Saturday, 18 January 2014

یارانِ نکتہ داں (قسط چہارم) ملک حبیب اللہ

9 آرا

پرانے زمانے  کے اصلی سیانے کہا کرتے تھے  کہ  نام  کا انسان  کی شخصیت پر  بہت اثر پڑتا ہے ۔ اس  لیے سوچ سمجھ کرایسے   نام رکھے جائیں جن  کے اعداد اور  اثرات  انسان کے غالب  عناصر  کی خصوصیات  سے  ملتے جلتے ہوں ۔ بے  شک شیکسپئر  نے کہا تھا کہ  "نام میں کیا رکھا  ہے۔" مگر  اس کا یہ مطلب تو نہیں کہ شیکسپئر   کا  کہنا یونیورسل  ٹروتھ ہو گیا ۔  وہ  بھی تو انسان تھا اس   نے چول  کیاہانک دی مغرب زدہ  یاروں  نے عقیدت  سے  رٹا مار لیا۔  فدوی کا ماننا ہے کہ نام میں بہت کچھ رکھا ہوتا ہے ۔  علم الاعداد والے  تو مجھ سے متفق ہو جاتے ہیں مگر   قاضی، ملا   ں متی  دینے  سے  باز نہیں آتے ۔۔۔
ماحولیات  والے گروہ  کا کہنا ہے  کہ  انسان  کی شخصیت کی تعمیر  میں  ماحول  بھی بہت زیادہ  اثر انداز ہوتا  ہے ۔  جینیاتی سائنس  والے  کہتے ہیں کہ   ڈی این اے ایک مکمل دستاویز  ہے جس میں انسان کا آدم ؑ تک ماضی  ، حال اور مستقبل  کی تمام ممکنہ پشتوں تک  کی تفصیل  خالق نے  تخلیق کے وقت درج کر دی ہے ۔ آسان لفظوں  میں کہا جائے تو   "عاقبتِ گرگ زادہ   گرگ "ہونا  کوئی انہونی نہیں بلکہ ایک مسلمہ حقیقت ہے ۔  گلاب  کی قلم سے   کیکر  پھوٹنے سے تو رہا ،  ظاہر ہے گلاب  ہی   پھوٹے گا۔  آم  کی گٹھلی  سے آم کا پودا اُگنے پر  حیرانی  کا  اظہار کرنے والا احمق   نہیں تو کیا ہے۔

یادگار ِغالب لکھتے وقت  حالی ؔ  کو یہ  مشکل پیش نہیں آئی ہوگی   کیونکہ غالب  ؔ کے آباءو اجدا د  میں سے  سوائے     چنگیز  ، ہلاکواور تیمور  جیسے فاتحین اور سپہ گروں  کے  کوئی  قابلِ ذکر  شاعر یا  ایسا بلند کردار اور عالی  اخلاق عظیم  انسان   نہ گزرا  تھا ۔   آگرہ  کی  فخریہ  پیشکش   غالب  کے علاوہ   ایک  جہانگیر  ہی تھا ۔سونے پہ  سہاگہ  غالب  بے استادے بھی تھے ۔ پس  حالی ؔ نے استاد کو تلمیذ الرحمن  کہہ  کر  غالبیات  کی  پچ  پر  خوب دھواں دھار بیٹنگ کی ۔  لیکن حالی ؔ اگر  آج  زندہ  ہوتے  اور  ان کو  شفقت  امانت  علی  خان  پر لکھنا  پڑ جاتا  تو آٹے دال  کا  بھاؤ معلوم ہوجاتا ۔  میں  دیکھتا  کہ  استاد  امانت  علی  خان  اور اسد  امانت علی  خان  کے  گھرانے  کے  بچے  شفقت امانت  علی  خان  پر  وہ  کیسے  لکھتے ۔  حالی تو  زندہ  نہیں مگر  ان  کے گدی  نشین  کو  آج  و  ہی مشکل  در پیش  ہے ۔
پوچھتے ہیں وہ  کہ غالب ؔکون ہے
کوئی  بتلاؤ  کہ ہم بتلائیں کیا۔۔۔؟
 اگر  نام  کے حوالے  سے دیکھا جائے تو اسم  بامسمیٰ  ہیں۔  علاقے  کا پانی  اور ماحول دیکھا جائے تو  وہ علاقہ  ہی  مردم  خیز  ہے ۔ایک سے بڑھ کر  ایک  صاحب  کمال  اس  علاقہ  کے دانہ  پانی سے تعمیر  ہوا ۔  آباء  و اجداد  کا ذکر  ہوتو  ایں  ہمہ  خانہ آفتاب است  ۔  اور یہی فدوی  کو حیرانی ہے کہ ملک حبیب اللہ    کی  تعریف  کرنے  کیلئے کونسا  پہلو منتخب  کرے ۔  کس  زاویے  سے  دیکھے جہاں سے  ذکر کرنے پر  ان کی اپنی ذات  نظر  آ سکے ۔ سمجھ نہیں آتی  کہ ان پر  نام کا اثر  زیادہ ہے ۔ یا علاقے  اور ماحول کا اثر  غالب  ہے یا پھر  آباواجداد   سے  ملنے والےجینیاتی  ورثہ  کارنگ  زیادہ ہے ۔ جس پہلو سے جانچتا  ہوں وہی  پہلو  مکمل  ہے ۔ صرف نام  ہی حبیب نہیں یہ سر سے پیر تک  اور اقوال  سے  افعال  تک  سراسر  حبیب  ہیں۔ چوآسیدن  شاہ   آبائی  علاقہ  ہے ۔   جس کے تعارف کیلئے صرف نام ہی کافی  ہے ۔   اچھا بھئی شاعر   بھی ہیں  اور  اچھے شاعر ہیں۔  لیکن آباء و اجداد  میں کئی پشتوں تک    شاعر  ہی شاعر  ہیں۔ اور   کلام گواہ ہے  کہ  کس پائے  کے شاعر  ہیں۔ سونے پہ سہاگہ  ان  کی نسبت موہڑہ شریف  (مری)۔یعنی  ان  کے خلوص و محبت  کے گن گانے کا  موقع  ہے  نہ  ان کے اعلیٰ اخلاق  و کردار کے  بیان  کے سہارے  خانہ پری  کی  جا سکتی ہے ۔ 
مرزا  غالب  کا  ایک  نہیں کئی شعر  ان کی  شخصیت پر پورے اترتے  ہیں۔مثلاً 
تازہ  نہیں ہے  نشۂِ فکر سخن  مجھے
تریاکیِ   قدیم  ہوں دودِ  چراغ کا
اور  مرزا  کا  آبا ء والا   شعر  تو جیسے  انہی کیلئے لکھا گیا ہو۔
 سو پشت  سے ہے پیشہ ِٔ آباء سپہ گری
 کچھ شاعری  ذریعہ  عزت  نہیں مجھے
خیر  سے  میر ببر علی انیس  کا  فرمایا  بھی  ان کے  حق   میں پورا  اترتا ہے ۔ 
پانچویں  پشت ہے  شبیر  کی مداحی میں
عمر  گزری ہے  اسی  دشت  کی  سیاحی میں
    لیکن   جیسا  کہ  میں نے   پہلی  قسط  میں کہا  تھا  کہ  یہ تحریر  میں  اپنے  خاص انداز  سے  ہٹ  کر  سیدھے  سادے  طریقے  سے  لکھوں گا  ۔   (تھوڑا  بہت  ادب جھاڑنے کی  ناکام   کوشش     صرف ملک  حبیب   کے لحاظ  میں  کی گئی ہے ) اب تکلف  برطرف اور   سیدھی  طرح  قصہ سنیے۔۔۔۔

فیس  بک پر  ایک علی  جاوید  چیمہ  صاحب تھے۔   مجھے فرینڈ لسٹ  میں رکھتے  تھے اور اسی  لسٹ میں ملک حبیب اللہ صاحب بھی پائے جاتے تھے ۔اللہ  چیمہ  صاحب کو جزا  دے  کہ  میرے دل  کے چوتھے  خانے  کی   آبادی  کا  بہانہ بن گئے ۔ان کی   ایک  پوسٹ پر  کمنٹس  کے دوران ملک  صاحب سے پہلی بار آمنا سامنا  ہوا  ۔ہوا یوں کہ چیمہ صاحب نے غالب  کا  شعر  سٹیٹس پر لکھا  تو  میں نے ملنگوں  کے انداز  میں داد و تحسین  کےموسلا  دھار ڈونگرے برسائے  ۔اس پر  ملک  صاحب کا  کمنٹ  آیا جس میں کنٹرول کرنے کا  قیمتی مشورہ  لپٹا  ہوا  تھا۔  میری  غالبانہ حس  کوذرا  ناگوار  گزرا  کہ  بھئی "جب دیر  نہیں ،در نہیں،حرم نہیں آستاں  نہیں۔  بیٹھے ہیں  فیس بک  پہ ہم  کوئی ہمیں چپ کرائے  کیوں۔"کچھ اس  زعم  میں اور  کچھ  ان کو بے ذوق  سمجھ کرجواباً میں نے  داغ  کا  شعر    بطور کمنٹ داغ دیا۔
لطفِ مے کہوں تجھ سے کیا زاہد
ہائے کمبخت  !! تو  نے پی ہی نہیں
ملک  صاحب  نے  جواباً ایک  ذاتی  شعر  کے  ذریعے  تعلی کا  اظہار فرماتے  ہوئے واضح  کیا  کہ  میرے  پیالے  میں  بہت  سی ہستیوں (اساتذہ شعرا)کے  تبرک  میں  سے  ملی شراب  ہے ۔  اس  وقت تومیں نے اسے   محض "پدرم سلطان بود "قسم کی گپ  سمجھ کر درخور اعتنا  نہ  جانا۔لیکن  لوح ِ محفوظ  پر  ہماری  دوستی اللہ نے  روزِ ازل  سے  ہی  لکھ  رکھی  تھی  اس سے مفر  ممکن نہ تھا ۔ان کی  پیشہ ورانہ مصروفیات   کا وقت  بھی   آدھی رات سے شروع ہوتا  اور مجھے  بھی الو  کی طرح  ساری رات  نیند  نہیں آتی تھی ۔   یہ سب  عوامل  ہمارے میل جول    کی سازش  کرنے لگے۔  حالات و واقعات  کچھ ایسی ترتیب  سے وقوع  پذیر ہوئے  کہ  پطرس  کے  مضمون  "کتے"والا   منظربے  اختیار  یاد آجاتا  ہے ۔ بطور سند  اس  کا اقتباس بھی  پیش  ہے۔ تاکہ  کمزور  یاداشت والے  حضرات  بھی  بخوبی  لطف اندوز  ہو سکیں۔
اقتباس  
"کل ہی کی بات ہے کہ رات کے کوئی گیارہ بجے ایک کتے کی طبیعت جو ذرا گدگدائی تو انہوں نے باہر سڑک پر آ کر طرح کا ایک مصرع دے دیا۔ ایک آدھ منٹ کے بعد سامنے کے بنگلے میں ایک کتے نے مطلع عرض کر دیا۔ اب جناب ایک کہنہ مشق استاد کو جو غصہ آیا، ایک حلوائی کے چولہے میں سے باہر لپکے اور بھنا کے پوری غزل مقطع تک کہہ گئے۔ اس پر شمال مشرق کی طرف ایک قدر شناس کتے نے زوروں کی داد دی۔ اب تو حضرت وہ مشاعرہ گرم ہوا کہ کچھ نہ پوچھئے، کم بخت بعض تو دو غزلے سہ غزلے لکھ لائے تھے۔ کئی ایک نے فی البدیہہ قصیدے کے قصیدے پڑھ ڈالے، وہ ہنگامہ گرم ہوا کہ ٹھنڈا ہونے میں نہ آتا تھا"۔
   مگریہ  کل کی نہیں دو سال  پہلے کی  بات ہے ۔  ایک رات   کوئی  ساڑھے  بارہ  بجے چیمہ  صاحب  کی طبیعت جو ذرا گدگدائی تو انہوں نے   فیس بک  پر  آ کر ایک  شعر  اپنے  سٹیٹس  پر  پوسٹ کیا   ۔میری فی البدیہہ  والی  رگ پھڑکی  تو  میں نے  نیچے   (کمنٹ  بکس  میں) اسی    بحر اور قافیے  کا  شعر  تازہ  بتازہ گھڑ  کرعرض کردیا۔اس پرشمال مشرق کی طرف اُس قدر شناس  نے  زوروں کی داد دی(چیمہ صاحب  وزیر  آباد  سے  تھے جوکہ  پنجاب کاشمال  مشرقی شہر  ہے)اور داد کے ساتھ ساتھ  ایک  اور   تازہ  شعربھی  گھڑاڈالا۔۔۔   اسی وقت   کہنہ  مشق  استاد والی  خالی اسامی  کو پر کرنے  کیلئے  ملک حبیب اللہ صاحب میدان میں کود ے   اور  بھنا  کے  ایک   فی البدیہہ شعر  اسی  طرح  میں کہہ  دیا۔اب تو حضرات وہ مشاعرہ گرم ہوا کہ  ٹھنڈا ہونے میں نہ آتا تھا۔افسوس کوئی سگھڑ بی بی موقع ِ واردات  پر موجود  نہ تھیں ورنہ   دو چار  روٹیاں ہی ڈال  لیتیں۔ 
 اس     فی البدیہہ طرحی مشاعرے  میں سے اختتامی شعر تبرکاً عرض  ہے ۔
 مرقدِ عشق  پہ کب تک رویا جائے
رات  بہت ہو چکی  ،اب سویا  جائے
اگلےدن   پھر  کسی پوسٹ پر  ملاقات ہو گئی  ۔اجنبیت  کی  دیوار تو  ہم دونوں پچھلی  رات   ہی یاجوج  ماجوج  کی  طرح چاٹ چاٹ کر  ختم  کر   چکے تھے ۔ (حالانکہ  یہ محض ایک فرضی  اور من گھڑت  مفروضہ  ہے جو جدید تحقیق  کی روشنی  میں ہر پہلو  سے غلط ثابت ہو چکا ہے )لہذا  تقدیر  کےاس جوڑ  توڑ  کا  نتیجہ  ہماری دوستی  کی صورت میں ہی برآمد  ہوا۔اس  کے بعد  یہ  میری فرینڈ  لسٹ سے تلکے (پھسلے)اور سیدھاجی    میل کے  ان   بکس میں آن ٹپکے۔ لیکن  اپنی  بھٹکتی  آتما  جیسی فطرت سے مجبوروہاں  ٹک کے بیٹھنے کی  بجائے  کبھی سکائپ   پر  دعوتِ گپ دیتے  کبھی   جی ٹاک پر  آنے کو للکارتے ۔جی  تو بہت چاہا  کہ  پوچھوں :۔ اے بندہ  ِٔ ناداں  تجھے مسئلہ کیا ہے ۔۔۔؟؟؟ حیران بھی  تھا کہ     اس  کو کیسے  سمجھاؤں   کہ   اے  راولپنڈی  جیسے  بڑے شہر میں بیٹھ کر  ڈی ایس ایل  کے  مزے  چکھنے  والے!!تم  ایک  پینڈو کا دکھ  کیا جانو۔ تمہیں کیا  معلوم  اس قطرے(پینڈو)پہ  کیا گزرتی  ہے  انٹرنیٹ کے سیپ میں  گہر  ہونے  تک ۔  کاش  تم  دیکھ  سکتے کہ  دام ہر موج میں  ہے  حلقۂِ صد کام  ِنہنگ۔۔۔۔  مگر  افسو س غالبانہ  تکلم  کا  مزہ  محسوس  کرنے  کیلئے  کچھ خاص  قسم کے ریسیپٹر ز  کی  ضرورت ہوتی ہے ۔ ورنہ آج ہر  بندہ  دیوان ِغالب کا نشئی  نہ ہوتا۔  نتیجتاًاب  حال  یہ  تھا  کہ  نہ سمجھا جائے    ہے اس سے  نہ سمجھایا جائے ہے مجھ سے ۔
 ابھی  میں اسی  مخمصے میں ہی تھا  کہ  حضرت نے  شیخ مجیب  الرحمن  کے چھ نکات  کی  طرز  پہ  چند نکات  پیش کر دئیے ۔  میں ذوالفقار  علی  بھٹو بھی  نہ  تھا (کاش  ہوتا،  مفت  میں شہید  تو کہلاتا)اس  لیے  "ادھر  تم ، ادھر  ہم " والا  نعرہ  بھی  نہ لگا پایا ۔بنگالیوں کو  تو  نیم خود  مختاری  بھی  نہ دی  گئی تھی  البتہ  فدوی  نے   چکوالیوں  کا مطالبہ  منظور کر کے  اپنا   فون  نمبر  دے دیا ۔  بدقسمتی  سے  حضرت ٹیلی  ناروی  نکلے ، جن کو منہ لگانا  (کال  یا میسج کرنا)میں کسرِ شان  سمجھتا ہوں۔  اس  لیے ان کا فون نمبر  محفوظ ہی  نہ  کیا۔ اسی  بات  پہ  اچھا  خاصا  ڈرامہ  بن گیا  جسے  حبیب  میاں آج بھی  بطور  ترپ کاطعنہ  استعمال  کیا کرتے ہیں۔
نمبر  تو  محفوظ  نہیں تھا  اس  لیے  جب ان کی کال آئی   تو  ظاہر  ہے  نہ  میرا موبائل نجومی تھا   نہ  میں    بزرگی کا  دعویدار۔ دوسری وجہ  یہ  کہ  فدوی   ان انجان  لوگوں سے  پک  چکا  تھا  جو  نہ  جان نہ پہچان  بس  فدوی  کی  گپ  بیانی  سے  لطف اندوز ی  کے چکر  میں کالز  کرتے رہتے ہیں۔  تیسری وجہ  انہوں نے مجھے  "شاہ جی" کہہ کے مخاطب  کر دیا ۔ اس  لفظ سے  مخاطب  کیے جانے سے  مجھے اتنی  ہی چڑ ہے  جتنی   بابا بھلے شاہ صاحب کو  بھی تھی   "جیہڑا  سانوں  سید آکھے دوزخ ملے  سزائیاں۔" بس  جب کوئی ناعاقبت اندیش   مجھے شاہ  جی  کہہ کر  انجانے  میں دوزخ کا کوئی  کنواں الاٹ کروانے پر  تل  جائے   تو  ردعمل  کیا  ہونا  چاہیے تھا۔؟   اس  سب وضاحت  کے بعد  (جس  کی یقیناً ملک  حبیب صاحب  کو سمجھ  نہیں آئی  ہوگی )آپ سب ہی فیصلہ کریں ۔۔۔۔۔ 
کال  آئی میں نے بادل  نخواستہ  اٹینڈ بھی کر لی ۔ 
ہیلو۔۔۔
 جوابی ) ہیلو۔۔۔)
شاہ  جی  !سُتّے  او۔۔۔؟؟
کال  کٹ کر دی  گئی ۔  
 فدوی  کے  دماغ  نے  کہا  اول تو شاہ  جی کا تخاطب ، دوم  یہ  کہ نہ  تعارف کا تکلف نہ  سلام علیک  چھوٹتے ہی   "سُتّے او۔۔۔؟"یہ بھی  کوئی خواہ مخواہ  سرکھانے  کا شوقین  لگتا ہے ۔  آپ  ہی بتائیے ۔۔۔کہ  ایک بندے نے  موبائل  کے اتنے  بٹنوں  میں سے  سبز  بٹن ہی دبا کر  موبائل  کان سے لگایا ،  اور پھر  ہیلو  کے  جواب  میں ہیلو  سے  بھی نوازا ۔  اس  کے بعد   بھی  پوچھا  جائے  کہ "سو رہے  ہو؟"یہ سادگی کی  انتہاہے  یا ظلم  کی ۔۔۔۔؟؟؟؟صرف یہی کیوں  بلکہ  "شاہ  جی" نامی پٹرول کا گیلن پہلے چھڑک کر  کوئی "سُتّے  او۔۔۔؟؟" کی  تیلی  لگا دے  تو  کوئی  معجزہ  ہی  آگ  لگنے سے  محفوظ رکھ  سکتا ہے ۔ جبکہ معجزہ  صرف انبیا ء علیہ  السلام سے ہی  مخصوص ہے   ۔اور فدوی ٹھہرا  گناہگار  بندہ  بشر۔۔۔۔       

خیرجب    رات  گئی   توبات  بھی  اسی  کے ساتھ  گئی ۔۔۔۔ اب تو  ماشاءاللہ  ملک  صاحب سے  گھنٹوں  گھنٹوں مغز ماری  ہوتی  رہتی ہے ۔ مجھ  ناکس و ناچیز سے  بات  کرکے   پتا  نہیں  ان کو کتنی  نفلوں  کا   ثواب ہوتا ہے  مگر  میں تو یہ سوچ کر  صبر  کر لیتا ہوں  کہ  شاید اسی  بہانے  اللہ نے  میرے گناہ  بخشنے  ہوں ۔ حق  بات  کا چھپانا  کسی  طور  مناسب  نہیں اور  حق بات  یہ ہے  کہ موصوف   بے حد  باغ  و بہار قسم  کی شخصیت ہیں۔  لیکن ان کی لن ترانیوں سے  لطف  اندوز  ہونے کیلئے  لازم  ہے کہ   بندے میں  شاعرانہ ذوق   ہو ۔قارئین  میں سے  بھی  بہت سوں  کو  گپ  باز  ہونے  کی  خوش فہمی ہو گی ۔  بہت سے گپ بازوں سے آپ کی ملاقات ہو گی ۔  مگر   آپ  میں سے  کسی   نے  ایساپر خلوص  گپ باز  نہ دیکھا ہوگا جو  پلے  سے  بیلنس  بھیج کر  گپیں لڑائے ۔    ایک عرصہ تک  چھوٹا غالب  ؔ بھی  اس زعم  میں غلطاں  رہا  کہ " آج مجھ سا نہیں زمانے  میں ۔۔۔  نغز  گوئے  و  گپ  باز"(غالب  سے معذرت  کے ساتھ ) لیکن  جب سے ملک حبیب صاحب سے پالا پڑا ہے   تب سے  فدوی ڈنکے کی چوٹ پر  کان  پکڑ کے  عاجزی  سے اقرار  کرتا ہے کہ:۔
گپ بازی  کے تمہی استاد  نہیں ہو چھوٹے  غالبؔ
کہتے ہیں اپر  پنجاب میں کوئی  حبیب  بھی  تھا۔۔۔!!  

9 آرا:

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

آپ کی قیمتی آرا کا منتظر
فدوی چھوٹا غالب

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔

تازہ ترین تحریریں اپنے ای میل ایڈریس پر حاصل کریں

There was an error in this gadget

کرم فرما