Friday, 21 February 2014

ڈبویا مجھ کو ہونے نے 21 (قسط بیست و یکم )۔

1 آرا

بلائے جاں ہے غالبؔ  ، اس کی ہر بات


شیطان کی آنت  کا پھر بھی کوئی نہ کوئی  اختتام ہو سکتا  ہے ، مگر  جوگی اور وسیم کی شرارت  ایجادی   بے لگام و بے اختتام  تھی ۔سونے پہ سہاگہ  ان  کی  دیدہ  دلیری  اور  ہاتھ  کی صفائی ۔ایسے کرتوت نما  کارناموں کے موجد  ہوئے  کہ  شیطان  بھی پناہ  مانگے ۔ شیطان سے گلو خلاصی  تو  بہت  سستی  ہے  مگر  ان   کے  ڈسے کو  نہ  لاحول   فائدہ  دیتا  نہ ہی آیت  الکرسی  کا  ورد  کام آتا  ۔
ببل  گم  (چیونگم ) چباتے چباتے  جب تھک جاتے  تو  بے دید  انسانوں  کی  طرح   حقارت سے پھینک دینے  کی بجائے ،  بصد  احترام  اسے سر   (آنکھوں) پر  جگہ دیتے ۔  البتہ  یہ الگ بات ہے  کہ وہ سر کسی  بدنصیب  غافل  طالب علم  کا  ہوتا ۔ بالوں  میں لگتے ہی  ببل  گم گوہ کی طرح چمٹ جاتی   ۔  جسے  نہ تو  کوئی  شیمپو نہ صابن   دھو سکتا  تھا  نہ  ہی پٹرول یا مٹی کے تیل  سے  الگ  کیا جا سکتا  تھا ۔  نتیجہ  متاثرین  کی ٹنڈ  کے طلوع  کی صورت  میں نکلتا ۔
( گوہ :۔ ایک خزندہ ( رینگنے والا جانور )ہے ، جو کہ گرگٹ سے بڑااور  مگرمچھ  سے چھوٹا ہوتا ہے ، مگر  اسی  خاندان  سے ہونے   کے باعث ان کا ہمشکل ہوتا ہے ۔ گوہ  کی پکڑ  بہت مشہور ہے ۔ ایک بار جہاں چمٹ جائے  پھر  اسے وہاں  سے چھڑانا مشکل ہو جاتا ہے ۔ پرانے زمانے میں گوہ  کی اسی خصوصیت کے پیشِ نظر  چور  اسے سدھا  کر  اپنے ساتھ رکھتے ۔ بلند و بالا  عمارتوں پر چڑھنے  کیلئے ، اور فصیلیں پھلانگنے  کیلئے  یہی  قدیم ٹیکنالوجی  استعمال کی جاتی تھی) 
کئی بے چارے  صبح  نماز کے وقت  چاہنے کے باوجود  بھی  بستر  سے اٹھنے  سے  قاصر پائے  گئے   ۔ تحقیق  ِ حال  پر  معلوم  ہوا  کہ  گوند  سے چارپائی کے ساتھ    چپکے  پڑے ہیں۔اکثر   بے چاروں  کی  بیٹھتے ہی بے محابا  دھاڑیں  نکل جاتی تھیں۔  کئی بستر پر  لیٹتے ہی تڑپ  کر  اٹھ  کھڑے  ہوتے  اورٹاپتے  ،  جھاڑتے  ہلکان ہو تے رہ  جاتے   ۔ کیکر  کے کانٹوں  کی  وہاں  موجودگی  سب  کی سمجھ سے باہر تھی۔
تبت  ٹالکم پاؤڈر سے  قارئین میں سے بہت سے واقف ہونگے ۔ مگر  اس پاؤڈر کا  ایسا  استعمال  یقیناًکبھی  کسی نے نہ سنا ہوگانہ  دیکھا ہوگا ۔
 کلاس  کے  کمروں  میں تو قالین  بچھے تھے  مگر  ہوسٹل  کے کمروں  اور  برآمدوں  میں چپس  کا  فرش تھا ۔ صفائی کا  بہترین  انتظام ہونے  کی وجہ سے فرش ہمیشہ  چمکتے دمکتے رہتے تھے ۔  اور  پھر  ایک  دن  جوگی  کا  تبت ٹالکم پاؤڈر  کا ڈبہ  اچانک   خالی کیا ہوا ، کوئی قیامت  سی  قیامت  برپا  ہو  گئی  ۔یکے بعد  دیگرے  کئی   بے چارے برآمدوں   میں  پھسلے  اور  کمر پکڑے    ہائے ہائے کرتے پائے گئے ۔ حد  تو اس وقت  ہوئی جب ہوسٹل انچارج  صاحب عشا  ء کے بعد معمول  کے  راؤنڈ پرتھے ۔  جیسے ہی جوگی  کے کمرے میں داخلے کو  پہلا  قدم رکھا ۔ اچانک  تین چار فٹ  ہوا میں اچھلے اور دھڑام سے  زمین  پر  آرہے ۔  سارے تنتنے  اور  اکڑ فوں  ہوا ہو گئے  ، اور تین  دن صاحبِ فراش رہنے کے بعد انہوں نے ہوسٹل وارڈن کے عہدے سے استعفیٰ  دے دیا۔
اور پھر  ایک دن تو حدکی  بھی  حد   ہی ہو گئی ۔جو  بھی  باتھ  رومز  سے   باہر  آتا  ،  نہایت بے چین و  بے کل نظر   آتا۔گویا  بندے  نہ ہوئے مرغانِ بسمل   ہو گئے ،  اک  سی سی سی سی  ، سی صدا تھی جو   چاروں طرف سے گونج رہی  تھی ۔ بازار  میں"ونٹو  جینو"  اور "کمال  مرہم " کا کال پڑ گیا ۔  کسی  ظالم  نے  باتھ روم   کے  لوٹوں  میں لال مرچیں  گھول کے رکھ دی تھیں۔    

کیا خوب ! قیامت کا ہے گویا کوئی دن اور


فارسی کی  ایک  ضرب المثل بھی کیا خوب ہے :۔ ہر روز عید  نیست کہ حلوہ خورد کسے۔حالانکہ غالب نے تو تسلی دی تھی کہ " آہ  کو چاہیے  اک عمر  اثر ہونے تک "  مگر  ان مظلوم طلبہ کی  آہیں صرف تین  مہینے میں ہی اثر  کر گئیں ۔   جوگی  کو  ایک دن  ناشتے کے بعد میس سے واپسی پر کلاس میں ایک  ضروری کام پڑ گیا ۔ اسی  دوران  گھنٹی  بج گئی ،   جوگی    کلاس  سے نکلنے  ہی لگا  کہ  جناب  محترم  شبیر  احمد  صاحب کلاس روم  میں داخل  ہوئے ۔ جوگی کو  دیکھا  تو پوچھ لیاکہ تم   کون ہو ۔؟ نہ چاہتے  ہوئے  بھی جوگی  کے منہ سے  سچ  نکل  گیا  کہ  اسی  کلاس  کا  مانیٹر ہوں ۔  شبیر  صاحب  کے منہ  سے  ایک لمبی  سے  اوہ ہ ہ ہ ہ  اچھاااااااااا خارج ہوئی ۔" کافی عرصے سےبیمار تھے اب کیسی  طبیعت ہے ۔؟  " جوگی  نے  دنیا  جہان  کی مسکینی  اپنے  چہرے  پر  سجا  کر  جواب  دیا :۔"اب  تو ٹھیک  ہوں  ، اسی  لیے اب حاضر  ہو گیا ہوں۔" شبیر صاحب نے  اسی مسکینی  سے متاثر ہو کر  مزید عیادت کی :۔ "خیر تو ہے  کیا  ہوا تھا ۔۔۔؟؟ " اس  سے پہلے کہ  جوگی کوئی جواب گھڑتا ، "قبائلی علاقے " سے وسیم نے اپنی دانست  میں کمک اندازی  کی :۔"یرقان ہو گیا تھا ۔" یہ سن کر شبیر صاحب  کی رہی  سہی  ہمدردی  بھی امڈ پڑی :۔ "اوہ۔۔۔۔  آئی سی ۔۔۔۔  خیر  اب تو ٹھیک ہو نا ں ، بے فکر  رہو  جلد  ہی دوبارہ  ریکور کر لو گے ۔" اور جوگی نے دل  ہی  دل میں خود کو کوستے  ہوئے "جی سر " کہہ کر  مجبوراً  قبائلی علاقے کی راہ  لی ۔ شبیر  صاحب "بے چارے مانیٹر " کی  پڑھائی  میں ہوئے حرج  کے احساس  تلے دبے تھے ، اس لیے  کہا :۔ " تمہارے کلاس  فیلوز  نے بتایا تو ہوگا  کہ ہم اپنا سلیبس  سارا ختم  کر چکے ہیں۔ تمہیں مشکل  تو ہوگی ، لیکن  تمہارے دوست   مدد   کر دیں گے ، اور اگر  مزید  مدد  کی ضرورت  ہو تو  بلا جھجھک   مجھ سے پڑھ لینا۔ " اس  کا جواب  صرف  "جی بہت بہتر " کے سوا اور کیا ہو سکتا تھا سو  یہی جواب  دے کر  باقی  سارا وقت جوگی نے  اپنی  نیند  کا ماتم کرتے  گزارا ۔

دیکھیے  لاتی ہے اس شوخ کی  نخوت کیا رنگ


بیالوجی کی تدریس  کیلئے  بھی ایک نئے استاد صاحب کا تقرر ہوا۔انہوں  نے  پہلےہی دن  رعب جمانے کیلئےاپنےتعارف  میں بہت سی لمبی لمبی چھوڑیں ،  اور  یہ  دعویٰ کیا کہ  ان کا تدریسی  تجربہ اتنا ہے جتنا کہ  کلاس میں بیٹھےطلبہ  کی کُل عمر ہے ۔ نیز  کلاس میں نظم و ضبط قائم رکھنے  کا انہیں  صرف شوق ہی نہیں خبط بھی  ہے ۔ مزید  یہ کہ  "میں نے بڑے بڑے شرارتی  طالب علموں  کو  سدھایا ہوا ہے ، اس لیے  بہتر یہی  ہے  کہ خود بخود ہی انسان بن جائیں ورنہ  میں کسی  رعایت کا قائل نہیں۔" یہ تعارف صرف زبانی کلامی ہی نہ تھا ، بلکہ تعارف کے دوران  انہوں  نے ظفر اقبال  کو کھڑا کر کے  ایک بارہ  نمبر  کا طمانچہ  جڑ دیا ۔ اس کا قصور یہ تھا کہ وہ ان  کی باتیں  مسکرا ، مسکرا کر  سن رہا تھا ۔ اس کے بعد  دو اور بے قصوروں کے حصے میں بھی ایسے  کرارے  کرارے طمانچے  آئے ۔  جوگی  کیلئے یہ  ایک کھلا چیلنج تھا  بلکہ در اندازی  تھی کہ  اس  کے مانیٹر ہوتے ہوئے  اس  کی رعایا  یعنی کلاس نہم کے طلبہ کو محض  اپنی انا کی تسکین  کیلئے تھپڑ جڑ دئیے جائیں۔  
اگلے دن  جب   استاد  صاحب نے   چاک نکالنے  کیلئےچاک  کے ڈبے  میں  ہاتھ  ڈالا  تو یکدم  گھبرا  کر  پیچھے ہٹ  گئے ۔  ڈبا نیچے  گرپڑا۔     ڈبے میں سے  ایک   بڑا سا  مینڈک   پھدک کر  باہر آیا  ، اور استاد  بہادر  کے اوسان  خطا ہو گئے ۔   باوجود  کوشش  کے  کوئی  بھی اپنی ہنسی  روکنے میں کامیاب  نہ ہو سکا ۔استاد ِ محترم اس قدر ضعیف  القلب  ثابت  ہوئے  کہ  کلاس نہم تو کیا  حزب الرحمن اسلامی اکادمی  میں تدریس  سے بھی   ہمیشہ  کیلئے تائب ہو گئے ۔

اک تماشا ہوا ، گلہ نہ ہوا


شعبان کا چاند نظر آتے ہی پاکستان  میں پٹاخے  ،  شرلیاں  بازار میں عام دستیاب ہو جاتے ہیں۔ اکادمی  کے  طلبہ کی تو بازار تک بھی  رسائی نہ تھی ۔  مگر  جوئندہ  ، پائندہ ۔شب ِ برات  تو ہمیشہ  سے آیا کرتی  تھی مگر  جس  دھوم دھام  سے اس بار آئی   تھی ،  شاید  ابھی تک کسی کو نہ بھولی ہو ۔ (بشرطیکہ وہ  اس رات وہاں موجود رہا ہو)۔ 
ڈنر  کے بعد میس سے واپسی  پر   جوگی نے وسیم کے ہاتھ میں ماچس دیکھی ۔ حیرانی تو بہت ہوئی ،  مگر پوچھنے کاموقع نہ ملا ۔  اس کے صرف دس  منٹ بعد جب جوگی اپنے کمرے سے  انگڑائی لیتا ہوا نکلا  تو ایک گڑبڑ کا احساس ہوا ۔  چاروں  طرف بھگدڑ سی مچی تھی ۔  جوگی  نے برآمدے میں ایک جانب سے رشید  صاحب کو غصے سے آگ بگولہ ، اور ہاتھ  میں ڈنڈا پکڑے آتے دیکھا تو  غڑاپ سے دوبارہ کمرے میں گھس گیا ۔ ناصر علی کی بدقسمتی کہ  عین اسی  وقت اسے کمرے سے نکلنے کی سوجھی  جبکہ   رشید صاحب  بلائے ناگہانی  کی طرح سر پہ پہنچ  چکے تھے ۔  بغیر  کسی وارننگ کے رشید صاحب نے اندھا  دھندڈنڈا بازی  شروع  کر دی ، بے چارے ناصر کے حصے میں بھاگتے بھاگتے بھی  دس  گیارہ  ڈنڈے تو آ ہی گئے ۔  حواس  بحال ہوئے تو معلوم  ہوا  کہ سب طلبہ کو نیچے صحن  میں فوارے کے پاس جمع ہونے کا  حکم ہے ۔  جوگی  نے  پتلی گلی  پکڑی اور باتھ  روم  کی طرف  بھاگا ۔  مگر   ادھر جانے والی  گیلری کا دروازہ بند تھا ۔  مجبوراً  سب کے ساتھ   ہجوم  کا حصہ بن  گیا ۔  کچھ دیر  بعد  چرواہے کی طرح  جب رشید  صاحب تمام طلبہ کو  نیچے ہانک لے آئے  تو   انگریزی  ، اردو مکس  زبان میں مرغا بن جانے کا  آرڈر دیا ۔ 
جیسا کہ آپ پچھلی اقساط میں پڑھ چکے ہیں ، اردو زبان  کا استعمال  ان کے بگڑے موڈ کی نشانی تھی ، لیکن یہ آج معلوم ہوا کہ اردو کے ساتھ جب انگریزی بولنے  لگیں تو  انتہائی  خراب موڈ کی نشانی ہے ۔ کسی  میں دم مارنے کی مجال نہ تھی ، حتیٰ کہ اساتذہ بھی  ایک طرف خائف کھڑے تھے ۔ مرغوں پر  جب ڈنڈوں  کی برسات  ہوئی  تو بانگیں دینے لگے۔ رشید صاحب کے  غصیلے  انگریزی  اردو مکسچر  سے   اتنا   ہی سمجھ آیا کہ  کسی شیطان کے  چیلے نے پٹاخہ  چھوڑا  تھا جوکہ برآمدے میں  آتے  رشید  صاحب کی ٹانگوں کے درمیان پھٹا  تھا۔بس اب رشید صاحب کو اسی  ناہنجار  کی  تلاش تھی ۔  تیس چالیس  بے چاروں کی پٹائی  کے بعد مجرم  کا سراغ تو ہاتھ نہ آیا  البتہ رشید صاحب ہانپنے لگے  ، مگر غیض  و غضب میں کمی  نہ آئی ۔  ڈنڈا اندازی چھوڑ کے  زبانی  کلامی لیکچر دینے لگے ۔  طلبہ بے چارے  سر جھکائے سننے کے علاوہ کر بھی  کیا سکتے  تھے۔     

Sunday, 2 February 2014

اللہ کی رحمت

5 آرا
 دیوانِ غالبؔ کو  صرف   سر سید  احمد  خان  ،  ڈاکٹر عبدالرحمن  بجنوری  ہی  الہامی   ماننےوالے  نہیں۔  انہی ہستیوں  کی  جوتیوں پر  یہ  فدوی  بھی  ان سے  متفق،  بیٹھا سر دھن رہا  ہے۔اگر  غالب ؔ کے اشعار میں آنے  والے  ہر لفظ کو  گنجینہ ِٔ معنیٰ سمجھیے ۔ تو  پھر  قرآن  مجید  میں بیان  ہوئے  ہر  لفظ کی  تہہ  میں چھپی  حکمتوں   کا کیا  عالم ہوگا ۔ دیوانِ غالب کو  میں ہمیشہ  ٹریژر  ہنٹ کہتا ہوں ۔ افسو س  میں قرآن  مجید  ایک حرف  کے  بدلے  دس  نیکی  کے  چکر  میں تو  بچپن  سے  ہل  ہل کر  پڑھتا آ رہا ہوں ۔  لیکن قرآن مجید کو ٹریژر ہنٹ  والی  نظر سے پڑھنے کا آئیڈیا  دیوان ِ غالب  سے ملا  ہے ۔  اب جو   دیوانِ غالب  کے  انداز  میں پڑھنا  شروع  کیاتو  لگتا ہے  مجھے جامِ جہاں  نما  ہاتھ  آ گیا  ہے  ۔
قرآن مجید  کی  ویسے تو  ہر سورۃ  کی  اپنی  اپنی  فضیلت  ہے  لیکن  سورۃ  فاتحہ  کو  ام  الکتاب  اور  قرآن  مجید کا مختصر خلاصہ   سمجھ لیجئے ۔ میں کوئی مفسر  نہیں اور اللہ  نہ کرے کہ میں ہوں ۔  لیکن ایک  بات پوری  ایمانداری  سے کہہ  سکتا  ہوں کہ اگر  ہم حرف بحرف  سورۃ  فاتحہ  پر  دلی  ایمانداری سے  عمل  کرنے  اور اس پر غور کرنے لگ جائیں تو  نہ کوئی مسلکی اختلاف  کی  گنجائش  باقی رہے گی  نہ  ہی کوئی فرقہ    واریت  کا بہانہ  رہے ۔   لیکن جن صاحبان  کی  دال روٹی  ہی اس   آگ کے دریا  سے  نکلتی  ہے  وہ یقیناً  حسبِ عادت  میری  مٹی  پلید  کرنے  میں نہایت خشوع و خضوع  سے  جٹ جائیں گے ۔  اور میری جانے  بلا۔۔۔۔۔
پٹڑی سے  اترنا میری  پرانی  عادت  ہے  ، خیر  چھوڑئیے   ہم دوبارہ  پٹڑی  پر آتے ہیں اور بات  سورۃ  فاتحہ سے  شروع کرتے  ہیں۔   سورۃ  فاتحہ  کو  نما ز  کی  ہر رکعت  میں ایک مرتبہ پڑھنا لازم قرار دینے  کی  حکمت پر  غور  کیجئے  اور پھر   سورۃ  فاتحہ  دل  میں پڑھیے ۔  جب آپ  اللہ  کی  حمد  اور  اس  کے مالک  ہونے  کے  اقرار سے  گزر کر عبادات  کے بیان اور اس سے  آگے  دعا پر  آئیں گے تو  یوں   پائیں گے ۔ " ہمیں سیدھا  راستہ  دکھا ۔"کیا  خیال ہے ۔۔؟؟ کیا  یہ  ایک  مکمل  دعا نہیں۔۔۔؟؟؟  بالکل یہ  ہماری نظر میں تو   مکمل دعا ہے کہ  یا اللہ  ہمیں سیدھا راستہ  دکھا ۔  لیکن اللہ  نے  ساتھ  ہی  سکھایا  ہے کہ  صرف یہی  نہیں  بلکہ  یہ  بھی کہو" ان لوگوں کا راستہ  جن پر تیرا انعام ہوا۔" ذرا  حکمتوں پر  غور تو کیجیے  ۔  اللہ کو اپنے  انعام یافتہ  بندوں کا ذکر  دعا کے ساتھ  پسند ہے ۔  کیونکہ  یہ  پروردگار  کی  ادا ہے  کہ جس سے  خوش ہو جائے  یا جس سے  محبت کرے اس کا ذکر  بلند کر دیتا ہے ۔ ایسا  بلند کرتا  ہے  کہ پھر  وہ  چاہتا  ہے  کہ  اے میرے بندو  جب 24  گھنٹے  کی 17  فرض  رکعتوں میں میری  حمد اور پاکی  بیان کرتےہوئے اپنی عبودیت  کے  اظہار  میں سیدھے  راستے  کی دعا مانگو تو ساتھ  میرے  انعام یافتہ بندوں کا حوالہ  ضرور  دینا۔  تاکہ یہ بار بار کی یاد دہانی  تمہیں باور کرواسکے  کہ سیدھا راستہ  وہی  ہے جس پر میرے  انعام  یافتہ  بندے  تم  سے پہلے چل کے گئے ہیں۔
اس  بات  میں بہت سے سوالوں  کے جواب ہیں۔  اور تقلید  کے  حامیوں  اور  مخالفوں  کیلئے  بہت سے  سوال  ہیں۔
اردو کے  بے شمار  شعرا  میں سے  اللہ  نے  جو  عزت  و مرتبہ  غالب  و اقبال  کودیا  اس سے کیا ان  کے  انعام  یافتہ  ہونے  میں کوئی  شک باقی ہے ۔؟ سوچنے والوں کی  اپنی ایمانداری ۔۔۔۔ہو سکتا ہے کوئی   مجھے  غالب  کا چیلا  کہہ کر  میری بات سے  انکار کرے ۔  

اللہ  کا  اشارہ  سمجھیں تو معلوم  ہوتا ہے  کہ  کسی  بھی معاملے  میں جب سیدھے راستے  کا تعین  کرنا ہو تو    یہ  دیکھو کہ اس معاملے میں میرے  انعام یافتہ بندوں  نے  کونسا   عمل کیا۔اس لیے اب مجھے  بھی جس معاملے  میں اصلی سیدھا راستہ  جاننا ہے اس  کیلئے  مجھے انعام یافتہ   بندوں کا  طرز  عمل دیکھنا  پڑے گا۔
  
معاملہ یہ  ہے  کہ اللہ  نے سورۃ آلِ عمران  میں مال اور  اولاد کو انسان کیلئے فتنہ قرار  دیا ہے ۔ ایک  اور  مقام پر  اولاد  کو انسان کیلئے آزمائش  قراردیا گیا ہے ۔   فدوی تو پہلے ہی فطرتاً  جوگی واقع ہوا ہے ۔ اللہ  کے سوا اگر  کسی  سے  ڈرتا ہے تو وہ ہے عورت ۔  مگر بحیثیتِ مسلمان  مجھے  خبردار کیا  گیا ہے  کہ  "نکاح میری سنت  ہے  اور جس نے اسے  ترک  کیا  وہ ہم میں سے  نہیں۔"(حدیث مبارکہ کا مفہوم )اس  لیے  مجبوراً  مجھے  اپنی  مسلمانی  بچانے  کیلئے  غالب  کی طرح 
تاب  لائے ہی بنے گی  غالب
واقعہ  سخت ہے اور جان عزیز 
کہتے ہوئے کبھی نہ کبھی تو کسی نیک بخت سے نکاح کرنا پڑے گا۔ صرف اسی  پر ہی  بس  نہیں اور  بھی  بہت سی  تنبیہات (وارننگز) ہیں جن پر عمل کے  نتیجے میں  صاحبِ فتنہ (صاحب ِ اولاد) ہونا یقینی  ہے ۔اولاد  میں عمومی طور پر لوگ بیٹے کے خواہشمند ہوتے ہیں۔ اکثر ابو جہل قسم کے لوگ تو  بیٹا نہ ہونے کا قصور وار بھی بے چاری  بیوی کو سمجھتے ہیں۔ (خیر وہ ایک الگ موضوع ہے اس پر  کسی اور تحریر  میں قلم بازی کروں گا)لیکن مجھے ان  سے کیا مجھے تو اس معاملے میں اللہ کےسکھائے گئے فارمولے کے مطابق  انعام یافتگان کا طرزِعمل دیکھنا ہے ۔   
اس  سلسلے میں اولیاء کرام کا ذکر  بھی  نہیں کرتا  کہیں لوگ  میری  بات  کو  پیر پرست ، مزار  پرست کہہ  کر  سننے  سے  انکار  نہ کردیں۔
چلیے قرآن مجید  سے  ہی  ایک مثال  عرض ہے ۔
میں نے قرآن مجید  میں ڈھونڈا کہ  جب انعام  یافتگان   فتنہ  و آزمائش  کی  لپیٹ  میں آ جاتے  تھے تو وہ  کیا کرتے تھے ۔آنجہانی  بڑے حکیم صاحب (دادا جان) کے بارے میں سنا ہے  کہ   سورۃ کہف  کی تلاوت بہت شوق سے  کیا کرتے تھے ۔ دادا جان کے تعاقب میں   سورۃ  کہف  پڑھنا  شروع کی تو انعام  یافتگان کا  سراغ  ہاتھ آگیا ۔   اللہ  کے  چند  مقرب بندے  ایک  گمراہ  قوم اور اس کےظالم بادشاہ  کے ظلم(فتنہ)سے جان  بچا کر  ایک  غار میں جا  چھپے ۔    بادشاہ  کے  آدمی  بھی  ڈھونڈتے  ڈھونڈتے اس غار  تک  آن   پہنچے ۔  قریب  تھا  کہ  وہ اس غار  کو دیکھ  لیتے(آزمائش  کا وقت  ہے ) کہ اس  وقت انہوں  نے  اللہ  سے  دعا  کی  (طرزِ عمل)۔ اور   کمال  یہ ہے  کہ اس   پکڑے  جانے  کے  خوف میں مبتلا  بندوں  نے یہ دعا  نہیں کی  کہ  یا اللہ  ہمیں ان سے  محفوظ رکھ ، نہ یہ دعا کی  کہ  یا اللہ  ان کو اندھا کر  دے  یا کسی  بھی طرح ان کو یہاں سے بھگا۔ نہ ہی وہ اوور سمارٹ   اور بڑبولے تھے  کہ  دعا مانگتے  یا اللہ ہم  نپٹ لیں گےاور   اس  آزمائش  میں ثابت  قدم  رہ کے دکھائیں گے ۔  یا پھر تو  ہمیں ثابت  قدم  رہنے کی  توفیق دے اور  ہمارا خوف دور کردے ۔
آیت  10:۔ (وہ وقت یاد کیجئے) جب چند نوجوان غار میں پناہ گزیں ہوئے تو انہوں نے کہا: اے ہمارے رب! ہمیں اپنی بارگاہ سے رحمت عطا فرما اور ہمارے کام میں راہ یابی (کے اسباب) مہیا فرماo 
آیت 11:۔ پس ہم نے اس غار میں گنتی کے چند سال ان کے کانوں پر تھپکی دے کر (انہیں سلا دیا)o 
کوئی دنیا دار  جانب دار  مؤرخ  نہیں بلکہ  خالقِ کائنات  بتاتا ہے  کہ  اس فتنہ  و آزمائش  کے  وقت انہوں  نے دعا  مانگی  کہ"یا  اللہ  ہمیں اپنی رحمت دے ۔"اور اس دعا کی قبولیت  ہوئی اور  اللہ  کی رحمت نے انہیں گھیر  لیا۔
یہ چھوٹی  سی  دعا  اپنے  اندر  حکمتوں  کا  بے کراں سمندر  چھپائے  ہوئے ہے ۔ میں تو جتنا  غور  کرتا گیا حیرانی  ہی  حیرانی  میں غرق ہوتا گیا۔ میں نے  اس  ایک  آیت  سے   سیکھا کہ  دعا  میں کیا  مانگنا منافع  بخش  ہے ۔مجھ پر رحمت  کے  نئے نئے مفہوم  واضح  ہوئے ۔ اور  مجھے  معلوم  ہوا  کہ  دعا کی فوری قبولیت  کیلئے کونسا فارمولا  ہے ۔ رحمت مانگ  کے  دراصل  انہوں  نےاس آزمائش  و فتنے  کے  سلسلے  میں اللہ  کے سامنے   اپنی  عاجزی  کا اظہار  کیا ۔ انہوں  نے  جزو مانگنے  کی بجائے کُل  مانگنے کو ترجیح دی ۔ آئیے ان مقرب بندوں  کے طرزِ عمل سے  کچھ  سبق سیکھیں۔  ہر  فتنے  ہر  آزمائش  میں ثابت  قدمی  نہیں رحمت مانگنا  سیکھیں۔ثابت قدمی  کی دعا حضرت ذکریا  علیہ السلام نے بھی کی تھی  اور  آرے  چل  گئے تھے ۔ وہ تو اللہ  کے  برگزیدہ  نبی  تھے اس لیے وہ ثابت  قدم رہے ۔  ہم  تو بے حد  گناہگار  و کمزور  بندے ہیں اگر   اپنی اوقات پر نظر ہو تو  یقیناً ہم  رحمت ہی مانگیں گے ۔ 
مجھ پر واضح ہو گیا  کہ  اصحابِ کہف  نے فتنہ  و آزمائش  کے  وقت  رحمت  مانگی  تو انہیں رحمت نے  آ کر  اپنی  پناہ میں لے  لیا۔  صرف  یہی  نہیں ان کا یہ  عاجزی  سے رحمت    مانگنا اللہ  کو اتنا پسند آیا  کہ  اس  نے حضرت  آدم سے حضرت محمد صلی اللہ  علیہ  وآلہِ وسلم کے  درمیانی (کم و بیش  ساڑھے سات ہزار سال) عرصے  کے  مثالی  واقعات  میں سے اس واقعے  کو  بھی اپنی آخری کتاب  میں بیان کر دیا  تاکہ  قیامت  تک  کیلئے بالواسطہ  ان بندوں کا ذکر  یونہی ہوتا  رہے ۔  اور  چونکہ  فتنے اور  آزمائشیں تو ہر زمانے  میں آنی ہیں۔ اس لیے عقلمند  لوگ  ان سے بچاؤ کیلئے اصحاب ِکہف والی  ترکیب  استعمال  کر کے محفوظ رہیں۔
میرا ڈر  خوف دور ہو گیا ہے  ۔ بے شک  مال  اور اولاد فتنہ  ہے  لیکن اللہ  کے  مقرب بندے فتنے  و آزمائش میں رحمت مانگ کے  اس کی  پناہ  میں آ جاتے تھے ۔    جیسے اصحابِ کہف  نے معاملہ  اللہ  کی رحمت کے سپرد  کر دیا  تھا  ۔  یعنی  جو اللہ  کی  رحمت دے  گی  وہی قبول ہے ۔
اب سورۃ فاتحہ کی آخری  آیت   کا ترجمہ  بھی   دہرا  لیں:۔ "نہ  کہ ان  لوگوں کا  راستہ  جن  پر تیرا غضب ہوا۔"
اب ذرا آئینہ  دیکھئے  کہ کون  لوگ ہیں جو اول  تو  فتنہ  مانگتے ہیں۔  پھر  اللہ  کی رضا  میں راضی  نہ رہتے ہوئے  بیوی کو طلاق دے دیتے ہیں۔  اور اللہ  کی رحمت کی آمد  پر  ناگواری  کا اظہار کرتے  ہیں۔بیٹی کی  پیدائش  پر  کون  لوگ  ناگواری  کا  اظہار کرتے تھے ۔ اور  ان کا  حشر  اللہ  نے  کیا  کیا ۔  ایسے  لوگوں  کو کون  عقلمند  سمجھے گا جو  انعام یافتگان  کا  راستہ  چھوڑ  کر  زمانہ  جاہلیت  کے بدبخت  شقی  القلب  کفار کے راستے  پر  چلتے  ہیں۔

لفظ رحمتہ اللعالمین پر  غور  فرمائیے ۔  اوردیکھیے  اللہ  نے    تمام جہانوں کیلئے جو رحمت  ہیں  ان کو  اولاد  کے ضمن  میں  کیا عطا فرمایا ۔
 رحمت +رحمت+رحمت+رحمت
اب ذرا  ان  کا  راستہ  بھی  ملاحظہ ہو ۔  جب    حضرت سیدہ  خاتونِ جنت  رضی اللہ تعالیٰ عنہا  تشریف  لاتیں تو کائنات  کے  محبوب  ترین  اور  افضل ترین   استقبال   کیلئے کھڑے ہو جاتے ۔  تمام  جہانوں  کیلئے  جو رحمت ہیں وہ اپنی  "رحمت " کیلئے  اپنی چادر مبارک   بچھا دیتے ۔یہ ہے وہ  راستہ  جسے   خالق ِ کائنات  "اسوۂ حسنہ" کہتا ہے ۔  اللہ کے نزدیک زندگی  کی  راہ  پر چلنے  کیلئے یہ سب سے بہترین راستہ ہے ۔

اللہ  کا بے شمار شکر ہے  کہ  اس  نے مجھے  بھی رحمت سے نوازا  ہے ۔  سگے  رشتے اور منہ بولے  رشتے  کے چکر میں ، میں کبھی نہیں پڑا ۔ اس لیے  اس سے کوئی  فرق نہیں پڑتا  کہ  وہ کہاں پیدا  ہوئیں  ، میرے لیے  تو  ایسے  ہیں جیسے میری  اپنی  بیٹیاں  ۔۔۔۔
مومنہ  زینب   کے بعد  اگر کسی  نے مجھے اس حد تک متاثر کیا  تو  وہ  ہیں  محترمہ  عشبہ  بانو ۔۔۔۔۔
کہنے کو  تو  عشبہ  ذوالقرنین  کے گھر پیدا ہوئی  ، اور  میں آج تک اس سے ملا بھی  نہیں ، لیکن  دل کا حال اللہ  جانتا  ہے  ، ہو سکتا  ہے  یہ مجھے  ذوالقرنین  سے بھی  زیادہ پیاری ہو ۔

اے  نٹ کھٹ  چلبلی  شہزادی  عشبہ  بانو،   اے اللہ کی رحمت ، تم بے شک کہیں بھی رہو ،   کوئی غائبانہ  ہی تم سے پیار کرتا ہے، تمہاری آمد کا شکریہ 
سالگرہ مبارک  پریوں  کی شہزدی 

تازہ ترین تحریریں اپنے ای میل ایڈریس پر حاصل کریں

There was an error in this gadget

کرم فرما