Thursday, 19 December 2013

یارانِ نکتہ داں (قسط اول) شانی

10 آرا
محبت  وہ  موضوع  ہے جس  پر  بلا تکان بولا  اور لکھا جا سکتا ہے ۔  لمبی لمبی  چھوڑنے کیلئے  اس  سے زیادہ  بہتر کوئی موضوع  شاید ہی دنیا میں ہو ۔فارسی  کی ایک  کہاوت ہے :۔  چوں کفر  از کعبہ برخیزد ۔  کجا ماندمسلمانی"(جب  کفر  کعبہ  سے  ہی نکلنے لگے تو مسلمانی  کہاں رہ گئی)اس  لیے  گھبرائیے مت ! کیونکہ چھوٹا غالب  ہی  اگر  لمبی لمبی چھوڑنے لگ گیا  تو "اندازِ بیاں  اور"اس  زمانے  میں اور  کہاں رہ  جائے گا۔
 محبت وہ  کام ہے جو  اللہ تعالیٰ بھی کرتا ہے  اور     انسانوں نے تو خیر  ٹھیکہ لے رکھا  ہے۔لیکن  اللہ اور انسانوں  کی محبت میں ہی نہیں محبت کے انداز میں بھی فرق ہے ۔اول تو  انسانوں کو محبت نہیں بلکہ محبت کا وہم ہو تا ہے ۔بالفرض اگر  کسی شیر پتر کو  سچ مچ  محبت ہو بھی جائے  تو  وہ  سیپ کی طرح محبت کا  یہ  موتی اپنے اندر چھپائےرکھنے  کی  بھرپور کوشش کرتا ہے ۔ محبت کا راز  پردہ  نشین  کنواری  کی  طرح  دل کی چار  دیواری  میں  چھپائے  رکھتا  ہے ۔یہ مقدس  راز شعور  کے تہہ خانوں میں لپیٹ کر  رکھتا ہے ۔صرف یہی  نہیں  بلکہ  وہ محبوب کو  بھی دنیا  کی نظروں سے اوجھل کر دینا  چاہتا ہے  تاکہ  اس کے علاوہ کوئی  اور نہ  اسے  دیکھے ۔نہ  ہی اس  کی غیرت کو  یہ گوارہ ہوتاہے  کہ  اس  کے محبوب سے کوئی  اور محبت کا دعویٰ کرے ۔
اس کے برعکس  جب  اللہ  تعالیٰ کسی  سے محبت  کرتا ہے تو  وہ چاہتا ہے کہ  ساری دنیا  کو معلوم  ہونا چاہیے  کہ  میں فلاں  سے محبت کرتا ہوں ۔  نیز  وہ  چاہتا  ہے  کہ جس سے میں  محبت کرتاہوں ساری  دنیا کو چاہیے کہ اس  سے محبت کرے۔مجھے  اللہ  کایہ  انداز بہت  پسند  ہے ۔ لہذا  سنتِ الہی کے  اتباع میں ، میں اپنی  کچھ محبوب  ہستیوں  کا ذکر  کرنے  لگا ہوں ۔  میں انہیں دوست رکھتا ہوں  اور  میں چاہتا ہوں  کہ ہر  کوئی  انہیں دوست رکھے ۔ 
سیانے  کہا کرتے ہیں کہ  آدمی کی پہچان  کرنی ہو تو اس کے دوست دیکھو ۔ وہ  کن لوگوں  کی صحبت  میں بیٹھتا ہے ،  کن لوگوں سے اس کی دوستی ہے  اور  وہ  لوگ  کیسے ہیں جو اسے دوست رکھتے ہیں۔میں سیانا  تو نہیں مگر  یہی  بات  اکثر استادِ محترم قبلہ  غالب ِ اعظم  کے مقام و مرتبے  سے  ناواقف لوگوں  سے  کہتا ہوں ۔ کہ  بے شک  غالب ؔ نے  اپنی  حقیقت پر  خود  ہی  اتنے پردے ڈالے  ہیں کہ ظاہر  پرست  بے چارے تو انہیں ایک  مسلمان ماننے سے  بھی ہچکچا  جاتے  ہیں۔  لیکن اگر  ذرا سی عقل  استعمال کرکے  خان بہادر مرزا اسد  اللہ  بیگ  غالب   کے  دوستوں  کو دیکھ لیا  جائے  تو  ان  کا  مقام  و مرتبہ  خود بخود  سمجھ آ جاتا ہے ۔ جس  انسان  کے دوست   شیخ  نصیر  الدین  عرف کالے  میاں ،  مولا نا  فضل  حق  خیر  آبادی ،نواب مصطفے ٰ خان شیفتہ اور   مفتی صدر الدین آزردہ  وغیرہ  جیسی  شخصیات  ہوں  اور جس کے  معتقدوں  میں مولانا  الطاف  حسین حالی ،  سر سید احمد  خان اور  سر  علامہ  محمد  اقبال  جیسی  ہستیاں شامل  ہوں ۔ تو  صرف  عقل کے اندھے ہی  اس کی  عظمت میں شک رکھیں گے۔
اسے    خوش قسمتی  کہیئے  یا  نسبت  کا  فیضان  کہ فدوی  کو بھی  کچھ  ایسے  پُر خلوص اور  قابل  قدر  دوست  میسر  آئے   جن  کی دوستی  فدوی  کی  پہچان  اور چھوٹے  غالب کا  طرہ امتیاز  ہے۔محبوب  اور دوستوں کے  قصیدے  پڑھنا کوئی نئی  بات  نہیں۔  لیکن میرے دوستوں میں ایک ایسی انفرادی  خصوصیت  ہے جو کہ  کم  ہی  کسی  کے  دوستوں میں ہو گی ۔یہ  دوست  مجھے انٹر  نیٹ  سے  ملے ۔ فیس  بک  جسے  اکثر  دل جلے  فیک بک  کہتے ہیں،  پر  ہماری دوستی ہوئی۔ کمال  یہ ہے  ہم آج  تک بالمشافہ  نہیں ملے ۔  لیکن  ان کے  خلوص اور  محبت  کا  یہ عالم  ہے  کہ  جیسے ہم بچپن کے لنگوٹیے یار ہوں۔  اپنے  ان  پیارے  دوستوں  کی نذرشیخ  سعدی  کا  ایک  قطعہ  جس  کاایک ایک لفظ  میرا ترجمان  ہے ۔
گلے خوشبوئے در حمام روزے
رسید از دستِ محبوبے بدستم
بدو گفتم کہ مشکے یا عبیرے
کہ از بوئے دلآویز تو مستم
بگفتا من گلے نا چیز بودم
و لیکن مدتے با گل نشستم
جمالِ ہمنشیں بر من اثر کرد
وگرنہ اینہمہ خاکم کہ ہستم


شانی 


شانی کا نام آتے ہی  مجھے نظامی کا شعر یاد  آ جاتا ہے 
 من عشق کافرم،او حسن کافر 
چہ گبراں کافرے را می پرستند
پہلی بار جب میں موصوف پر  متوجہ ہوا تب  یہ   "عشق  بھلے شاہ شانی " ہوا  کرتے تھے۔ایسے  اوٹ پٹانگ نام والے لوگوں سے  میں دور ہی رہتا  ہوں  ۔  لیکن ان  کی فرینڈ  ریکوئسٹ اس  لیے  قبول  کی  کیونکہ  ان کی  پروفائل پکچر  پر  اشفا ق احمد  صاحب  کی  وہ خوبصورت تصویر  آویزاں تھی جب آتش جواں تھا۔میری دلچسپی  کا سبب یہ تھا  کہ  اشفاق  احمد  صاحب کی  آخر عمرکی تصاویر  تو ان کے اکثر  پرستار  لگاتے ہیں ، لیکن یہ کون ہے  جو  ان  کو اتنا  دورتک جانتا اور  پسند  کرتا ہے ۔خیر اس  کے بعد     کافی  عرصہ تک     ہم    ایک دوسرے کی فرینڈ لسٹ میں پائے جانے کے  علاوہ  کچھ  نہ تھے ۔
  میں اس پنڈ کا   پینڈو    تھا ۔  جہاں انٹر  نیٹ جیسی  عیاشی کیلئے پی ٹی سی ایل  وائرلیس  کے  منت  ترلے کرنے  پڑتے تھے ۔  جس کا قریبی  ٹاور بھی  مجھ سے کم ازکم14 کلومیٹر  دور تھا ۔  مریل  ٹٹو  جیسی  اس  سپیڈ میں فیس  بک کھولنے اور نوٹیفیکشن   لسٹ  دیکھتے دیکھتے   بجلی  کی رخصتی  کا وقت ہو جاتا ۔ایک  رات جب  انٹر  نیٹ کی سپیڈ 75کے بی  فی سیکنڈ پائی تو بغلیں بجاتے  ہوئے  فیس بک  پر  کچھ  تفصیلی دورہ  کیا۔ معلوم ہوا کہ  میں ایک  گروپ "محفل ِ قلندر" میں شامل ہوں۔ محض تماشہ  دیکھنے  کیلئے  میں نے  گروپ  کی وال  کھولی ۔  دو چار  پوسٹس   سکرول کرنے  کے بعد  ایک پوسٹ پر  میری  بریکیں لگ گئیں۔سعادت حسن  منٹو  صاحب کی  مدح  میں ایک مضمون تھا ،  چونکنا  تو  بنتا تھا ۔حیران ہو کرنام   دیکھا  کہ  ایسا اعلیٰ ذوق  کس  ببر  شیر  کا  ہے۔  تو مزید  حیران ہونا پڑا کہ  وہ  پوسٹ  کسی  "عشق  بھلے  شاہ  شانی " نے کی  تھی ۔کچھ دیر  خود  کو بھی  کوسا  کہ  اتنے  اعلیٰ ذوق کا  بندہ میری  فرینڈ لسٹ  میں ہے اور میں اس  سے  بے خبر رہا۔  اب تو  علیک سلیک  کرنی  ہی پڑے  گی ۔  
یوں  ہم بجا طور پر  شکر  اور فخر کر سکتے  ہیں کہ  ہماری دوستی  کی گاڑی  کو منٹو  جیسی  عظیم شخصیت نے دھکا  لگا  کر  چلایا ۔یہ  غالبؔ کی  وجہ سے  میرے  قریب  آئے  میں اشفاق  احمد  صاحب کی وجہ سے  ان کے قریب آیا اور منٹو  کی  وجہ سے  ہماری دوستی   شروع ہوئی ۔

دوستی  کیا  شروع  ہوئی  یوں  سمجھیں مجھے  شانی کا  کینسر  ہو گیا ۔  پہلے  جاں ۔۔۔۔  پھر  جانِ  جاں۔۔۔۔  پھر  جانِ جاناں ہوگئے ۔جیسا  کہ  قرآن مجید  میں اللہ  تعالیٰ نے سرورِ کائنات  ، فخرِ موجودات  حضور  نبی کریم ﷺ کی  شان  میں فرمایا  ہے  کہ " قسم ہے  مجھے اس شہر کی  کیونکہ  اے پیارے رسول ﷺ آپ  اس شہر  میں موجود ہیں۔ "وہ  جو  میں نے  رواروی میں فیس  بک  پر  اپنا اکاؤنٹ  کھول  لیا  تھا ۔ اب  فیس  بک پر  ایسے  کھنچا  چلا  آتا جیسے  فیس بک  پر  آنا  ثواب کا  کام  ہو۔ فیس  بک  پر  اور غریب  کا  تھا  ہی کون  اک شانی  کے سوا۔   رفتہ رفتہ    چیٹ  سے ہم  فون  پر  آ گئے ۔ اس  سے  زیادہ  کیا   خلوص کی مثال ہو گی  کہ  یہ  فون  کالز  بھی  سراسر یک طرفہ  تھیں۔  مجھے کنجوس  نہیں  معذور سمجھیے  ،  موصوف  کا  ڈیرہ  ہی ابو ظہبی  میں ہے  اور  یو فون  کے سگنل  کٹر  پاکستانی  کی  طرح    باہر  نہیں جاتے  ۔ موصوف  ابو  ظہبی  میں بیٹھ کر  گھنٹوں کال  کیا کرتے ، اتنے تواتر  سے  کہ  میری  پیاری  اماں  جان  کو  شک  ہو گیا  کہ  کوئی کلموہی  میرے  بچے  کے  پیچھے  پڑی  ہے ۔ صفائی  کے سلسلے  میں  جب  اماں  جان کے گوش گزار  کیا  کہ  شانی   کوئی  کلموہی  نہیں بلکہ آپ  کا  ابو ظہبی   والابیٹا  ہے ،  البتہ اس  کی وجاہت  کے سامنے  آپ  کا یہ  بیٹا کلموہا   نظر  آتا ہے ۔ اماں  کو یقین  تو آ گیا مگر  ان  کو  حیرانی  اس  بات پر  تھی  کہ  آخر اس  سلجھے  ہوئے  نیک بخت  پوت کو  تم  جیسے نکمے  سے  بات کرکے کیا ملتا ہے ۔
چھوڑئیے اماں  جان تو  خیر  پرانے  وقتوں  کی  ہیں، مگر  حد  تو  جانی (جہانگیر  بدر  عرف جانی) نے کر دی ۔ ایک دن  اس کے ساتھ  بیٹھا تھا کہ  شانی  کی کال  آ گئی ،  24 منٹ  کی کال  کے  بعد  جب  اسے  مرعوب کرنے  کیلئے بتایا کہ  دیکھ لو  بے قدر  لوگو! مابدولت کو  لوگ ابو ظہبی سے فون  کرتے  ہیں۔  اور  ایک تم  جیسے بھی   دوست ہیں جنہیں پاکستان  میں رہتے ہوئے  بھی   اللہ  نے کبھی  ایس ایم ایس  کی توفیق نہیں دی۔  بجائے  مرعوب ہونے کے اس  نے    کہا  :۔  یار شانی  کی شرافت اور  بڑے پن  کو سلام  ہے جو تم جیسے لعنتی  سے بات کیلئے اتنا وقت اور پیسے حرام  کرتا ہے ۔  دل  تو جل گیا مگر   نواب سراج الدولہ  اور ٹیپو  سلطان  کے ساتھ ہونے  والی غداریوں  کو  یاد کر کے خود  کو تسلی دے لی ۔

عشق  سے   مجھے  نہیں معلوم  ان کی کیا مراد ہے ۔ اور اس  عشق سے ان کا  کیا  لینا دینا ہے جسے  انہوں نے پرائس ٹیگ کی  طرح اپنے ماتھے سے چپکا رکھا ہے ۔  کئی بار سمجھایا ارے اللہ کے بندے  اگر  اپنا نام لکھتے  شرم آتی ہے تو کم از کم  کوئی ڈیسنٹ  اور  اپنے  حلیے  جیسا  باوقار  قلمی نام رکھو۔   یہ  کیساچھچھور  پن  لٹکا  رکھا ہے ۔    ہمارے سرائیکی وسیب  میں  پرانے  خیالات  کے  لوگ  جب کوئی  نئی ماڑی ( دو منزلہ یا اس سے بڑی عمارت ) بنواتے ہیں تو اچھی  خاصی   سجاوٹ ،  زیب و زینت  ، رنگ روغن کروانے  کے  بعد  عمارت کی  چھت  کے ایک کونے  میں کُنی (کالی  ہنڈیا) رکھ دیتے  ہیں۔  جو  کہ  اچھی  خاصی  خوبصورت  عمارت کے ماتھے پر  ایک  عجیب سا  داغ محسوس ہوتی رہتی ہے ۔  لیکن  رکھنے والوں کا  وہم ہے اس  عمل  سے ان کی نئی نویلی  عمارت    نظرِ بد سے  محفوظ  رہے گی ۔  
صرف عمارتیں  ہی کیا ۔ ایک ملک صاحب نے نیا  ٹریکٹر  لیا ۔  ایک دن کھیتوں  میں ہل چلاتے مل  گئے ۔  مجھے  سلام کیا تو میں نے  بھی  لگے  ہاتھوں نئے  ٹریکٹر  کی  مبارک  باد دی ۔  لشکارے  مارتے  ٹریکٹر  کے  سامنے  ایک  کھلا( جوتا) الٹا   لٹک  رہا  تھا ۔  میں نے حیرانی سے  پوچھا  ملک صاحب یہ کیا  تماشا  ہے ۔؟ ہنس  کے  بولے بس سائیں  نظر  کیلئے  باندھ رکھا  ہے ۔  مائیں بھی اپنے بچوں  کو نہلا کر  یا جب  بھی کوئی  نئے کپڑے پہنائیں۔  سرمے  کا  ایک  بڑا سا ٹیکہ  ضرور لگا دیتی  ہیں کہ میرے لعل کو کسی  کی نظر نہ لگ جائے ۔  اسی  سے  مجھے شک ہوا کہ  ہو نہ ہو  اپنے   نام(احسان  الحق)اور خوبصورت شخصیت کو بدنظروں سے محفوظ رکھنے  کیلئے  شانی بابا نے  عشق کو بطور ٹیکہ  چپکا رکھا ہے ۔  ایک  بار  میں ہاتھ دھو  کے  ان کے  پیچھے پڑ گیا  کہ  نام  تبدیل  کرو ۔  حضرت  نے  بہتیرے رسے  تڑانے  کی کوشش  کی مگر  میں نے ایک  نہ چلنے دی ۔  آخر   کار  مان  گئے  کہ  نام  تبدیل کرنے  لگا  ہوں ۔  میں نے  شکر  ادا  کیا  اور جو  منت  مانی  تھی وہ پوری  کرنے  دربار  پہ گیا اور  جب واپس  آیا  تو  نام  بدل چکا  تھا ۔  مگر  عشق  کمینہ  اب  بھی  ان  سے  نتھی  تھا۔  میں نے  ٹھنڈی  آہ  بھری  اور  مان  لیا  کہ  اس  عشق کا میں کچھ  نہیں بگاڑ  سکتا۔    

آج تک شانی سے کبھی  ملاقات  تو نہیں ہو پائی  اس لیے کچھ نہیں کہہ  سکتا کہ اپنی  ذاتی  زندگی میں موصوف کیسے ہیں ۔؟ البتہ  اتنے عرصے کی قربت اور دوستی   کے حوالے  سے یہ  ضرور کہہ سکتا ہوں  کہ  شانی  سے زیادہ  بیبا  بندہ  شاید  ہی  کوئی  اور ہو۔  باقی سارے  انسان تو مٹی  سے بنے ہیں لیکن  موصوف لگتا ہے  محبت  سے بنے  ہیں ۔  اگر  واقعی  یہ  انسان  ہے اور بنا بھی  مٹی سے ہے  تب  بھی اللہ  نے شانی  کا پتلا  بناتے  وقت  اس مٹی میں برابر  کے تناسب  سے محبت بھی شامل  کی ہوگی  ۔   موصوف  نہ صرف وجیہہ  ہیں بلکہ  مردانہ  وجاہت  کا  شاہکار  اور  مجھ  جیسے نظر  وٹو لوگوں  کے لیے احساسِ  کمتری کا باعث ہیں۔ ان  کی تصویر   دیکھ کر  یا  ان کا  ظاہری  حلیہ  دیکھ  کر  کوئی اندازہ  نہیں کر سکتا کہ  یہ بندہ جتناخوبصورت  نظر  آ رہا  ہے  اندر سے یہ  اس  سے بھی کروڑوں  گنا زیادہ   پیارا ہو سکتا ہے۔  

اگر  شانی  ایک  پھل ہوتا  تو  یقیناً  اخروٹ  ہوتا۔اخروٹ  باہر  سے جتنا  سخت ہوتا ہے  اس   سے کوئی انجان آدمی  جس  نے پہلے  اخروٹ نہ دیکھا نہ سنا ہو  ، سوچ  بھی  نہیں سکتا کہ اس سخت  روڑے  کے   اندر  اتنا  مزے دار مغز بھی ہو سکتا ہے ۔ لیکن  اسی  سخت نظر آنے  والے  اخروٹ کو جب توڑا جائے تو اندر سے اتنا  نرم  اور مزے دار گودا نکلتا ہے کہ حیرت ہوتی ہے ۔  اور  جو  یہ  گودا کھا لے  اس کی دماغی  کارکردگی  میں اضافہ  ہوتا ہے ۔  لیکن مزے کی بات یہ  کہ اخروٹ  توڑ  کر  اس  کا سارا گودا نکالنا  بھی ہر کسی  کے بس کی  بات نہیں  ۔اخروٹ کھانے کیلئے  مناسب  حکمت عملی  ، اور صبر  کی  بہت  ضرورت  ہوتی  ہے۔  جس کی جتنی ہمت اور  جتنی استقامت ہوتی ہے وہ  اخروٹ سے اتنا ہی  گودا  نکلنے  کے بعد  باقی  کو  چھلکا  سمجھ کر  پھینک  دیتا ہے ۔  بہت کم لوگ  ہوتے  ہیں جو اخروٹ  کی افادیت  بھی سمجھتے ہیں اور اخروٹ  توڑ کر  سارا گودا نکالنے کے فن سے آشنا ہوتے  ہیں۔میرا یہ  پیارا دوست بھی ایک  اخروٹ ہے۔اس کے  ظاہر پہ نہ  جائیں۔  اس  کے اندر  اتنا نرم اور  مزے دار مغز ہے  کہ  کم عقلوں کو عقلمند  بنانے  میں اکسیر  ہے۔   

Wednesday, 18 December 2013

شیخ سعدی کے تعاقب میں (فرمائشی تحریر)۔

7 آرا
سیر  و سیاحت کا  شوق تو  خیر   تقریباً  ہر  انسان میں پایا  جاتا  ہے ۔ اتنے  انسانوں  میں سے  مشہور سیاح  بھی  بہت گزرے  ہیں۔  کچھ  اٹھے اور زمین ناپ  آئے ، اور پھر  اپنا وقت  آنے  پر مر گئے۔اپنے  پیچھے  سفر  نامے  چھوڑ  گئے ۔   ایک  چاچا  مارکوپولو   تھا ۔  جدید تحقیق  کے  مطابق  اس نے  کبھی وینس  سے قدم باہر  نہ دھرا تھا اور دنیا اس کے  وسط ایشیا  اور چین  کے سفر ناموں  پر  لوٹ پوٹ ہوئی جاتی  ہے ۔ ہر  بات میں  مغرب کی مثالیں دینے والے   ایسےذہنی  یتیموں  کیلئے  ہدایت  کی دعا ہے ۔  ایک شیخ  سعدی ؒ بھی تھے ۔ شیراز  سے  بس اتنا  تعلق  ہے  کہ  اس شہر میں پیدا ہوئے  اور  پھر  عمر  کے  آخری  چند  سال  گزار  کر وہیں دفن ہوئے ۔اس  کا  درمیانی  طویل وقفہ  جو  کہ  کم و بیش  سو  سال پر  مشتمل ہے  سیاحت  اور حصولِ  علم میں گزرا۔ کبھی  سومناتھ  کا   سن کر  طبیعت بے چین ہو گئی تو کبھی دمشق  جاکے دم لیا ۔  کبھی صلیبی جنگوں  میں عیسائیوں کی بیگار بھگتاتے  رہے ،  کبھی سمر قند  و بخارا   کی  سیر  کو نکل گئے ۔ پھر  جو دیکھا  اسے  لکھ ڈالا  اور آج دنیا  کی  32  بڑی  زبانوں  میں دنیا کی ہر  بڑی   یونیورسٹی میں سعدی ؒ پڑھا جا رہا  ہے ۔
عادت سے مجبور  شیخ  صاحب ایک  بار حمام  کی  سیر  کو نکل  گئے ۔  وہاں  خوشبودار  مٹی  سے  ملاقات ہو گئی ۔  حیران ہو کر  مٹی سے  پوچھا:۔اے اپنی  دلآویز  خوشبو سے  مجھے مست  کر دینے  والی  تو  مشک ہے  یا  عبیر ہے ۔۔۔۔؟؟؟آخر  اس خوشبو  کا  راز کیا  ہے ۔۔۔؟؟    جب مٹی  کی ٹال  مٹول  سعدی  کے آگے نہ چلی  تو اس  نے  راز  اگل ہی  دیا ۔  بولی  میں تو  حقیر  سی  خاک  تھی ۔  مگر  مدت  تک پھولوں  کے ساتھ رہی ۔  جمالِ ہمنشیں نے  اثر دکھایا  اور  وہ  خوشبو مجھ میں بھی  رچ  بس گئی ۔  پس یہ  اس صحبت  کا اثر اور پھل  ہے  ورنہ  میں تو  صرف خاک ہوں۔

 ایسے  ہی  کئی  اور سیانوں کا  اتفاق  ہے  کہ    آدمی  اپنے دوستوں  سے   پہچانا  جاتا ہے ۔
کند  ہم  جنس باہم  جنس پرواز ۔۔۔۔ کبوتر  با کبوتر  ، باز  با باز

عنقریب  پیدا  ہونے  والے  نیم فلسفی  جوگی   کا  کہنا  ہے  کہ   دوستی    ایجاد نہیں کی جاتی  بلکہ  دوستی دریافت کی جاتی ہے ۔  جیسے نیوٹن نے کشش ِ ثقل  ایجاد نہیں  کی تھی  ۔ صرف دریافت کی تھی ۔ آواز کو دور دور تک  بغیر  کسی  تار  کے پہنچا دینا  مارکونی سے پہلے  بھی  ممکن  تھا ۔  مگر  یہ طریقہ  ڈھونڈنے  میں سب سے پہلے مارکونی کا میاب ہوا۔قدرت انسان  کے ساتھ  ٹریژر  ہنٹ والا کھیل  کھیل  رہی  ہے ۔ خزانے  چھپا  کے رکھ دئیے  اور انسان  کو ایک معین وقت دے دیا  کہ چل بھئی کاکا  اس معینہ وقت میں  جتنے خزانے ڈھونڈ سکتے ہو  ڈھونڈ لو ۔ وقت پورا ہوتے ہی  قدرت  لگامیں کھینچ  لیتی  ہے ۔اور  کاکا واپس  چلا  جاتا ہے ۔اب    جیسی کسی  کی تلاش ہے  وہ ویسا  ہی کچھ پا رہا  ہے ۔

ٹھیک  ہے  یہ  بات  سمجھ میں آتی ہے  ۔۔۔ لیکن ۔۔۔۔۔
یہ  تلاش و دریافت ۔۔۔؟؟

میں کچھ تکا  لگانے  کی کوشش کرتا ہوں ۔  مگر  میری  ناقص رائے  سے کسی ایڈیٹ  کا متفق ہونا ضروری بھی نہیں۔

ذرا  عالم ِ ارواح کا تصور  کیجیے ۔   نہ کوئی نام  نہاد  "بڑا"تھا  ، نہ  مجھ  جیسے  "چھوٹے"۔   نہ  مقام و مرتبے کا  فرق تھا   نہ ذات پات  کا جھنجھٹ ،  نہ  کوئی  مذہب ، فرقہ  آڑے تھا، نہ ہی  مرد و  عورت  کی  تفریق تھی  ۔دوستیاں کرنے  کیلئے آئیڈیل ماحول  تھا ۔ظاہر  ہے  دوست تو وہاں  بھی  ہونگے ۔لیکن ہم  میں سے شاید  کسی کو  بھی  یاد نہیں کہ روح  کی پیدائش  سے  لے کر  دنیا میں پیدا ہونے  کے  درمیانی  وقفے  میں  ہماری  دوستی  کس کس  روح سے تھی۔روح کی  تو جیب ہوتی ہے نہ پرس  کہ  وہاں  کے دوستوں  کی تصویر  ہی لے آتی اور یہاں  آ کے  ڈھونڈ  لیتی ۔اب روح کے پاس صرف ایک ہی صورت ہے کہ اُس  روح  کے سامنے آتے ہی وہ اسے پہچان لے گی ۔ لیکن  اس بات کی تصدیق کیسے ہو کہ جس پر روح کواپنا دوست ہونے کا شبہ ہے وہ واقعی وہی عالم ارواح والی دوست  ہے بھی ، یانہیں۔اس مقصد کیلئے روح اپنے کمیونیکیشن  سسٹم  کی  مدد سے سگنل نشر کرتی ہے ،  اور  سگنل  کیچ  کرنے  کی  کوشش  کرتی  ہے ۔اور جس روح سےیہ  فریکوئنسی میچ ہو جائے تو   روح اپنا بچھڑا دوست پا لیتی ہے ۔
زندگی  میں ہمیں بہت سے لوگ اچھے لگتے ہیں، اور ہم ان سے دوستی کرنا چاہتے ہیں مگر دوستی ہو نہیں پاتی ۔کبھی  دوستی  کی   تالی ایک ہاتھ سے نہیں بج پاتی  تو  کہیں دوستی کی بیل منڈھے چڑھنے سے پہلے ہی سوکھ جاتی ہے  ۔ وہ دراصل ہماری   روح  کا مغالطہ ہوتا ہے ، جو اسے محسوس ہوتا ہے  کہ شاید میر ی اس سے عالم ِ ارواح میں دوستی تھی ۔  لیکن فریکوئنسی میچ  نہ ہونے پر  روح پر واضح ہو جاتا ہے کہ یہ وہ نہیں ہے ۔ اور اسی طرح تلاش کا  یہ سلسلہ   جاری رہتا ہے ، حتیٰ کہ روح اپنا/اپنے حقیقی  دوست پا لیتی ہے ۔اکثر  ہم  کسی سے دوستی ہونے کے بعد محسوس کرتے ہیں کہ ہم اس سے پہلے بھی ایک دوسرے کو جانتے تھے ۔ یہ احساس کیا ہے؟؟؟ ایسا کیوں محسوس ہوتا ہے کہ جس سے ہمیں ملے جمعہ جمعہ آٹھ دن بھی نہیں ہوئے اسے ہم صدیوں سے جانتے تھے ۔ ؟؟؟

اب فریکوئنسی پر  آتے  ہیں۔ یہ کیسے میچ ہوتی ہے ۔؟ اور آخر  ہم کیوں مان لیں کہ فریکوئنسی کا  میچ ہونا  ہی  حقیقی دوست   ملنے   کا ثبوت ہے ۔؟ 
مثال کے  طور  پر  پنجاب  میں  آٹھ  ریڈیو اسٹیشن  میڈیم ویو  پر  نشریات  دے  رہے ہیں۔  پورے پاکستان میں پتا نہیں کتنے ریڈیو اسٹیشن  نشریات  دے رہے ہیں۔ پوری دنیا  میں کتنے ہی ریڈیو اسٹیشن  ایک ہی وقت میں اپنی نشریات فضا کے حوالے کر  رہے ہیں۔ شارٹ ویو  ، اور ایف ایم  ریڈیو  اسٹیشنز  کا تو شمار  ہی کیا ۔ بے  شک  ساری  دنیا  کے اناؤنسرز  ،  ڈی  جے  ، آر جے  بول  بول  کے اپنا گلا  خراب کر لیں،  لیکن  جس  کے پاس  ریڈیو  سیٹ ہی نہیں اس  کی جانے بلا  کہ  کون کیا  کہہ رہا  ہے ۔یعنی ریڈیو  ٹرانسمشن  سننے  کیلئے  ضروری  ہے  کہ  کسی  کے پاس  کوئی ریڈیو  سیٹ ہواور وہ آن بھی ہو۔اگر  ریڈیو  سیٹ ہے  اور وہ بج  بھی  رہا ہے  تو  وہ  صرف  اسی ریڈیو اسٹیشن کی نشریات  سنائے گا جن کی فریکوئنسی    اس  پہ  سیٹ کی گئی فریکوئنسی  سے  میچ ہوں  گی ۔
مثلاًاگر  کسی  ریڈیو  سننے  کے شوقین  نے  ریڈیو کی سوئی  میڈیم ویو  1641 کلو  ہرٹز  پر  سیٹ  کی ہوئی ہے تو اسے صرف ریڈیو پاکستان بہاولپور  کی  نشریات ہی سنائی  دیں  گی ۔لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ اس وقت دنیا میں صرف بہاولپور سے ہی ریڈیائی سگنل آ رہے ہیں۔  عین اسی وقت دنیا کے بے شمار ریڈیو اسٹیشنز  اپنی نشریات  میں مصروف ہیں، لیکن ریڈیو صرف وہی نشریات سنا رہا ہے جس کے سگنل  اس  پر  مقرر کی گئی فریکوئنسی سے میچ ہو رہے ہیں۔  اگر اسی وقت کوئی بی بی سی کی نشریات سننا چاہتا  ہے  تو اس  کیلئے لازمی ہے کہ وہ سوئی کو اس فریکوئنسی پر سیٹ کرے ۔
ٹھیک اسی  طرح روح کا  کمیونیکیشن  سسٹم  کام کرتا  ہے ۔ لیکن فرق یہ ہےکہ جب  ایک روح  اپنے سگنل نشر کرتی ہے تو ساتھ ہی ساتھ وہ سگنل وصول کرنے کی صلاحیت بھی رکھتی ہے  ۔  بالکل اسی طرح دوسری روح بھی اپنی سوئی اس فریکوئنسی  پر  سیٹ کر کے  اپنے سگنل  نشر کرتی ہے ۔ جونہی یہ فریکوئنسی  کہیں میچ ہوتی ہے تو روح کو روح کا  نشر کردہ پیغام سنائی دینے لگتا ہے  ۔ اور ہم انسانی زبان  میں اسے احسا س کا نام دیتے ہیں۔  روح کو احساس ہوتا ہے  کہ  یہی وہ عالم ِ ارواح  والی دوست روح ہے ۔اور یوں اس عالم  کی دوستی  اس  عالم  میں تجدید  پاتی ہے ۔اور اربوں  انسانوں  سے  بھری دنیا  میں ایک خاص شخصیت  سے مل کر  اچانک ہمیں لگتا ہے کہ ہم تو جیسے صدیوں  سے ایک دوسرے کو جانتے تھے۔

دنیا  کی 54فیصد  زنانہ  آبادی  میں سے  دو  خواتین کا ذکر ہے 
خدا کا کرنا ایسا  ہوا کہ  دونوں کی فریکوئنسی میچ ہو گئی ۔  اور وہ دیکھتے ہی دیکھتے سہیلیاں  بن گئیں۔لیکن  دونوں  ہی  حیران تھیں کہ اے جوگی  !  یہ ماجرا کیا  ہے ؟؟
جوگی بے چارا لال  بجھکڑ تھا ۔پہلے تو وہ  خود چکرا گیا کہ  ایک  رہتی ہے آئر لینڈ میں، ایک رہتی ہے  کراچی میں۔۔۔
سمجھ  سے باہر  ہے 
مگر  اللہ استاد محترم کے درجات مزید  بلند فرمائے ۔   ہیچمداں کو سمجھا  گئے  کہ یہ سارا چکر روحوں کا ہے ۔  جیسے  تم  وہاں عالمِ  ارواح  میں میری  خدمت  کے بہانے  میری  جان نہیں چھوڑتے تھے ۔ اور یہاں عالم ِ  اجسام  میں  آ کر  بھی  تم  نے بجائے  کسی ہم عصر  شاعر  یا زیادہ  سے  زیادہ  ماضی قریب  کے  کسی مرحوم  شاعر  کی  بجائے  ماضی  بعید  سے  مجھے  ڈھونڈ نکالا  اور  اب  خود  بھی  چھوٹے غالب  بنے پھرتے ہو۔  ویسے  ہی  یہ  نیک بخت حسینائیں اچانک  یہاں  دوست  نہیں بنیں۔ بلکہ یہ  تو   عالمِ  ارواح میں   بھی گہری  سہیلیاں تھیں اور  ککلی  کھیلا کرتی  تھیں۔
ابنِ  بطوطہ  کے تعاقب  میں تو  ابنِ  انشا گئےتھے ، جوگی  شیخ سعدی ؒ  کے  تعاقب  میں چل پڑا ۔  ایک آثارِ قدیمہ آئر لینڈ  میں  مل ہی   گئیں ۔لان  میں  بیٹھی مزے  سے   "میرا  لونگ  گواچا۔"گنگنا رہی تھیں۔  جوگی  نے  سوچا  دنیا  کی  قدیم  ترین  خاتون  کا  آٹو گراف  کے بہانے  انٹرویو  لیا  جائے ۔لیکن  سر منڈاتے  ہی اولے  پڑنے  لگے ۔ جونہی فدویانہ  انداز  میں ادب  سے سلام  کیا :۔  "سلام بڑی  بی ۔"خاتون  چراغ پا، سیخ پا     بلکہ بقول غالب "آتش زیرِ پا" ہو گئیں، اور  پنجے  جھاڑ  کے  لگیں کوسنے ۔۔۔ وے  تیرا  ستیاناس  ۔۔۔۔  وے تیرا انناس ۔۔۔تیرے  دیدوں میں خاک ۔۔۔۔  ذرا  سے  بال  کیا ڈائی کر لیے ،  کلموہے  نے  مجھے  دن دیہاڑے  بڑی بی  کہہ دیا ۔  ہائے ہائے  تیرا  کلیجہ بھی نہ کانپا مجھے  بڑی  بی کہتے ۔۔۔؟؟  ناس پیٹے تو کسی  ٹرالے  کے نیچے  کیوں نہ  آ گیا مجھے بڑی  بی کہنے  سے پہلے  ۔۔۔۔  بڑی  بی  کہتے  ہوئے تیری  زبان  کو  غوطہ  بھی  نہ آیا ۔  تو  گونگا  کیوں  نہ ہو  گیا ۔اور  بہت ساوغیرہ وغیرہ  ۔۔۔۔۔  
جوگی  نے سوچا خاتون  ، خاتون ہی ہوتی  ہے چاہے  آئر لینڈ کی ہو  یا  پاکستان  کی ۔  زبان  بے شک  کوئی  بھی  ہو ، مگر  کوسنے  کا انداز عالمگیر  ہے ۔ اس  قدر  کوس لینے   کے بعد  بھی خاتون کی تسلی  نہ ہوئی   تو  موبائل  نکالا  911 پر  کال  کرکے  پولیس  بلا  لی ۔ جوگی  بے چارا  تو  یہ  بھی   نہ کہہ  سکا :۔
جمع  کرتی  ہو کیوں  خبیثوں کو
اک تماشا  ہوا  ، گلہ  نہ ہوا
آئر  لینڈ  کی  پولیس  تھی  سو  موقع  پر  ہی  پہنچ  گئی ،جوگی  سے  بڑی بی کہنے کی وجہ  طلب  کی گئی ۔  جوگی  بے چارے نے ایک  پھسپھسی  دلیل  سے  کام  چلانے  کی کوشش  کی   :۔ " عمر  کا  حساب  حیاتی  سے  کیا جاتا ہے ۔  اور حیاتی  تو عالم  ِ ارواح سے شروع ہو چکی تھی ۔ اُس حساب سے اور  کچھ  احتراماً مجھ  شامت  کے مارے نے بڑی  بی کہہ  دیا ۔ مگر  میری تو کیا حضرت آدم علیہ  السلام تک میری تمام پشتوں کی بھی توبہ  جو آئندہ  کسی  خاتون  کو بڑی  بی کہوں  ۔حالیہ غلطی  کیلئے   معافی  نامہ  پیش ہے ۔"
خاتون  کچھ پسیج  گئیں ، اوردیدے نچا کے بولیں:۔"اٹس اوکے انکل، آپ  کو معافی  دی جاتی  ہے ، کیونکہ اس  حساب  سے  تو  آپ میرے ہم عمر  ہیں ۔"
 معافی  تلافی  کے بعد  جب  حالات  معمول پہ  آئے تو جوگی  نے موقع  دیکھ کر  پوچھ  لیا :۔"یہ آب و گِل کہاں سے آئے ہیں؟؟"
 خاتون سنی ان سنی  کر کے    پونیاں  ہلاہلا  کر  خود  کو بچی ثابت کرنے  کی  کوشش میں لگی رہیں،  جوگی نے سوال  دہرایا  تو معصومیت سے آنکھیں پٹپٹائیں اور  راز دارانہ  انداز میں بولیں:۔" کان ادھر  لاؤ ۔"  جوگی  نے  کان ان  کے منہ کے  قریب کیا  تو  زور  سے کن  کُررررررررررررر کردیا۔جوگی  نے زچ ہو کر  ہاتھ  جوڑ دئیے  اور کہا:۔"آپ  کے چلبلے  پن سے تو شیطان  ہمیشہ سے پناہ  مانگتا تھا آج  سے میں  بھی  پناہ  مانگتا ہوں ۔ پلیز سوال کا جواب تو دے   دیں۔"آخر  کارکافی مکھن  لگوانے  کے بعد  انہوں  نے  انکشاف  کیا   :۔" جمالِ ہمنشیں بر من   اثر کرد"۔
 رشک کے مارےجوگی  سے بیٹھا  نہ گیا ، فوراً  سے پیشتر گوگل  پر     "ہمنشیں " سرچ کیا ۔  گوگل ارتھ  نے  کراچی کا پتا دیااور جوگی  جا پہنچا ۔دودھ  کے جلے  جوگی  نے ادب آداب کی  چھاچھ  پھونکنے  کی بجائے     سوال کیاکہ:۔   "یہ آب و گِل کہاں سے آئے ہیں؟؟" جواب ملا :۔" جمالِ ہمنشیں   بر من اثر کرد"۔
دو  خواتین  ایک ہی نکتے پر  ایک دوسرے  سے متفق  ۔۔۔۔مجھے تو چکر  آرہے ہیں۔۔۔۔ 
   بہتری اب  اسی میں ہے کہ  کان لپیٹ  کے نکل  چلیں۔
جاتے جاتے  اس  خوبصورت اور بے مثال  دوستی کیلئے اللہ سے دعا ہے کہ اس  پر  خلوص دوستی  کو کسی بد نظرے  کی نظر نہ لگے ۔۔۔


فرہنگ برائے  خاتون آف  آئر لینڈ

فریکوئنسی کو سادہ  الفاظ میں ایک ریڈیائی  زبان  سمجھ لیں۔
یہ آب و  گل۔۔۔:۔  یہ غالب ؔ کا مصرعہ ہے ۔  یہاں اس کا مطلب ہوگا کہ آپ کی اتنی خوبیوں کا اور بیوٹی کا راز کیا ہے ۔؟
جمال ِ ہمنشیں ۔۔۔۔:۔یہ  شیخ سعدی ؒ کا مصرعہ ہے ۔ مطلب کہ:۔  دوست  کی دوستی کا اثر ہے یا  میری ہر  خوبی کا کریڈٹ میری دوست کو جاتا ہے۔ 

Saturday, 7 December 2013

ذکر اس پری وش کا۔۔۔۔۔۔۔

23 آرا

میری  ایک  عادت پر  کچھ  لوگ حقارت  سے ہنستے ہیں اور کچھ لوگ بے تحاشا چڑتے ہیں۔ مگر  عرفی بھلا  غوغائے  رقیباں  سے کیوں گھبرائے ۔ جبکہ  بہت سارے    خیر اندیش     میری  اسی عادت  سے باغ باغ بھی ہوتے ہیں۔ اس بارے میں  مورخین  البتہ   خاموش ہیں کہ فدوی  کی یہ عادت کب سے ہے ۔
 اتنی پرانی  عادت   سے  مجبور،   ظاہر  ہے آج  بھی  میں اپنی بات  غالب سے ہی شروع  کروں گا۔
مرزا غالب ؒ صرف ایک عظیم  شاعر  ہی  نہیں  ، بلکہ ایک  عظیم انسان  بھی ہیں ۔جو غالب کی حقیقت سے واقف ہیں انہیں اس بات کا  کوئی  ثبوت نہیں چاہیے  اور جو  ابھی تک غالب کے "غین" میں غوطے کھا رہے ہیں ،  انہیں سمجھانے  میں ضائع  کرنے  کیلئے نہ وقت  ہے نہ الفاظ۔ ۔۔۔
اس عظیم  انسان  کی  بے شمار  ،بے شمار،  ان گنت،  ان گنت  خوبیوں  میں سے ایک  یہ بھی ہے  کہ  خوشامد پسند  نہ  تھے ، جھوٹی  تعریف  کبھی  منہ سے نہ نکلی  ، اور  جو  حقدار  پایا  تو  ایسی  تعریف  کی  کہ ثریا  کو  بھی   رشک آیا ۔ بہت سے  پروفیسر  جن  کی پروفیسری پر  مجھے اب شک سا رہنے لگا ہے  ، نادان  دوست کی  طرح غالب ؒ ؔ کے  قصیدوں کا جواز  پاپی پیٹ بتاتے ہیں مگر  غالب ؒ ؔ کے مزاج داں  کہتے ہیں کہ یہ  بہتان ہے ۔کیونکہ  غالب ؒ ؔ جب   بے سروسامانی  کے عالم  میں،  لکھنؤ آنے  کا  باعث  نہ کھلنے  کے باوجود    لکھنؤ پہنچے،  اور  کلکتہ  کا  سفر  ، درپیش  تھا۔والیٔ اودھ  کے دربار  تک رسائی اور  پھر صلے میں ملنے  والی  خطیر  رقم  اور غالب ؒ  ؔ کے درمیان صرف ایک قصیدہ  حائل تھا ۔ یہ بات ذہن  میں رکھیے کہ  غالب ؒ ؔ کلکتے  کے سیر سپاٹے  کو نہیں جا رہے تھےبلکہ  اپنی پنشن کا  مقدمہ  لڑنے جا رہے  تھے  ۔ اور نہ ہی کلکتہ   دس بیس کوس  کی  دوری پر تھا ۔ عدالتی نظام  اور مقدموں  کی پیروی اس  زمانے  میں بھی  ایسے ہی تھے جیسے  کہ فی زمانہ  ہیں۔  مقدمہ  کی پیروی پر  اٹھنے  والے  اخراجات  اور  پھر  فیصلہ ہونے تک  کلکتہ  میں رہائش  کے اخراجات   مگر مچھ کی طرح  منہ کھولے سامنے تھے ۔ مگر قربان جائیے  غالبؔ کی اس غالبانہ  ادا  پر  ، کہ  اپنی غالبیت  کو کسی "نظریہ  ضرورت "کے چرنوں  میں  قربان  نہیں کیا ۔  غالبؔ جیسے شاعر کیلئے وزیر اعظم  کی  شان میں ایک قصیدہ  لکھنا کیا  مشکل تھا ۔لیکن تاریخ  گواہ ہے  کہ  غالبؔ نے اشد ضرورت کو   پسِ پشت  ڈال کرخیر  خواہوں  کے  مسلسل  اصرار پرفرمایا:۔ " کیا میں اس خانساماں  کا قصیدہ  لکھوں  جو انگریزوں کی  سفارش سے  وزیر  بن گیا ۔؟"اب  بتاؤ   بھلا !!!کوئی  کیسے  مان لیتا ہے  کہ   وہ  شخص پیٹ  کی مجبوری  سے  قصیدے لکھتا تھا ۔۔۔؟؟؟
ذکاء اللہ دہلوی  ، محمد حسین آزاد   وغیرہ نے  خوب  زور  لگایا کہ  غالب ؔکو خود غرض ، حاسد  ،  مصلحت پرست   ثابت کر سکیں،  جو اپنے ہم عصروں سے بغض و حسد رکھتا ہے ۔ مگر  جھوٹ کے پاؤں نہیں ہوتے ۔ بھلا سورج  کو  ہمیشہ کیلئے بھی  گرہن لگ سکتا ہے  ۔۔؟؟؟کاش  وہ      یہ  کہنے سے  پہلے سر سید  احمد  خان  اور  غالب ؔ کے  خاندانی  روابط  اور  ان سب  کے  باوجود  غالبؔ کی  وہ  تقریظ  جو  آئینِ اکبری  کیلئے  لکھی  گئی  پر  نظر  ڈالتے تو  ایسی  بے تکی  نہ ہانکتے ۔  خود  تو  اپنی  جانبداری  اور کینہ توزی  کے ہاتھوں یرغمال  تھے  ہی اردو  پڑھنے  والوں کو  بھی گمراہ  کرنے  کی  کوشش  کر گئے۔  یاد رہے کہ  مرزا  قتیل ،  اور برہانِ قاطع  کے بعدغالب  ؔ کی استاد  ذوق ؔ سے  چشمک  ہی  زیادہ  مشہور  ہے ۔ مگر  جب  اسی  ذوقؔ کا شعر  سنتے  ہیں:۔
اب تو گھبرا  کے کہتے ہیں کہ مر جائیں گے 
مر کے  بھی چین نہ پایا تو کدھر جائیں گے
تو مولانا  حالی  ؔ گواہی  دیتے ہیں کہ غالبؔ نے شاعر کا نام پوچھا  اور پھر اس شعر  کی  بہت  تعریف کی ،  اس  کے بعد بہت دیر  تک اسی پر  سر دھنتے  رہے ۔مومن خاں  مومنؔ کے شعر پر  اس  قدر  مبالغہ  آمیز داد دی  کہ یار لوگوں  نے ضرب المثل ہی بنا ڈالی ۔  داغ کا  "رخِ روشن کے آگےشمع رکھ کر وہ یہ  کہتے ہیں"والا شعر  سنا تو  چوسر کھیلنا بھول گئے ،  اور دروغ بر گردنِ حالی:۔  "اس  شعر کو بار بار پڑھتے تھے  اور  اس پہ وجد کرتے تھے" ۔

لگتا  ہے  قارئین سمجھ  گئے  ، اور  یقیناً   یہ بھی سوچ  رہے  ہوں  گے  کہ :۔
بے خودی  بے سبب نہیں غالبؔ
کچھ تو ہے  جس کی پردہ داری ہے 
جی  جناب!!یہ  تمہید  بے سبب  نہیں ہے  ۔ جس شخصیت  پر  فدوی  ابھی  لکھ  رہا ہے ،  ماشاءاللہ  ایسی  تعریفیں ان کیلئے کوئی نئی بات نہیں ہوں گی ۔ لیکن مندرجہ بالا  تمہید  سے  واضح ہو کہ  غالبؔ بڑا ہو  یا چھوٹا،دونوں کی تعریف  صرف حقدار کیلئے ہی ہوتی ہے    ۔جس  میں کسی  ریو  و ریا کا شائبہ  تک نہیں ہوتا۔

ویسے  تو  ماشاء اللہ   حاجتِ مشاطہ  نیست  روئے دلارام  را۔ لیکن آج   ہم  بھی  معجزے اپنے ہنر  کے دیکھتے  ہیں۔
ہاں تو صاحبان  و  صاحبات !!  یہ  ذکر ِ  خیر  ہے  آنسہ محترمہ مصروف النساء  کا
میری پسندیدہ ترین شخصیت ہونے کے باوجود  میرے لیے ایک پر اسرار شخصیت بھی ہیں۔  یاد  رہے کہ غالب ؔ بڑا ہو  یا چھوٹا  ،غالبؔ ہی ہوتا ہے ۔ اور  غالب ؔ کے پسندیدگان میں شمولیت  کا ویزا  خالصتاً میرٹ  پر  ایشو ہوتا ہے ۔  لیکن جب  کہ  وہ شخصیت  صنفِ  لطیف  میں سے ہو تو پھر  میرٹ مزید سخت ہو جاتا  ہے ۔  نتیجہ  غالب ؔ کے مصرعے "تھک تھک  کے ہر مقام پہ دو چار رہ گئے" والا  ہی نکلتا ہے ۔ اتنا تو سب کو معلوم ہے  کہ  تصوف  کی دنیا میں ڈھائی  قلندر مشہور  ہیں۔ اردو تنقید  میں نقاد تو بہت ہیں مگر  قلندر صرف  ڈھائی  ہیں۔  مرزا غالبؔ ، مولانا حالی ؔ ، اور  آدھا یہ  حقیر  ہیچمداں فدوی ۔(یہ  میں نہیں میری نسبت  کہہ رہی  ہے ۔)
مقصود  ڈینگیں ہانکنا  نہیں بلکہ  یہ جتانا ہے  کہ  جن  کے بارے  میں آپ  پڑھ  رہے ہیں انہوں  نے مجھے چائے پلا کر  یہ  تحریر لکھنے  پر  مجبور  نہیں کیا  بلکہ   یہ   ناقص  تحریر   ان کی شاہینی   خوبیوں ، ان  کی بلند پروازی  اور اندرون بینی کے  خراجِ  تحسین کے  ضمن میں پہلا قطرہ ہے ۔  یہ محض  سنگِ  میل ہے  منزل  کا  نشاں  نہیں  ۔   انشاءاللہ کبھی نہ کبھی  مجھ سے ہزار وں گنازیادہ  اچھا  لکھنے والے ان  کی شخصیت اور  تحریر کی  خوبصورتیوں  کا ہر پہلو سے احاطہ کریں گے ۔  تب تک کیلئے صرف  اسی  "گریبی" پر گزارہ  کیجیے  ۔
گو نہ  سمجھوں  اس کی باتیں ، گو  نہ  پاؤں اس  کا بھید
پر یہ کیا کم ہے  کہ ،مجھ سے وہ  پری پیکر کھلا
  
خواتین لکھاریوں کی  ایک  نہ ختم  ہونے  والی فہرست  ہے ۔ لیکن   جب ان میں سے پڑھنے لائق لکھاریوں  کی چھانٹی  کی جائے   تو کوفہ  میں حضرت مسلم  بن عقیل  رضی  اللہ  تعالیٰ عنہ  والا واقعہ   ذہن  میں آتا ہے  جب عصر کے وقت لاکھوں  کا  مجمع  اور مغرب  کی نماز  کا سلام پھرنے تک  محض چند ہزار ،  اور عشا ء  کے سلام  کے بعد تو  ایک  بھی نہیں تھا۔ عوام  کی پسند،  نا پسند کو میں کسوٹی  نہیں کہتا ۔ عوام  تو   عوام  ہے ، عاطف اسلم اور یویو ہنی سنگھ کو بھی گلوکار سمجھتی ہے ۔ عوام تو  آج بھی  سلطان  راہی  کی فلمیں بڑے  شوق  سے  دیکھتی ہے ۔  عوام ماضی  میں بھی اسی  وطیرے  کی  عامل تھی ،جب عوام کا پسندیدہ شاعر  ذوقؔ  ہوتا تھا۔ فرصت عباس  شاہ  اور لسی  شاہ  کے الم غلم  کو شاعری ماننے  والوں سے معذرت  کے ساتھ  ، میں ان سے  مخاطب ہوں  جو  عمر  خیام ، سعدیؒ ، اور غالبؔ کے اشعار پر ٹُن ہو تے  ہیں۔ماہا ملک، عمیرہ  احمد  وغیرہ  کی  بناوٹی  اور  بھرتی  کے الفاظ سے سجی فضول  تحاریر  پہ لوٹ پوٹ ہونے والے  مجھے  معاف رکھیں۔ مجھے  تو عصمت چغتائی اور  بانو قدسیہ  جیسی عظیم  لکھاری  خواتین  کو  پڑھنےاور  پسندیدہ  کہنے   کی ہمت رکھنے والے  جی  دار سورماؤں  کی تلاش ہے  تاکہ  میں  ان سے  کرسٹوفرکولمبس   نہ سہی  کم از کم  واسکو  ڈے  گاما   کا  خطاب  تو پا سکوں۔

موصوفہ   سے  واقفیت  توبہت  پہلے  (یعنی  ایک سال)سے تھی ، مگر فدوی  کی   فطری   اینٹی  گریویٹی  کی  وجہ  سے  موصوفات  سے ہمیشہ   دور ی  بنی رہتی  ہے ۔البتہ  جب چند  مشترکہ   پنکھوں (فین ز) کی  زبانی پتا  چلا  کہ  چھوٹے   غالب ؔ کے علاوہ  ہیں اور  بھی  دنیا بھی  سخنور  بہت  اچھے ، جن کا  نہ صرف  انداز ِبیاں  اور  ہے  بلکہ  اس  سے بھی   ہٹ  کے چلتے  ہیں جو راستہ  عام ہو جائے ۔شیخ  سعدی ؒ کا سومناتھ  کا سفر  آپ  کو  یاد ہو تو اب  تک سمجھ جانا چاہیے  کہ فدوی نے  بھی   "دریچہ  ہائے  خیال"  تک  کا سفر  کر  کے  اس  سومناتھ  کی  یاترا کی ۔ اور  غالب ؔ کی  زبانی  اقرا ر  بھی کرناپڑا     کہ:۔ 
جب تک کہ نہ دیکھا تھا قدِیار کا عالم 
میں معتقدِ فتنۂ  محشر نہ ہوا تھا 
"ہمارا  ٹی وی " کے عنوان سے ان کی  ایک تحریر  پڑھی  تو   فتنۂ محشر  کے ساتھ  ساتھ میں  محترمہ  کی اندرون بینی  اور  (نہایت  )لطیف   مزاح  نگاری کا  بھی معتقد ہوگیا ۔   اس قسم  کے موضوع  پر  اگر  عمیرہ آنٹی    نے لکھا ہوتا  تو پتا نہیں کون  کونسی ڈکشنریاں سامنے  رکھ کر وہ ، وہ  نکتے جھاڑے ہوتے (بقول ِ  غالب "قافیہ بندی  " کی ہوتی)کہ اگر  امامِ اعظم  ابو حنیفہ رحمتہ  اللہ علیہ   بھی پڑھتے تو خوب ہنستے    کہ  اندھی کو اندھیرے میں کتنے دور کی  سوجھ رہی ہے ۔لیکن  جب  ان  موصوفہ کے قلم نے  گلکاریاں  کیں تو استادِمحترم  جنابِ غالب کلاں نے  بھی عالمِ  بالا  سے   یہ کہہ کر داد  دی :۔  اس سادگی  پہ کون نہ مر جائے  اے خدا۔۔۔!!!
بھرتی  کے الفاظ ،  مصنوعی  جاہ  و جلال  اور  ریاکارانہ   خشوع  و خضوع سے عاری  اس  تحریر  کی  سادگی   پریقیناً   ہر  صاحبِ نظر  داد دئیے بنا نہیں رہ سکے گا۔   اور سادگی بھی ایسی  کہ   جس  کی مثال صرف، مومن  کا :۔ 
تم  میرےپاس ہوتے ہو گویا 
جب کوئی دوسرا نہیں ہوتا
غالب کا  فرمودہ:۔
آگے  آتی تھی حالِ دل پہ  ہنسی 
اب کسی بات  پر  نہیں  آتی 
۔۔۔۔۔
ہم کو فریاد کرنی  آتی ہے 
آپ سنتے  نہیں تو کیا  کیجیے
۔۔۔۔۔
 ہے خبر  گرم ان کے  آنے  کی 
آج ہی  گھر  میں بوریا  نہ ہوا
اور سعدی ؒ کی  ساری گلستان کے ذریعے  ہی ممکن  ہے۔
(احتمالِ طوالت کے پیشِ  نظر  صرف  چند اشعار  پر اکتفا کیا ہے  ،  اس کا ہر گز  یہ مطلب  نہیں  کہ  دیوانِ غالبؔ میں سادگی کا شاہکار  محض یہی  چند شعر ہیں)  

جیسے  بازاری  ادائیں ہوتی ہیں ، ویسے ہی  بازاری قسم  کے  الفاظ  و تراکیب  بھی ہوتی ہیں۔  جنہیں  احساسِ کمتری  کے مارے ہوئے  اپنی  تحریروں اور تقریروں  پر  غازے  اور  پاؤڈر  کی طرح  پوت کر  اس کی جھریاں اور   بوسیدہ پن  چھپانے  کی   کامیاب  کوشش کرتے ہیں ،  اور پھرخود کو   شاعری کا پاٹے  خاں  ، اور اردو  ادب  کا  پھنےخاں سمجھنے کے  خبط  میں مبتلا  رہتے ہیں ۔اورجس طرح   سنی دیول    جیسے  لوگ  اوور  ایکٹنگ  کر  کے اپنے آپ کو اداکار سمجھنے  لگ جاتے ہیں۔    لیکن مولانا  حالی  ہوں  یا  یہ  ہیچمداں فدوی، اس معاملے  میں  علامہ  اقبال  سے سو  فیصد متفق ہیں :۔
کافر  ہے تو  کرتا ہے شمشیر  پہ  بھروسا
مومن ہے  تو بے تیغ لڑتا  ہے سپاہی
علامہ اقبال کا  شعر  تو آپ  کے سامنے  ہے ۔ لیجیے  اب ذرا علامہ  اقبال  کی پیدائش  سے  آٹھ  سال پہلے  دنیا کو خیر باد  کہہ جانے  والے  غالبؔ کا شعر پڑھیے ، اور "اندازِ بیاں  اور" کی لطافت پہ سر دھن دھن  کر  مزے لیجیئے۔۔۔۔
اس سادگی  پہ کون نہ مر جائے  اے  خدا!!
لڑتے  ہیں اور  ہاتھ  میں تلوار  بھی نہیں
سبحان  اللہ ۔۔۔۔ ماشاء اللہ ۔۔۔۔۔  کس قدر خوش نصیب ہیں محترمہ  ، کہ  دو عظیم  مفکر  ، دو عظیم انسان اس  نکتے پر متفق ہیں   :۔ 
اس سادگی  پہ  کون نہ  مر جائے  اے خدا
مومن  ایسی   کہ بے  تیغ لڑتی ہے کیانی

اب ذکر ہو جائے محترمہ  کی لطیف ترین  حسِ         مزاح  کا ، جو  مجھے   حیوانِ ظریف  کے  بعد  کرنل  محمد خان صاحب ، عصمت  چغتائی اور  ان  کے بعد  موصوفہ  میں نظر  آئی ۔ آپ  نے  غور کیا  ہوگا کہ  میرے پسندیدہ  ترین پطرس  بخاری  اس  فہرست  میں شامل  نہیں ، اور(بقول کسے) غضب خدا  کا میں نے عصمت  چغتائی  کو  بھی مزاح نگاروں  میں شامل  کر دیا ۔ الحمد اللہ  میرا ذہنی  توازن  عین یہ سطور  رقم  ہوتے  وقت  تو بالکل  ٹھیک  ہے  البتہ معترض  حضرات   کو خبر ہونی  چاہیے  کہ  ذکر صرف  مزاح  کا  نہیں بلکہ   لطیف  ترین مزاح  کا  ہو رہا ہے ۔  کسی سیانے کا کہنا  ہے  کہ  " ہر  سچی  بات  ایک  بہترین لطیفہ  ہوتی ہے" اور جب وہ سچ  انتہائی  سادگی سے بولا جائے تو  غالبؔ کلاں اور  غالبؔ خورداسے  "لطیف مزاح" کہتے ہیں۔  جس سے  لطف اندوز ہونے  کیلئےلازم  ہے  کہ    قاری  میں حسِ جمال  اور  حسِ مزاح کی مناسب   مقدار   ضرور پائی جاتی ہو ۔
"ہمارا  ٹی وی "کا وہ منظر یاد کریں جب  مہمانوں نے کچن  میں  آ کر خاتونِ خانہ  کو  "سٹار  پُلس" کے عنقا ہونے  کی ایف  آئی آر  درج کروائی ۔ اور  بھابھی ، امی  وغیرہ نے اس بات پہ بے اختیار  موصوفہ  کی طرف دیکھاتھا۔  کم از کم مجھے تو بہت  ہنسی  آئی، اور جس کو نہیں آئی  وہ بے شک بھانڈ میراثیوں  سے  سجا  "خبر  ناک" دیکھیں  اور   آفتاب اقبال  کی طرح  کندھے  ہلا ہلا کر  دانت نکالتے رہیں۔
 ساری  تحریر پہ  تبصرہ  اور تجزیہ  کر نے  کا  میں نے ٹھیکہ نہیں لے رکھا۔۔۔۔۔  آپ  خود  بھی  بسم اللہ  کیجیے۔۔۔۔۔

ان کی ورچوئل  ریئلٹی  یوں تو ہر  تحریر میں"جھلک  دکھلا جا "تی   ہے  مگر  اپنی  تمام تر حشر  سامانیوں  سمیت اس  تحریر میں جلوہ  فگن  ہے جس  میں  محترمہ   جوتوں  کی دکان  پر  بجائے  جوتا بینی  کے اندرون بینی  میں مصروف ملتی ہیں۔ کچھ لوگ تو صرف اسی  بات پر  دریائے  حیرت میں ڈوب گئے کہ  اس  قدر  انہونیاں آج کے زمانے  میں بھی  ہوسکتی ہیں کیا۔  ۔۔۔ ایک سولہ  آنے خاتون  (خاتون  صرف احتراماً لکھا  گیا ہے ، پڑھا دوشیزہ جائے) شاپنگ سینٹر پر   شاپنگ  میں  دلچسپی  لینے کی بجائے  اپنے  ورچوئل ریئلٹی ڈی ٹیکٹر   کو بروئے کار  لا کر  اندر  کی  خبریں لائے ۔۔۔۔ یا حیرت ۔۔۔۔۔!!!
 پس جوگی  کی طرح  سب  کوماننا ہی پڑے  گا کہ عظیم لوگ   مخصوص  جگہ  ، مخصوص  وقت ، مخصوص حالات  ، مخصوص   آلات ، مخصوص خیالات وغیرہ  کے محتاج نہیں ہوتے ۔  البیرونی  نے پنڈ دادنخاں کے  ٹیلے  پر  بیٹھ کر  زمین کا محیط  اور وزن تک ناپ  ڈالا تھا ، اور "الکیانی "نے  شاپنگ سینٹر میں ہی بنا کسی رصد گاہ  اور کسی خورد بین  کی مدد لیے،    وہ کچھ دیکھ  اور  سن لیا کہ داد  نہ دینا تعصب  اور   سراسرظلم  ہے ۔
ادب کے  خود ساختہ  مامے  چاچے  یقیناً  اعتراض  کیے  بغیر  نہ  رہ  سکیں گے ، اور ممکن ہے اسےایک عام سی  شاپنگ  روداد قرار دے  کر    ادبی  تحریر  ماننے  سے بھی  انکار  کر دیں۔  تو  پھر فدوی  گستاخی  کی معافی چاہے بغیر  غالبؔ کے  الفاظ  دہرائے گا کہ :۔ "بس  چپ رہو  ، ہمارے  بھی منہ  میں زبان ہے۔" اس گمنام پردیسی  دوریش (شیخ  سعدیؒ) نے قاضی ِشہر  اور مجلس ِعلما  ء  سے جو کہا  تھا  وہی میں اس  تحریر  پر  چیں  بجبیں ہونے والے ہر  "مامے"سے  کہوں  گا۔

خان بہادر مرزا  غالبؔ  نہایت  سخت  نقاد تھے ،   اس بات کو نہایت  ناپسند  فرماتے تھے  کہ  ہر کس و ناکس  شاعری  شروع کر دیتا ہے ۔   مگر  جب   یہی مرزا غالب  پہلی بار مولانا حالی  ؔ کا  کلام سنتے ہیں تو فرمایا :۔"میں کسی کو  فکرِ شعر  کی صلاح نہیں دیا کرتا ۔ لیکن   تمہاری   نسبت  میرا  یہ خیال ہے  کہ اگر تم  شعر   نہ کہو گے تو  اپنی طبیعت  پر سخت  ظلم  کرو گے ۔"

 چھوٹا  غالب ؔ ہونے کے ناطے اب یہی بات میں محترمہ  فرحت  کیانی  صاحبہ  سے  کہوں گا کہ   اپنی ترجیحات  پر  نظر  ثانی کریں۔  دیگر مصروفیات  کو آپ کے  مصروف   ہونے یا نہ  ہونے  سے  کوئی فرق نہیں پڑتا  اور  نہ ہی  پڑے گا ۔ مگر  آپ  کے مصروف  رہنے سے اردو ادب اور  اہلِ اردو  کو بہت فرق پڑ رہا ہے۔ اگر  آپ  نہیں لکھیں گی  تو نہ صرف اپنے  آپ پر  ظلم کریں  گی  بلکہ  اردو اور  اہلِ اردو سے  بھی زیادتی ہوگی ۔اگر قائد  اعظم ؒ بھی صرف  وکالت   ہی کرتے  رہتے تو  پاکستان 1947  ءتو کیا  3047 ء تک  بھی  نہیں بن سکتا تھا ۔  حالی  ؔ اگر  بال  بچوں کی  فکر   میں لگ  گئے ہوتے  تو اردو کو "مقدمہ  شعر و شاعری" کون دیتا۔۔۔؟؟اگر علامہ  اقبال   جرمنی میں بار ایٹ  لا  اور  پی  ایچ ڈی  پر  اٹھنے والے  خرچ  کا  حساب  کتاب  پورا کرنے  کی سوچتے تو "بالِ جبریل " لکھنے  کی بھلا کس کو فرصت تھی ۔۔۔؟؟؟
مگر  ان سب نے ایسا نہیں کیا ۔۔۔۔ 
سینکڑوں روپے فی گھنٹہ کے حساب سے فیس لینے  والا کامیاب  ترین وکیل  ، وکالت پر  سیاست  کو ترجیح  دیتا ہے  اور بابا  جی  کی  درویشی  سبحان اللہ،  گورنر  جنرل  آف  پاکستان  ڈھائی سو روپے  فی گھنٹہ  پر  ایک روپیہ ماہانہ کو ترجیح دیتا ہے ۔۔۔ ۔
مائیں ہر زمانے  کی اور ہر کسی  کی ایک  جیسی  ہی  ہوتی ہیں۔  ابھی  بیٹے نے چلنا شروع  کیا  اور  ماں  بہو  کے خواب دیکھنے لگی۔مولانا  حالیؔ کی والدہ نے بیٹےکے  سر  پر    سہرا سجا دیا  مگر  حالیؔ نے بیوی  پر دلی اور غالبؔ کی شاگردی  کو ترجیح دی ۔  وہ تارک الدنیا نہ تھے  بس اپنی  صلاحیتوں کو دنیا داری   کی  بھینٹ  نہیں چڑھایا ۔
 کیا شیخ نور  محمد صاحب نے بیٹےکو محض اس لیے  جرمنی  بھیجا تھا  کہ  وہاں جا کر  وہ  ویمر  گارڈن  میں گوئٹےکی  پائنتی  بیٹھ جائے ۔   ؟؟؟پھر  اگر  علامہ اقبال بھی واپسی  پر   اپنا خرچہ  پورا کرنے  میں لگ جاتے   تو سوچ  لیجیے  کہ  ظلم کس پر  ہوتا۔۔۔۔
اللہ سلامت رکھے  ان  اندر جھانک  لینے والی آنکھوں  کو ۔ ایسا  خاص  الخاص عطیہ  خدا  ہر کسی  کو نہیں دیتا ۔ایسی نعمت کو آپ  ان مصروفیات کے  غبار  میں گم کر دیں جو آپ  کے بغیر  بھی  بخوبی  چل سکتی ہیں تو یقیناً یہ کفرانِ نعمت ہوگا۔(بحوالہ  :۔  اقوالِ زریں مہ  جبین کے)۔

آپ  کے بہت  سے  پنکھے  (فین ز ) ہوں گے ۔ مگر  میں تو  آپ  کا پنکھا نہیں بلکہ  ڈھائی  ٹن کا اے سی ہوں  ۔دربارِ  غالبیہ  کا خاک نشین  ہونے کے ناطے  میں  آپ کو "چھوٹی  بانو  قدسیہ" کا  خطاب دیتا  ہوں۔اور  سعدی  ؒ کی زبانی عرض کرتا ہوں
دلیر  آمدی  سعدیا  در سخن
چو تیغے  بدست ست  فتح بکن
(سعدی بات کہنے(سخن) میں تو دلیر واقع ہواہے ۔  جب تلوار  تیرے ہاتھ میں  ہے تو فتح کر)
   Sunday, October 13, 2013, 4:18:57 PM

Saturday, 12 October 2013

ڈبویا مجھ کو ہونے نے (قسط نوزدہم)۔

3 آرا

چھوڑی اسدؔ! نہ ہم نے  گدائی  میں دل لگی


گوشۂ عافیت کا راز فاش ہونے  کے  چند  دن  بعد  وسیم  نے طلسمی  چارپائی دریافت  کر ڈالی ۔ اس  دریافت کا شانِ نزول کچھ یوں ہے  کہ ایک دن   بندروں کی  نقل کرتے ہوئے جوگی کی ایک الٹی قلابازی  پر  وسیم کی چارپائی کا رام نام  ستیہ  ہو گیا ۔اور  اسی بہانے  سیانوں کا وہ  قول سچ ثابت ہو گیا  کہ  "جو ہوتا  ہے بہتر ہی  ہوتا ہے "۔ چارپائی کا ٹوٹنا  بھی جوگی اور وسیم  کیلئے اس وقت نویدِعافیت  ثابت  ہوا  جب  وسیم  کو  اس ٹوٹی ہوئی چارپائی کے  بدلے  ایک صحیح سالم  چارپائی  الاٹ  ہوئی ۔ جو کہ نہ صرف دیکھنے میں عمروعیار کی ہم شکل تھی بلکہ اعمال  میں عمرو عیار کی  زنبیل  کی  چارپائیانہ صورت  تھی۔ اس کا کمال یہ تھا  کہ  اس پر بندہ  لیٹتے ہی  اندر  دھنس جاتا تھا ۔  اور  اس کے بعد  اگر  اوپر  سے بیڈ شیٹ  یا کوئی  کھیس ، چادر وغیرہ بچھا دی جاتی  تو  دور بین تو کیا خورد بین  سے دیکھنے پر  بھی کسی  کو  معلوم نہ ہو سکتا تھا  کہ  چادر  کے نیچے کوئی آلسی  آرام فرما  بھی ہے ۔اس  نعمتِ  غیر مترقبہ  کو  جوگی اور وسیم نے  تائیدِ غیبی  قرار  دے کر  بغلیں بجائیں اور  خداکا شکر ادا کیا۔یوں  نیند پوری کرنے کا مسئلہ  جزوی طور پر حل ہو گیا ۔طریقہ  واردات  یہ تھا  کہ  وسیم اور جوگی میں سے کوئی  ایک  اپنی باری پر خوابِ  خر گوش کے  مزے  لوٹتا  اور دوسرا  اس  کے اوپر  کھیس اور چادر بچھا کر   بھائی  چارہ نبھاتا۔وسیم  کی طرف  سے اس حیرت انگیز   چارپائی  کو  طلسمی  چارپائی  کا  خطاب عطا  کیاگیا۔

قضا سے  شکوہ ہمیں کس قدر ہے ، کیا کہیے


چند  اصلی  سیانوں کا قول ہے  کہ خوشی  ہو یا غم  دونوں  ہمیشہ  نہیں رہتے ۔  پس وسیم اور جوگی  کی  یہ  بے ضرر  سی خوشی  بھی آخر   ایکسپائر  ہو گئی ۔ بے  خودی  کی طرح یہ ایکسپائری  بھی  بے سبب  نہ تھی  غالب ؔ۔ کیونکہ  واقعی پردہ داری  میں  کچھ رنگے ہاتھوں  پکڑا گیا ۔ خلافِ  معمول  وقوعے کی رات  وسیم  کو عشاء  کی  اذان  سے پہلے  ہی نیند آگئی ۔ نماز کیلئے جاتے وقت  جوگی  نے  یارانہ  نبھایا اور وسیم کے اوپر  کھیس بچھونا برابر کر کے  چلا گیا ۔ کیونکہ طلباء  کے جانے کے بعد  بعض اوقات  بغیر کسی پیشگی اطلاع کے اکثرہوسٹل  کی  تلاشی  بھی  لی جاتی تھی کہ کوئی  آلسی   مسجد جانے  کی بجائے  بستر پہ پڑا  اینڈ  نہ رہا ہو۔ وسیم  اور جوگی کی نیند  تو ویسے بھی ضرب المثل تھی ۔ نماز سے  واپسی  کے بعد  جیسا  کہ پہلے ذکر  ہو چکا ہے  ہوسٹل  انچارج  صاحب حاضری  چیک کرتے تھے  اور اس  کے علاوہ  جناب  محترم  رشید صاحب  (رائیسِ  ادارہ) بھی  چکر  لگایا کرتے تھے ۔  اور یہ وہ دن تھے  جب  وسیم  دوسری  اور جوگی  پہلی منزل  پر  رہتے  تھے ۔
  وسیم  بدستور  نیندمیں تھا جب  نماز کے بعد  کے معمولات  حسبِ معمول  شروع ہو گئے ۔  رشید  صاحب آئے تو  وسیم کی چارپائی  سونی سونی دیکھ کر  وسیم کی غیر موجودگی کا  سبب پوچھا ۔  اس کا  ایک سکہ بند جواب تھا کہ  نچلی منزل  پر  جوگی  کے ساتھ ہوگا ۔  یہاں تک تو سب  خیر گزری  مگر ہوسٹل  انچارج صاحب  جب حاضری  چیک کرنے  آئے  تو  نجانے کس خیال  میں وسیم کی خالی چارپائی  دیکھ کر  اس پر تشریف رکھ دی  اور پھر  جلدی  سے گھبرا کر کھڑے  ہو گئے ۔  حیران تھے  کہ یا الہی یہ ماجرا کیا ہے ؟؟ ۔  قصہ کوتاہ ،   جب اوپر سے کھیس ہٹایا  گیا تو  نیچے  سے وسیم  کسی  حنوط کی ہوئی  ممی  کی  طرح  نیند  میں ڈوبا  برآمد ہوا۔ 
اس کے بعد  وہی  ہوا جو  اکثر ہوتا ہے ۔ یعنی انکوائری  ہوئی ۔۔۔  چارپائی تبدیل  ہوئی ۔۔۔ اور  وسیم  کی  جوگی سمیت  چند پیشیاں  ہوئیں(قصور  چاہے کسی  ایک کا ہوتا  مگر  پیشی  دونوں  کی ہوتی تھی) ۔۔۔۔ ان پیشیوں  میں ہمیشہ کی  طرح  خشک  قسم کے لیکچر  سننے پڑے ۔۔۔۔ جن میں زیادہ سونے کے نقصانات  ، اور  جاگنے کے فوائد کے ساتھ ساتھ  تعلیم  میں دل لگانے  کے فوائد  اور  ذہانت کا  واسطہ دے کر  کسی پوزیشن  کے حصول کا  لالچ  بھی دیا  گیا ۔  مگر جوگی  اور وسیم نے ایک دوسرے  کی جانب  دیکھا اور آنکھوں  ہی آنکھوں  میں خوب ہنسے  کہ  میر ؔ بھی کیا  سادہ ہیں۔۔۔
سادہ و پُرکار  ہیں خوباں غالبؔ
ہم سے پیمانِ وفا  باندھتے ہیں

 
اس  فتنہ  خو کے در  سے  اب اٹھتے  نہیں اسدؔ


کسی  بھی پوزیشن  اور  اس کے بدلے  میں ملنے والی واہ وائی  کی نسبت   جوگی  اور وسیم  کو  اپنی  خوابوں کی دنیا  زیادہ  پیاری  تھی ۔  جہاں  ان کی  بلاشرکت غیرے  حکومت  تھی ۔اور  اس  خوابوں  کی دنیا  تک  جانے  والا  راستہ  جس  سرنگ  سے  ہو کر  گزرتا تھا  وہ  اب  قابل ِ استعمال  نہ رہی ۔لیکن  جیسا  کہ  استادِ محترم  کا  فرمانِ عالیشان  ہے :۔
لکھتے رہے جنوں کی حکایاتِ خونچکاں
ہر چند اس  میں ہاتھ ہمارے قلم ہوئے
جوگی اور  وسیم  کی  افتادِ  طبع  نے بھی کولمبس  کی  طرح  آخر کار  ایک نیا امریکا  دریافت  کر ڈالا (حالانکہ یہ ایک تاریخی مغالطہ  ہے کہ امریکہ  کی دریافت  کولمبس  کا کارنامہ  ہے ، مگر  چونکہ محاورہ  یہی ہے اس لیے یہی لکھا گیا )۔  ضرورت ایجاد کی ماں ہے  ، پس  اس  ماں نے ایک  بچےکو  جنم دیا  ، جس کا  نام اس کے والدِ گرامی  (جوگی) اور چچا محترم (وسیم  اکرم) نے  "مورچہ" رکھا ۔ قطعہ  تاریخی  کے  ضمن  میں جوگی نے علامہ اقبال کے مشہور  شعر میں بھی ترمیم کر ڈالی 
پڑھائی  شڑھائی تو ہوتی ہی رہے  گی مگر
ضروری ہے آلسی  کیلئے کارِ مورچہ بندی
مورچہ بندی کیلئے جوگی نے اپنی چارپائی کو  پنکھے کے نیچے سے  ہٹا کر  کونے  میں دیوار کے  ساتھ رکھ دیا ۔(ویسے  بھی  اب تو  سردیوں  کی آمد  آمد تھی )اور چارپائی  کے  نیچے  فرش پر  وسیم  کے  گھر سے لایا گیا اضافی بستر  بچھایا  گیا ۔  نیچے کھیس  اور اس کے اوپر  رضائی بطور گدا  بچھائی گئی ۔ اس کے بعد  اوپر  چارپائی  کے  دو اطراف میں کھیس  اس طرح لٹکا دیا  دیا  گیا  کہ  دیکھنے میں محسوس ہوتا کہ کھیس سائز  میں بڑا ہونے کے سبب چارپائی سے نیچے کو ڈھلکا ہوا ہے ۔ لیکن در حقیقت  یہ مورچہ محل  کا  پردہ تھا ۔  چارپائی کے دو  طرف سے دیوار تھی ، اور  ایک  طرف سے مزید  چارپائیاں ۔۔۔  اور ایک  طرف چارپائیوں  کے درمیان آنے جانے کا راستہ ۔ ۔۔۔  ان دونوں  اطراف سے  کھیس لٹکا کر عوام کی نظروں سے مورچہ  غائب کر دیا  گیا ۔ اوپر چارپائی پر  ویسے  ہی  حسبِ معمول  بستر بچھا  ہوا  تھا ۔ جبکہ  نیچے  مورچہ  محل  میں  عمران سیریز ، فلمی رسالوں  کی  ورائٹی  کے  علاوہ  ایک  عدد  ریڈیو  بھی ہیڈ فون  کی  سہولت  سمیت  موجود تھا ۔اس قدر  پرسکون  اور آرام دہ ماحول  کہ  جنت  واقعی دل  کے  بہلانے کا  خیال لگنے لگی ۔اور سب بڑھ  کر  اس  کا  خفیہ  پن،  اول تو  کوئی سوچ  بھی  نہ  سکتا  کہ اس چارپائی  کے  نیچے  کیا  ہے۔ دوسرا    کوئی  نیچے  بیٹھ کر دیکھنے  کے باوجود  اندازہ  بھی  نہ کر سکتا  تھا   کہ بظاہر  اس لٹکے  کھیس  کے  پیچھے  آلسیوں  کی  جنت  بھی  آراستہ  ہو سکتی  ہے۔
ماضی  کی  غلطیوں سے سیکھا گیا  سبق  جوگی اور وسیم کو  ازبر تھا۔  اس لیے  مورچے کے راز کو انتہائی  خفیہ  رکھا  گیا ۔ حتیٰ کہ  کمرے  میں رہنے والے باقی  نو  طلباء میں سے  صرف  دو یا تین  طلبہ مورچے  کی موجودگی  سے  آگاہ تھے ۔  ان  سے  بھی  راز کو  راز  رکھنے  کا باقاعدہ  حلف لیا گیا ۔ صرف  یہی  نہیں مورچہ  بندی  کے  اگلے  ہی دن  جوگی  نے کلاس  میں طلبہ  سے  ایک تنبیہی  خطاب  کیا  جیسے  پاکستان کے  وزراءاعظم  اور مارشل لا ء والے جرنیل  قوم سے  خطاب کرتے ہیں۔ اس خطبہ  کا  خلاصہ یہ  تھا  کہ :۔اتفاق  میں برکت ہے ، اور دریا میں رہ  کر مگر مچھ سے  بیر  پالنے  والے  مگر مچھ کا تو  کچھ نہیں بگاڑ پاتے البتہ خود  نہ  بھی مریں تو  کم از کم  لولے لنگڑے ضرور ہو جاتے ہیں۔  ماشاءاللہ  ہماری  کلاس  میں پہلے بھی اتحاد  و اتفاق ہے امید  ہے یہ قائم رہے گا۔ اور  کسی  طالع  آزما  چغلخور نے  اگر    تخریب  کاری کی کوشش کی تو  انجام بہرحال اچھا نہ ہوگا۔

Sunday, 6 October 2013

ڈبویا مجھ کو ہونے نے (قسط ہجدہم)۔

4 آرا

صد جلوہ روبرو ہے جو مژگاں اٹھائیے

Wednesday, 2 October 2013

لڑکیاں بے وفا ہوتی ہیں

5 آرا
وہ اکثر مجھ سے کہتی تھی

وفا ہے ذات عورت کی

مگر جو مرد ہوتے ہیں

بہت بے درد ہوتے ہیں

کسی بھنورے کی صورت

گل کی خوشبو لوٹ لیتے ہیں

سنو!!!!

تم کو قسم میری

روایت کو توڑ دینا تم

نہ تنہا چھوڑ کے جانا

نہ ہی دل توڑ کے جانا


مگر پھر یوں ہوا


مجھے انجان رستے پر

اکیلا چھوڑ کر اس نے

میرا دل توڑ کر اس نے

محبت چھوڑ دی اس نے

وفاہے ذات عورت کی

روایت توڑ دی اس نے


Thursday, 26 September 2013

ہے خبر گرم ان کے آنے کی

11 آرا
الف۔۔۔۔
انسان  ہے  تو  خسارے میں ہے ۔۔۔
خوشی ہو یا غمی  آپے سے  باہر ہونے میں دیر نہیں  لگاتا۔۔۔
خوشی  ملے تو  کہنا  کہ  "میں نے کر دکھایا۔"
غم ملے تو "میری تو قسمت ہی خراب ہے ۔ " یا  "قدرت  کو تو مجھ سے خدا واسطے کا بیر ہے۔"
ویسے  تو بہت عقلمند  اور  بحر علم کا  شناور ہے  ۔  سائنس  تو اس کی انگلیوں  پہ دھری ہے ۔  
نیوٹن کا  حرکت کا  تیسرا قانون  "ہر عمل کا ایک رد عمل  ہوتا  ہے " تو بچے بچے  کو بھی یاد ہے ۔  مگر  آزمائش  کے وقت  نجانے  کیوں  یہ  قانون  اکثر  بھول جاتا ہے ۔
شاید اعمال نامے  پہ نظر ڈالتے دل دہلتا  ہو۔۔۔!!

الف۔۔۔۔
اللہ  ہے  تو  اپنی  شان  کے مطابق  عظمتوں  کا مالک ہے ۔
اپنی مخلوق سے اتنا  پیار کرتا ہے  کہ ستر ماؤں  کا پیار  یکجا ہوجائے تب بھی  اس کے  پیار  کے  برابر  نہیں۔
مومن  ہو یا گناہگار ۔۔۔۔  اس  کے پیار  میں کمی  نہیں آتی ۔۔۔اس کی رحمت  کے سامنے سب برابر ہیں۔
توبہ  کا دروازہ  کھول کے  بیٹھاہے ۔ کہ  کب  بندے  کو میری  یاد آ جائے ۔۔۔۔
سب کے عیب  دیکھ رہا  ہے ۔۔۔ اور  پردے  ڈالے جاتا  ہے ۔

سیانے کہتے ہیں دنیا میں  پیدا ہونے  والے  پر بچے  کی  پیدائش  دراصل  اس بات کا اعلان  ہے کہ  اللہ تعالیٰ  ابھی  انسان  سے  مایوس نہیں  ہوا۔ 
چہ خوب ۔۔۔!! حضرت انسان  نے  حد کر دی ہے اپنی  حد پار کرنے میں۔۔۔۔ اپنی اوقات  بھول  جانے میں۔۔۔۔ مگر  اللہ  کی رحمت  کے قربان جائیے  کہ انسان  سے ناامید نہیں ۔۔۔ دنیا  میں آج  کیا کچھ نہیں  ہو رہا ۔۔۔اس کے  باوجود  اللہ  کی رحمت  بدستور  اس  صبح کے  بھولے  کی  شام  سے پہلے  واپسی  کیلئے  پُر امید ہے 
۔
گویا  غالب ؔ  کے بقول :۔ "وہ اپنی خو نہ چھوڑیں  گے ہم اپنی وضع کیوں  بدلیں۔"

میں  ہر روز  کی  طرح سورج  کے  مغرب سے طلوع ہونے  کا خوف دل میں لیے صبح  جاگا  تو  پیغام ملا  کہ  اللہ  کی طرف  سے  صلح  صفائی  کا  ایک  اور موقع  ملا  ہے ۔  اللہ  کی  انسان  سے  خوش امیدی  کی  ایک  اور علامت  دنیا  میں وارد ہوئی  ہے ۔۔۔مجھ سے  سیاہ  کار  کیلئے  یہ  خبر کتنی  خوشی  کا  باعث ہوئی  اس  کا  اندازہ  کرنے  کیلئے ذرا  حضرت  یعقوب  علیہ  السلام کا  واقعہ  قرآن مجید  کی زبانی  ملاحظہ  فرمائیں ۔۔۔۔  جب انہیں حضرت یوسف علیہ السلام  کی  کنعان  آمد  کی خوشخبری  سنائی  گئی  تھی ۔
میری  خوشی  کا اندازہ  صرف  وہ  پھانسی  کا  مجرم  ہی لگا سکتا ہے  کہ  جسے عین  پھانسی  سے  کچھ دیر پہلے  معافی  نامے  کی خوشخبری  مل جائے ۔۔۔

میں نے  سنا  ہے  جب  ابو لہب  کو  ثوبیہ  نے  آمد  سرکارﷺ کی  خبر سنائی  تھی تو  اس  نے  خوشی  کے مارے  خبرلانے  والی  لونڈی  کو  آزاد  کردیا ۔  اور  اس  کے اعمال  نامے کی تمام  تر  سیاہ کاریوں  کے باوجود وہ  آج  بھی  اس  ایک  عمل  کی  جزا پا رہا ہے ۔۔۔ میرے دل میں خیال  آیا کہ  نام  نہاد  جوگی  میاں  ابو لہب اور  آپ  کے اعمال نامے  میں کم از کم  انیس بیس کا ہی فرق  ہوگا ۔  پس  اگر امید  کی ایک کرن  ۔۔۔ تسکین کا  ایک  لمحہ ۔۔۔ عذاب سے  ایک  لمحے کا  چھٹکارہ ۔۔۔اسے مل سکتا  ہے  تو  یقیناً تمہیں  بھی مل سکتا  ہے ۔ غلام ، لونڈیوں  کا  تو زمانہ  لد گیا تو کیا ہوااپنے  انداز میں خوشی  کا  اظہار تو  کیا  جا سکتا ہے ۔  اللہ  کو  اپنے  محبوب  ﷺ سے  اتنا  پیار  ہے تو  یقیناً  محبوب  ﷺ کی امت  سے  بھی پیار ہوگا۔  پس  اگر  ایک  پیارےنبی  ﷺ کے  ایک  پیارے امتی کی  آمد پر خوشی  کے اظہار  کا  موقع ہے  تو  ہاتھ سے جانے نہ پائے ۔ڈوبتے  کو تنکے کا سہارا بھی  بہت  بڑا  سہارا  لگتا  ہے ۔۔۔میری  اس بات  کی حقیقت  صرف وہی  سمجھ  سکتے  ہیں جو  سیاہ کاری  اور  کمینگی میں میرے ہم پلہ  ہوں۔ اگر  خوش قسمتی  سے  آپ  میری  بات نہیں سمجھ  پا رہے تو  اللہ کا شکر ادا کیجئے ۔

اللہ  تعالیٰ نے اپنے  پیارے  رسول ﷺ اور ان  کی  امت  پر بے شمار  نعمتوں  کی بارش  کی ہے ۔  ان  بے شمار  نعمتوں  میں سے  اس نے  صرف  "کوثر" عطا  کیے جانے  کا ذکر فرما کر  خوشخبری  دی "بے شک  آپ کا دشمن  ہی  بے نام و نشان  ہوگا۔" اس  سے اندازہ  لگایا جا سکتا ہے کہ  نام  و نشان  ہونا  کس قدر  بڑی نعمت  ہے ۔  کفار اور منافقین  نے مذاق بنا لیا  تھا  کہ  آپ ﷺ کو  اللہ تعالیٰ نے  اولادِ نرینہ  عطا نہیں فرمائی ۔  اس  کی تردید  میں اللہ  نے  خاص طور پر  سورۃ  نازل فرما کر  آپ  ﷺ کے دشمنوں  کے بے نام  و نشان  ہونے  کی خبر  دی ۔ اب  کوئی  کہہ سکتا ہے  کہ  نعمتوں  کا ذکر تو  اللہ  نے تقریباً سارے  قرآن مجید  میں فرمایا  ہے ۔  سورۃ  الرحمن  کا  تو  موضوع  ہی یہی  ہے کہ  "پس تم اپنے رب کی  کون کون سی نعمت کو جھٹلاؤ گے۔" لیکن  اندازِ بیاں  پر  غور فرمائیے ۔ اور سورۃ  کوثر  کی  آیات کی تعداد  سے  اندازہ  لگائیے کہ اس  سورۃ  میں اللہ تعالیٰ  نے  اپنی خاص الخاص نعمت  کا ذکر  کر کے ظاہر  کیا  ہے کہ  نام و نشان  ہونا  دراصل  اس دنیا  کی سب سے بڑی اور  ہمیشہ رہنے والی نعمت ہے ۔ پس مبارک  باد کا مستحق ہے ہر  وہ  اللہ  کا بندہ  جسے اللہ  نے یہ نعمت  عطا فرمائی  ہے ۔

 ڈارون  سے  ہر چند کہ  میں متفق نہیں مگر  نظریہ  ارتقا  کا جزوی  طور پر  قائل ضرور ہوں۔حضرت آدم علیہ  السلام  کی وفات  کے وقت  ان کی  اولاد  کی تعداد  کیا تھی ۔ ان میں سے کتنے  ہی  قدرتی آفات  کی  زد میں آ کر  مر گئے  ہوں  گے ۔ کچھ آپسی  جھگڑوں  کی بھینٹ چڑھ گئے ہوں  گے۔ ان  میں سے زندہ وہی رہے  جو  قدرت کی نظر  میں بہترین  تھے ۔ ان کی اولادیں  ہوئیں، اور  قدرت کا  چھانٹی  والا فارمولا  ہر زمانے  میں لاگو ہوتا  رہا۔ دنیا  میں کتنی ہی جنگیں ہوئیں ۔ کتنے ہی زلزلے آئے ، کتنے  ہی انسان  سیلابوں  ، طوفانوں کی نظر ہوگئے ۔ مگر  دنیا  انسان  سے خالی  نہیں ہوئی ۔ ہر  لیول  سے  سروائیو کر کےآگے  آنے  والےیقیناً بہترین  تھے اور قدرت  کی نظر  میں خاص  تھے ۔ اب  حال  پر نظر دوڑائیں  تو  ثابت ہوگا  کہ حضرت آدم  کی  اولاد  کی چھانٹی  میں سے  قضا و  قدرت  نے  موجوہ انسانوں  کو  ہی چنا ۔کیا  یہ  بات  حکمت  سے خالی  ہو  سکتی ہے  کہ  اتنے زمانوں میں آنے والی  بے شمار  آفات  اور  جنگوں  کا  شکار  ذوالقرنین سرور  کے  آباو اجداد  نہ تھے ۔ اور  اب  جبکہ  بقول غالبؔ:۔ 
سلطنت دست بدست  آئی  ہے 
جامِ مے  ، خاتمِ جمشید نہیں
حضرت آدم  علیہ السلام  سے  ہوتے  ہوتے یہ  سلطنت  اب  محمد  زین  العابدین تک  آن پہنچی ہے ۔تو ماننا ہی  پڑے گا  کہ  قدرت  نے  انہیں بے مقصد  نہیں چُنا۔ یہ  یقیناً  بہت  ہی خاص الخاص  ہیں۔
بڑے غالب ؔ  نے  اپنے سات  بچے  دے کر  قدرت  سے زین العابدین خان عارفؔ کو  پایا  تھا ۔  اور چھوٹے  غالب ؔ پر  بھی  اللہ  کا کرم ہو گیاہے ۔

خوش آمدید  محمد  زین العابدین۔۔۔۔

ختم کرتا ہوں اب  دعا پہ کلام
شاعری سے نہیں مجھے  سروکار
تم سلامت رہو  ہزار  برس
ہر برس کے ہوں دن پچاس ہزار   

Saturday, 21 September 2013

ڈبویا مجھ کو ہونے نے (قسط ہفدہم)۔

2 آرا

گر کیا  ناصح نے  ہم کو قید، اچھا!یوں سہی


نئے  قانون کے نفاذ کابھی جوگی اور وسیم  کے معمولات پر کچھ خاص اثر نہ ہوا۔ یعنی جو محفل  ہوسٹل کے گراسی  پلاٹوں  پہ سجتی تھی ۔وہ  اب    کھیل کے میدان کے مشرقی  سرے  پر واقع  ٹیوب ویل کے  حوض پر سجنے لگی  ۔ عجیب بات یہ کہ محفل کے شرکاء کی تعداد بجائے کم ہونے کے بڑھتی گئی  ۔ اور مزے  کی بات یہ  کہ  باقاعدگی  سے کرکٹ  کھیلنے  کے عادی طلباء  بھی اب کرکٹ  بھول بھال  کر  اس محفل کا  حصہ  نظر آتے ۔سب قاعدے قانون  دھرے کے دھرے رہ گئے ۔  مدعی  لاکھ  برا چاہے تو کیا ہوتا  ہے ۔۔۔۔
اس  پر  قانون میں  ایک ترمیمی  بل کے ذریعے  اضافہ عمل میں لایا گیا  کہ تمام طلباء پر یہ بھی  لازم ہے کہ وہ کسی نہ کسی کھیل  میں حصہ لیا کریں ۔

کھیل کے میدان  تقریباًتین ایکڑ کے رقبے پر پھیلے ہوئے تھے ۔ایک حصے  پر  فٹ بال کھیلنے والوں کا قبضہ تھا ۔ اور اسی کے  کچھ حصے میں کبڈی کھیلنے والوں کا میدان سجتا تھا ۔ بقیہ دونوں حصوں  میں کرکٹ  کے نشئی  اپنا نشہ  پورا کیا کرتے  تھے ۔جوگی  کے پسندیدہ ترین استاد جناب محمد  حنیف صاحب فٹ بال  کھیلنے والوں میں شامل  تھے اس لیے جوگی  اور وسیم  نے فٹ بال  ٹیم میں شمولیت اختیار  کی ۔مزے کی بات  یہ  دونوں  کا  تجربہ  صرف  دیکھنے  کی  حد تک تھا۔  پہلے ہی دن  شاید  لمبے قد  اور دیو  جیسے بازوؤں  کی  وجہ  سے  جوگی کو گول کیپر  کھڑا  کر دیا گیا ۔وسیم  کو  تو شاید  میدان  میں فٹ بال  کو کک  لگانے کا  موقع  میسر  نہ آیا  مگر  گول کیپر  کی حیثیت  سے کھڑے جوگی  کی طرف فٹ بال  بھاگ بھاگ  کے آتا ۔گول   کی  دو کوششیں ناکام  کرنے بعد  تیسری  بار  فٹ  بال  جب  گول  کی طرف آیا تو جوگی صاحب  نے جو ش میں آ کر   زندگی  میں پہلی بارجو کک  ماری اس کا  فٹ بال  پر  تو  کوئی خاص  اثر  نہ  ہوا  سوائے اس  کے  کہ  دس بارہ  فٹ  دور  جا گرا البتہ  جوگی  میاں پر   اچھا خاصا اثر ہوا۔ اس وقت تو  گول پوسٹ  چھوڑ  کے  پاؤں  سہلانے میدان کے   کنارے جا بیٹھے  ۔  مغرب ہوتے ہوتے پاؤں  اچھا  خاصا سوج گیا۔ اور  عشاء  ہونے تک حالات مزید  بگڑچکے تھے  ۔  اور صبح  جوگی  صاحب چلنے پھرنے سے بھی عاجز تھے ۔
کچھ  دن  کی مالش  رنگ لائی اور پیر  ٹھیک  ہوگیا  مگر  جوگی  اور وسیم نے پھر کبھی فٹ بال  کا نام نہ لیا۔ چونکہ قاعدے کی رو سے کسی نہ کسی  کھیل میں حصہ لینا  ضروری تھا ۔اور ویسے  بھی بقول  جناب  مرزا  غالب ؔ علیہ الرحمۃ
اپنا  نہیں وہ شیوہ  کہ آرام  سے بیٹھیں
اس در پہ نہیں بار تو کعبے  ہی کو ہو  آئے
 اس لیے جوگی  نے میس  میں تنور جلانے  کیلئے  آنے والی لکڑیوں میں سے ایک  اچھا  سا ڈنڈا  منتخب کیا  اور میس  کی کلہاڑی سے دو  عدد بہترین  گُلیاں  تخلیق  کیں ۔ اور اگلے دن  کرکٹ گراؤنڈ کے  ایک طرف جوگی  اینڈ کمپنی  نے   گلی ڈنڈے کا میدان سجا لیا ۔ اکثر طلبا  ء کیلئے  یہ نیا  کھیل تھا ، اور کچھ اس کھیل  کے کھلاڑی  نکل آئے ۔ اب جو  انہوں نے جوگی اور وسیم  کو گلی ڈنڈا کھیلتے  دیکھا تو ان  کو بھی کھیلنے کا شوق چرایا ۔ یوں چند دن بعد  گلی ڈنڈا کھیلنے والی دو ٹیمیں معرض وجود میں آگئیں ۔ اور بڑے  معرکے  کا کھیل ہونے لگا ۔ لیکن  چونکہ  اسی میدان میں کرکٹ کھیلنے والے بھی  ہوتے  ا س لیے  گلی ڈنڈا  کھیلنے  والے  کھلاڑیوں  کی مہارت اکثر ان بیچاروں کے ماتھے اور کبھی سر کیلئے  عذاب بننے لگی ۔ ایک  بار جب  جوگی  کی شاٹ  پر  گلی  ایک  کرکٹر  کے منہ سے ٹکرا  کر  اس کے ثنایا  علیا(سامنے  کے  دو اوپری دانت) کی شہادت  کا باعث بنی  تو گلی ڈنڈے  کے  کھیل پر پابندی  لگ  گئی ۔
 

عشق نبرد پیشہ  طلبگارِ مرد تھا


علم الصرف  کے مدرس  جناب محمد امین صاحب  کی  زبانی  جب یہ معلوم ہوا کہ  آنجناب  کراٹے ماسٹر بھی ہیں تو  جوگی  وسیم اور ناصر وغیرہ کے پیہم اصرار پر  انہوں  نے  عصر سے مغرب کے درمیان  کراٹے  کلاس  کی حامی بھر لی ۔شدہ شدہ  یہ  خبر  پھیل گئی  کہ  اب اکادمی میں کراٹے کلاس بھی ہوا کرے  گی ۔  پہلے  دن تقریباً ڈیڑھ سو  طلباء کراٹے سیکھنے  کیلئے  میدان  میں تھے ۔  دوسرے دن یہ  تعداد دگنی  ہو چکی تھی ۔ اور  جب  امین  صاحب نے  آٹھ فٹ اونچی   فلائنگ کک  کا  مظاہرہ  فرمایا  تو  تیسرے  دن نہ صرف  ہوسٹل  کا صحن  کراٹے سیکھنے  کے شوقین  طلباء سے بھر گیا  بلکہ  چاروں  طرف برآمدوں  میں بھی  دو دو قطاریں  بن چکی  تھیں۔ سب کا خیال  تھا  کہ  بس  ہفتے دو ہفتے  میں ہم بھی جیکی چن  بن جائیں گے ۔  مگر  جب  پہلے چار  دن صرف  جسمانی  ورزشیں  ہی  ہوتی رہیں۔ تو  وہی  ہوا جو کوفے  میں حضرت مسلم بن عقیل کے ساتھ ہوا تھا ۔پانچویں دن  صرف  22  طلباء  کراٹے  کلاس میں تھے اور چھٹے دن  یہ تعداد مزید  کم ہو کر  بارہ  رہ  گئی ۔ اور ساتویں  دن  یہ نفری  سات  کے ہندسے  پر  تھی ۔ سات  کا عدد  کچھ  ایسا سعد  واقع  ہوا کہ  کراٹے کلاس  کی  تعداد  پھر سات  پر ہی قائم  رہی ۔

لکھتے رہے  جنوں کی حکایاتِ خونچکاں


وقت  گزرتا  رہا لیکن  ایسے  محسوس  ہوتا  تھا  کہ گزرنے  کی  بجائے  بے چارے  طلباء پر  تنگ  ہوتا  جا رہا  ہے ۔ دن رات وہی چوبیس  گھنٹے  والے  ہی تھے ۔  ایک گھنٹے  میں بھی پہلے کی طرح ساٹھ منٹ تھے ۔ مگر اساتذہ  شاید  سمجھتے  تھے  کہ  طلباء کے  پاس چوبیس  کی بجائے  چونتیس گھنٹے  کا وقت  ہوتا  ہے  ۔ ایک دن میں سولہ  اساتذہ  کو  بھگتنے  کے علاوہ  ہفتے میں ایک  بار  لنگر  خانے  میں  لگا  لکڑیوں  کا ڈھیر  بھی  میس  میں ڈھونا  ہوتا تھا۔  سال  بھر  جتنے  چاول  کھاتے تھے  سال میں ایک بار وہ  بونے کی ذمہ داری  بھی  انہیں ناتوانوں پر  تھی ۔  وہ  منظر  بھی دیکھنے سے تعلق  رکھتا تھا ۔  کسان  زمین  تیار کر کے پانی لگا دیتے  تھے  اور صبح  کی نماز  کے بعد  طلباء  شلواریں گھٹنوں  تک  چڑھا  کے  یاجوج  ماجوج  کی طرح کھیت  میں ایک  طرف سے گھستے  اور دوسرے  سرے پر جا نکلتے ۔اسی  رفتار سے ایکڑوں پہ ایکڑ  دھان  بوتے  بوتے  نو بجنے  تک سب  کوہ قاف  کے  جنوں  کے  ہم شکل بن چکے ہوتے ۔ پھر  وہیں برگد  یا پیپل کی  گھنی  چھاؤں  میں  لسی  اچار  کے ساتھ  لنگر  خانے آئی  روٹی  سے ناشتہ  کرتے ۔  روٹی  شاید  اس  کیلئے  چھوٹا لفظ  ہے ،"روٹا "کہنا  زیادہ  مناسب ہوگا۔حجم  میں وہ تین روٹیوں  کے برابر  ہوتی  ،   بے حد  عمدگی  اور مہارت  سے  پکائی  گئی ۔  اتنے  محیط  کے باوجود  کیا  مجال  کہ  کہیں سے گولائی یا  موٹائی  میں  فرق  آ جائے ۔جوگی  ہمیشہ  اس روٹی  کے  حجم پر  حیران  ہی  رہا  تاآنکہ  جب تک  اس نے گولڑہ  شریف  کے  لنگر  خانے  میں  اس  سے بھی  بڑی  روٹی  نہیں دیکھ  لی۔ خیر  یہ تو  ایک  جملہ  معترضہ  تھا۔ ناشتے  کے  بعد  یاجوج  ماجوج  پھر حرکت  میں آتے  اور  دوپہر  ہونے  سے  سے  گھنٹہ  بھر  پہلے  ایک مربع دھان  بوکر  ہاتھ  جھاڑتے  ٹیوب  ویل  میں گھس  جاتے ۔اور دوپہر  کا  کھانا    حسبِ معمول  میس   میں جا  کھاتے  تھے ۔ اسی  طرح  دو یا  تین  دن  کے اندر  دھان  کی بوائی  مکمل  ہو جاتی۔
علاوہ  ازیں  مکئی  کے موسم  میں جب مکئی پک جاتی  تو یاجوج ماجوج  ایک بار پھر  حرکت میں آتے  اور دیکھتے ہی دیکھتے  مکئی کے بھٹے  پودوں سے ٹرالیوں  میں اور ٹرالیوں  سے خشک  کرنے کے  میدان  میں منتقل ہو جاتیں۔
اکادمی  میں طلباء  کی  بڑھتی تعداد  کے پیشِ نظر  سارا  سال  تعمیرات  کا  کام  بھی  ساتھ ساتھ چلتا  رہتا ۔  اسی عرصے کے دوران  نیا  میس  ہال  ، باتھ رومز  اور ہوسٹل  کا  مشرقی  ضمیمہ  تعمیر  ہوئے ۔ ان  میں بھی طلباء  کا  پسینہ  شامل  ہے ۔ اینٹوں کی کئی کئی ٹرالیاں  (ٹریکٹر  والی ٹرالی ) آن کی آن  میں ادھر  سے ادھر کر دیتے ۔ جب  میس  ہال  کی  چھت  پہ  لینٹر  ڈالاجانا  تھا تو طلباء  نے اپنی  خدمات  پیش  کردیں۔  جو کام  تین چار دنوں میں ہونا  تھا  وہ مغرب  سے  عشاء  کے درمیانی  وقت  میں کر کے رکھ  دیا ۔   

Saturday, 14 September 2013

دل کے داغ

2 آرا

انتساب


کچھ سابقہ "عزیز" دوستوں کے نام


شام کے سرمئی  اندھیروں میں
یوں میرے دل کے داغ جلتے ہیں

جیسے پربت کے سبز پیڑوں پر
برف کے بعد دھوپ پڑتی  ہے

جیسے صحرا کی ریت اٹھ  اٹھ کر
اجنبی کا طواف کرتی ہے

کسی کی معصوم تمنا کو 
لوگ یوں توڑ جاتے ہیں

جیسے دم توڑتے مسافر  کو
قافلے والے چھوڑ جاتے ہیں

Friday, 13 September 2013

ڈبویا مجھ کو ہونے نے (قسط ششدہم) ۔

3 آرا

دھمکی میں  مر گیا  جو نہ بابِ نبرد تھا


معاملہ  کچھ اس طرح بگڑا کہ شکیل صاحب اور ان کے  ہم خیال مولانا  صاحبان اور  حلقہ  ملنگاں  کے درمیان خوب ٹھن گئی ۔  اور مولانا پارٹی    اس تاڑ میں رہنے لگی کب انہیں  جوگی  اور وسیم کو رگیدنے  کا موقع میسر ہو ۔  اور یہ عرصہ  جوگی  اور وسیم نے اس طرح گزارا جیسے سرکس  کا بازیگر  رسے پر  سائیکل چلاتے  وقت  ،  اور  گنہگار پل صراط  پر  گزارتے ہوں ۔اور مصیبت پہ مصیبت  یہ  کہ  کسی  بھی جوابی کاروائی کیلئے جوگی کمپنی  کو  بالواسطہ  طریقہ اپنا  نا  پڑتا تھا ۔اور قسمت  سے  اگر  کوئی موقع  ہاتھ آجاتا تو  چوکتے نہ تھے ۔ ایک بار شکیل احمد صاحب  نماز  کے فضائل پر اسمبلی ہال  میں درس دے رہے تھے  اور جب وہ  باجماعت نماز  کی  حکمت اور ثواب کا  خشوع  و خضوع  سے بیان فرمانے  لگے تو  وسیم نے  کھڑے ہو کر  کہا:۔ ایمان  کی  امان پاؤں تو کچھ عرض کروں ۔؟  شکیل صاحب اور ہمنوا چوکنے ہو گئے  کہ راکٹ فائر ہونے والا ہے مگر  تمام طلبا  ء اور  اساتذہ  کی موجودگی میں سوال کی  اجازت بھی (مارے باندھے) دینی ہی پڑی ۔ سوال تھا  کہ کیا  باجماعت نماز  کی حکمتیں اور ثواب سب  کیلئے ہے یا کچھ لوگوں کو استثنا  بھی حاصل ہے ۔؟ شکیل  صاحب سوال کے پس منظر کو سمجھے بغیر فوراً  کلف لگے لہجے  میں بولے :۔ ہاں  ! یہ  سب  کیلئے ہے اور اسلام  میں کسی  کو استثنا   ،یا تخصیص  حاصل نہیں۔    پھر وسیم کی طرف دیکھ کر  طنزیہ انداز میں واضح کیا  کہ :۔ "اعمال  اور ان کی جزا کا دارومدار  نیت  پر ہے ۔"اور وسیم نے اگلا  فائر  کیا :۔ "مگر  ایک  کنفیوژن  ہے ۔  تپتی  دوپہر  میں ظہر  کے وقت جب سب لوگ یہ  حکمتیں اور  ان کے ثواب سے جھولیاں  بھرنے مسجد میں جاتے ہیں تو   آپ اپنی  قیام  گاہ  میں ہی  جائے  نماز بچھا  لیتے ہیں ۔"شکیل صاحب حتی الامکان  شائستگی سے غرائے :۔ "کوڑھ مغز ! تمہیں کیا معلوم  ،  ہم چار  لوگ  وہیں  اپنے  کمرے میں ہی جماعت کا اہتمام  کر لیتے  ہیں۔ " وسیم کا منہ پھٹ ہونا سب  کو معلوم  تھا  مگر  اب جو غوطہ  وسیم نے دیا شکیل صاحب کو بھی پسینہ  آ گیا ۔"آپ  چند قدم  چل  کر مسجد  میں باجماعت نماز پڑھنے نہیں جاتے ۔ بلکہ اپنے کمرے میں  ہی جماعت کھڑی کر لیتے ہیں جس کی نفری  اکثر اوقات امام  صاحب کے  علاوہ  صرف ایک مقتدی  ہوتی ہے ۔ تو کوئی کیسے  نہ سمجھے کہ آپ  کو  غلام  محمد صاحب  کی اقتدا میں نماز پڑھنا گوارا نہیں یا    آپ  حسبِ  سابق  اسلام  میں تقسیم در تقسیم اور ڈیڑھ اینٹ کی ذاتی مسجد اورذاتی  فقہ  کی روایت  کے مقلد  ہیں۔؟" اس قدر  جارحانہ  حملے  پر جوگی  اور وسیم کے  علاوہ سب  سکتے میں رہ گئے  ۔  شیر محمد  صاحب نےاپنی پیٹی بھائی  کو   بر وقت کمک پہنچا ئی اور شکیل صاحب نے مولویوں والی روایتی تعلیل  بازی  کی پٹاری کھولی ۔ اورکسی قدر طنزیہ  لہجے میں  قرآن  مجید میں سے بدگمانی  سے بچنے اور حسنِ ظن  سے متعلقہ آیات کی تلاوت فرما کر  دو  نمازیوں  کی  جماعت کی تعلیل یہ پیش کی  :۔"چونکہ ہم  مسافر ہیں اور جماعت کے ساتھ مقیم والی  نماز پڑھائی  جاتی ہے ۔ اس لیے ہم  اپنے کمرے میں نمازِ قصر کی جماعت کھڑی کر لیتے ہیں ۔"مگر  وسیم  کی الجھن  بدستور قائم  تھی  کہ  فجر ،  عصر اور  مغرب  کی نمازیں  آپ مسجد  میں  سب کے ساتھ  جماعت میں ادا کرتے ہیں تو   کیاصرف  ظہر  اور عشا ء  کی  نماز کے وقت آپ  مسافر ہوتے ہیں۔۔؟؟؟؟   اس  کے جواب  میں وسیم کو زبردستی  بیٹھنے کا حکم دے کر  شکیل  صاحب نے فاتحانہ  نگاہ  سارے ہال پر ڈالی اور پوچھا کسی اور کی کوئی الجھن ہو تو وہ  سوال کر سکتا ہے  اور پورے ہال میں صرف ایک ہی ہاتھ کھڑا ہوا ۔  جو ظاہر ہے جوگی  کے علاوہ کس کا  ہو سکتا  تھا۔شکیل صاحب نے نہ چاہتے ہوئے بھی برا سا منہ بنا کر  جوگی کو سوال کی اجازت دی۔    جوگی کا سوال تھا  کہ  اگر  آپ کی تعلیل کو درست مانا جائے جو کہ  یقیناً درست ہے  تو اس ہال  میں بیٹھے ہوئے کم از کم دو تہائی طالب علم  بھی شرعاً  مسافر  ہی   ہیں ۔ لیکن حقیقت  یہ  ہے  کہ اگر کوئی  طالب  علم جماعت  کے ساتھ نماز پڑھنے سے رہ  جائے تو اسے صبح اسمبلی  میں  سب کے سامنے گدھے  کی طرح تشدد کا نشانہ  بنایا  جاتا ہے ۔اگر  اسلام میں کوئی  تخصیص اور استثنا  نہیں تو  یہ سب کیا کہلائے گا ۔۔۔؟؟  تانا شاہی  ۔۔۔؟؟  یا  ۔۔۔۔؟؟؟
شکیل صاحب  نے  تو لاجواب  ہو  کر  بولنے سے  انکار کر دیا  مگر  چونکہ عزت کا  سوال  تھا  اس لیے مولانا  شیر محمد نےپہلے تو اساتذہ  کے سامنے   اس طرح زبان چلانے  پر  ایک  ہجویہ وعید  بیان فرمائی  اور کہا کہ فقہ کی دو چار کتابیں  پڑھ لینے سے اپنے آپ کو علامہ سمجھ کر  محترم  اساتذہ کرام سے  بے مقصد بحث کرنے والے جان  لیں کہ  علم فقہ  کی رو سے  شرعاً  مسافر  بھی اگر  کسی  جگہ پندرہ دن قیام  کی نیت  کر کے مقیم ہو  تو  اس کیلئے  سارے  احکام  مقیم والے ہیں۔ لیکن اگر  شرعی مسافر کسی  جگہ  پندرہ دن قیام کی نیت کیے بغیر  چاہے سال بھر بھی  مقیم رہے تب بھی اس پر سب احکام مسافر  والے لاگو ہوں گے ۔ آپ لوگ چونکہ طالب  علم ہیں اور آپ کو  چھٹی بھی  دو  ہفتے بعد  ہوتی  ہے ۔ اس  کا مطلب ہے  تمام طلباء  پر  مقیم والے احکام  لاگو ہیں۔"لیکن  جوگی  کے ترکش  میں ابھی تیر  باقی تھے ۔  لہذا  مزے بولا:۔ "چھٹی تو واقعی  تمام  ادارے  کو دو ہفتے بعد ہوتی ہے ۔ ظاہر  ہے اساتذہ  کو  بھی ۔  اس کا مطلب ہوا کہ    چھٹی کا  شیڈول  معلوم  ہونے کے باوجود  بھی کچھ لوگ   محض دو رکعت نماز سے بچنے  کیلئےپندرہ    روزقیام کی نیت نہیں کرتے ۔یقیناً وہ لوگ قابلِ تحسین ہیں۔ اور ان  پر انگلی اٹھانا آخرت کی بربادی کا باعث ہوگا ۔"اس بات پر  ہال میں موجود  متاثرین کے علاوہ  تمام   اساتذہ  اور طلباء کھلکھلا کر ہنس پڑے ۔وسیم  نے  ٹکڑا لگایا :۔سمجھا کر  ناں یار "اعمال  اور ان کی جزا کا دارومدار  نیت  پر ہے ۔" اس پر  کسی  منچلے نے جوش میں آ کر    نعرہ ءِ  تکبیر   بلند کیا  اور ہال اللہ  اکبر  کی صدا سے گونج اٹھا ۔

جاتی ہے کشمکش  کوئی اندوہِ عشق کی ؟


اس غدر  کے بعد   متاثرہ پارٹی نے سختی سے  جوگی اور وسیم کی اثر پذیری  اور طلباء میں ان کی بڑھتی ہوئی مقبولیت کو کچل دینے کا فیصلہ کر لیا۔یہ وہ زمانہ تھا جب  ہوسٹل  وارڈن منظور احمد صاحب استعفیٰ  دے کر  جا چکے تھے ۔  اور ہوسٹل  انچارج  کی ڈیوٹی  اساتذہ  کی ذمہ داری قرار پائی تھی ۔  ہوسٹل  کا چارج  ہاتھ آتے ہی سب  سے پہلا کام مولانا  صاحب نے  وسیم اور جوگی  کو  الگ کرنے کا کیا ۔  وسیم کا بوریا بستر  گول کروا کے  دوسری منزل پہ  بھیج   دیا گیا ۔  اور جوگی کو گراؤنڈ فلور  پر  رہنے کا پابند  کرکے سمجھ لیا گیا کہ  خطرہ  ٹل گیا ۔  لیکن  یہ صرف خام خیالی  تھی ۔
اہل ِ تدبیر  کی و ا ماندگیاں
آبلوں پر  حنا باندھتے ہیں
جوگی  نے ایک غیر سیاسی  اور غیر مذہبی  تنظیم"ڈان"(ڈی اے  ڈبلیو  این) کی داغ بیل ڈالی ۔  اس  کا  مقصد  اور منشور نظریات ہائے کہنہ  کی اندھا دھند تقلید  اور لکیر کی فقیری کی حوصلہ  شکنی اورجہانہائے نو  کی  تلاش  میں  پیش آمدہ  تجربات  پہ  تبادلہ  خیال اور ایک دوسرے کی  حوصلہ افزائی  تھا ۔ دو  اراکین  سے  اس  انجمن کا آغاز  ہوا لیکن   جوگی اور وسیم کو الگ  کرنے کی ہرکوشش اس  انجمن کے اراکین  میں اضافہ پر منتج ہوئی ۔    
پہلے  تو جوگی اور وسیم کی شر انگیزیاں صرف ایک کمرے  تک محدود  تھیں اب تو  یہ شر مزید  پھیلنے لگا ۔ جوں جوں کمرے تبدیل  ہوتے گئے  جوگی اور وسیم  کے  نظریات اور خیالات  عام ہوتے گئے ۔  سارا دن تو ساتھ ہوتے  ، عشاء کی نماز کے بعد    سے صبح کی نماز  تک کی جدائی جوگی اور وسیم کے حلقہ احباب میں وسعت کا باعث بنی ۔اور آخر کار  جب کسی  طرح کچھ ہاتھ نہ آیا تو ایک  بار پھر  جوگی اور وسیم کو ایک ہی کمرہ  الاٹ ہوا۔
عصر  سے  مغرب  کے درمیانی  وقت میں کھیل کے میدان سجتے تھے ۔  مگر  نہ تو جوگی کو  کسی کھیل میں دلچسپی تھی  نہ ہی وسیم کو  ۔ دو کلو مونگ  پھلیاں  سامنے رکھ کے  ان کی محفل  سجتی ۔ جہاں  دنیا جہان  کے موضوعات پر  سیر حاصل تبادلہ  خیال  کیا  جاتا  اور اتنے طالب علم کرکٹ میچ  دیکھنے والے نہ ہوتے جتنے جوگی اور وسیم کی  گپیں سننے والے ہوتے ۔مخالفین نے  اوپر  تک یہ اطلاع پہنچائی  کہ  یہ دونوں نہ توخود کھیلتے ہیں نہ ہی کسی  کو کھیلنے  دیتے ہیں۔ جبکہ  کھیل طلباء  کی ذہنی اور جسمانی  صحت کیلئے نہایت ضروری  ہیں۔لہذا اوپر سے حکم آیا  کہ تمام  طلبا کا کھیل کے میدان  میں  ہونا  لازمی  ہے۔گپ شپ  کیلئے  مغرب سے عشاء کا درمیانی وقت بہت ہے  ۔اس نئے  قاعدے  کے تحت عصر سے مغرب کے  درمیان ہوسٹل  کے اندر یا اندرونی  احاطے  میں نظر آنے والا ہرطالب  علم  سزا  کا مستوجب  قرار  دیا گیا۔  
 

تازہ ترین تحریریں اپنے ای میل ایڈریس پر حاصل کریں

There was an error in this gadget

کرم فرما