ۔۔۔
    ہمارے پیار سے جلنے لگی ہے اک دنیا
    دعا کرو کسی دشمن کی بد دعا نہ لگے

  • 14 January 2014 at 11:43

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

آپ کی قیمتی آرا کا منتظر
فدوی چھوٹا غالب

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔

تازہ ترین تحریریں اپنے ای میل ایڈریس پر حاصل کریں

There was an error in this gadget

کرم فرما